Sunday , November 19 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ٹاملناڈو کے طرز پرمسلمانوں کو تحفظات دینے کا مطالبہ

ٹاملناڈو کے طرز پرمسلمانوں کو تحفظات دینے کا مطالبہ

مرکز کو قرارداد روانہ کرنے کی حکمت عملی سے حکومت کی نیت پر شبہ:‘ سمیر احمد

ـآرمور۔/11جنوری، ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) تلنگانہ حکومت ہر محاذ پر ناکام ہوچکی ہے، انتخابی منشور میں کئے گئے وعدے فراموش کردیئے گئے، مسلمانوں کے ساتھ 12فیصد تحفظات کا وعدہ کیا گیا جس کو پورا کرنے کیلئے ٹال مٹول کیا جارہاہے۔ ان خیالات کا اظہار ضلعی صدر مائناریٹی ڈپارٹمنٹ سمیر احمد نے آرمور آر اینڈ بی گیسٹ ہاوز میں پریس کانفرنس سے مخاطب کرتے ہوئے کیا۔ تلنگانہ حکومت نے اپنے انتخابی منشور میں مسلم میناریٹیز کے ساتھ وعدہ کیا تھا کہ ٹی آر ایس کو اقتدار ملنے کے اندرون 4 ماہ 12 فیصد تحفظات کا وعدہ پورا کیا جائے گا لیکن وزیر اعلیٰ کے سی آر  اپنے وعدہ کو مکمل کرنے میں ٹال مٹول کررہے ہیں اور اس حکومت کی نیت  میں کھوٹ نظر آرہی ہے، حکومت نے پہلے تو سدھیر کمیٹی کے نام پر وقت ضائع کیا پھر روز نامہ سیاست کی بی سی کمیشن سے متعلق مہم پر نیوز ایڈیٹر روز نامہ سیاست جناب عامر علی خاں کی جدوجہد ، نمائندگیوں اور اس ضمن میں مسلم مائناریٹیز میں شعور بیداری پر حکومت نے تحفظات کے ضمن میں قدم آگے بڑھاتے ہوئے بی سی کمیشن کا قیام عمل میں لایا لیکن بی سی کمیشن نے تمام ریاست کا دورہ کرنے کے بجائے حیدرآباد سے ہی تمام ریاست کے مسلمانوں سے نمائندگی حاصل کی۔ ضلعی صدر سمیر احمد نے مطالبہ کیا کہ بی سی کمیشن تمام اضلاع کا دورہ کرتے ہوئے مسلم مائناریٹیز کے حالات کا جائزہ لے کیونکہ سابق میں رنگاناتھ مشرا کمیشن، سچر کمیٹی نے مسلمانوں کے حالا ت کا جائزہ لیتے ہوئے رپورٹ پیش کی تھی ، ہم حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ اپنے وعدے کے مطابق ریاست ٹاملناڈو کے طرز پر مسلمانوں کو تحفظات دیئے جائیں نہ کہ مرکزی گورنمنٹ کو قرارداد کیلئے بھیجا جائے۔ تلنگانہ حکومت نے مسلم میناریٹیز کیلئے 1200کروڑ روپئے مختص کئے لیکن ابھی تک صرف 300کروڑ روپئے ہی خرچ کئے گئے اور بینک لونس کی منظوری عمل میں لائی گئی لیکن ابھی تک اس کی سببسیڈی جاری نہیں کی گئی۔ شادی مبارک اسکیم میں غیر ضروری شرائط لازم کئے گئے ۔ کانگریس حکومت میں ہر طبقہ کے ساتھ انصاف کیا گیا اور ترقیاتی کام انجام دیئے گئے۔ اس موقع پر ضلعی صدر سمیر احمد کے علاوہ دیگر کانگریس قائدین محمد حبیب الدین، محمد معین الدین کونسلر محمود علی، سید عتیق، پی سی پوجنا اور دیگر موجود تھے۔

TOPPOPULARRECENT