Friday , December 15 2017
Home / Top Stories / ٹرمپ کے منہ پر طمانچہ ، دھمکی کے باوجود ایران کا بالسٹک میزائیل تجربہ

ٹرمپ کے منہ پر طمانچہ ، دھمکی کے باوجود ایران کا بالسٹک میزائیل تجربہ

 

خرمشہربالسٹک میزائیل میں 2000 کیلو میٹر تک ہدف کو نشانہ لگانے کی صلاحیت

تہران ۔ /23 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ کی بڑھتی دھمکیوں کی پرواہ نہ کرتے ہوئے ایران نے آج دو ہزار کلو میٹر تک اپنے ہدف پر نشانہ لگانے والے بالسٹک میزائیل کا کامیاب تجربہ کیا ۔ ٹرمپ کے منہ پر طمانچہ کے طور پر سمجھے جانے والا یہ میزائیل تجربہ ایران کی ایک اور کامیابی ہے ۔ امریکہ کی جانب سے حالیہ دھمکیوں کی کوئی پروانہ کرتے ہوئے اس نے ایک درمیانی فاصلہ کے لئے میزائیل کا ٹسٹ کیا ہے ۔ سرکاری ٹیلی ویژن پر نشر کی جانے والی فوٹیج میں خرمشہر میزائیل لانچنگ کو پیش کیا گیا ہے جسے قبل ازیں تہران میں ایک اعلیٰ سطحی فوجی پریڈ کے دوران پیش کیا گیا تھا ۔ براڈ کاسٹر نے البتہ ٹسٹ کی کسی مخصوص تاریخ کے بارے میں نہیں بتایا ۔ لیکن عہدیداروں کا کہنا ہے کہ اس کی عنقریب لانچنگ عمل میں آئے گی ۔ یاد رہے کہ قبل ازیں ایران کی جانب سے کئے گئے میزائیل ٹسٹوں پر امریکہ نے ایران پر تحدیدات عائد کرتے ہوئے اسے 2015 ء میں کئے گئے معاہدہ کی خلاف ورزی قرار دیا تھا ۔ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے تو یہ تک کہہ دیا تھا کہ وہ معاہدہ کو کوڑے دان کی نذر کردیں گے ۔ ان کا استدلال تھا کہ ایران کے میزائیل پروگرام سے اسے (ایران) نیوکلیر ہتھیار سازی کیلئے درکار تکنیکی مہارت حاصل ہوجائے گی ۔ اب یہ اندیشے پائے جارہے ہیںکہ ایران کو یا تو نئی امریکی تحدیدات کا سامنا کرنا پڑے گا یا پھر معاہدہ ہی کالعدم ہوجائے گا ۔ درمیانی فاصلے تک مارکرنے کی صلاحیت رکھنے والے خرمشہر بالسٹک میزائیل کے تجربے کے مناظر سرکاری ٹی وی پر دکھائے گئے ہیں جبکہ جمعہ کے روز فوجی پریڈ میں بھی اس کی نمائش کی گئی تھی ۔ میزائیل کو جنوری میں تیار کیا گیا تھا لیکن تجربہ امریکہ کی دھمکیوں کے بعد کیا گیا ہے ۔ صدر امریکہ ٹرمپ نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کے دوران ایران کے میزائیل پروگرام پر تنقید کی تھی ۔ انہوں نے دھمکی دی تھی کہ اگر ایران نے نیوکلیر ہتھیاروں کو فروغ دیا تو اس کے ساتھ نیوکلیر معاہدہ کو ختم کردیا جائے گا ۔اس کے جواب میں صدر ایران حسن روحانی نے کہا تھا کہ ایران کو اپنی دفاع کاحق حاصل ہے ۔

TOPPOPULARRECENT