Thursday , November 15 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹکٹوں کی تقسیم پر ٹی آر ایس کو اندرونی بغاوت کا سامنا

ٹکٹوں کی تقسیم پر ٹی آر ایس کو اندرونی بغاوت کا سامنا

کے سی آر، اپوزیشن قائدین کے خلاف پرانے مقدمات دوبارہ کھولنے میں مصروف
حیدرآباد۔/12 ستمبر، ( سیاست نیوز) ٹی آر ایس میں اختلافات اور گروپ بندیاں روز بروز عروج پر پہنچ رہی ہیں۔ چنور اسمبلی حلقہ میں ٹکٹ سے محروم ہونے والے ٹی آر ایس کے سابق رکن اسمبلی اودیلو کے حامیوں نے ٹکٹ حاصل کرنے والے ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ بی سمن کے دورہ کی مخالفت کرتے ہوئے جسم پر کیروسین چھڑک کر آگ لگالی۔ ٹی آر ایس کے رکن قانون ساز کونسل بھوپتی ریڈی نے پارٹی قیادت کے خلاف بغاوت کرتے ہوئے اسمبلی حلقہ رورل نظام آباد سے ٹی آر ایس کے سابق رکن اسمبلی باجی ریڈی گووردھن ریڈی کو شکست دینے کا اعلان کیا، اسمبلی حلقہ چپہ ڈنڈی کے ٹکٹ سے محروم ہونے والی رکن اسمبلی شوبھا بھی بغاوت کرنے کی تیاری کررہی ہیں۔ اسمبلی تحلیل کرنے کے بعد 105 امیدواروں کی پہلی فہرست جاری کرنے والے سربراہ ٹی آر ایس کے سی آر کو پارٹی میں ناراضگیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ایک طرف کے سی آر ، کے ٹی آر اور ہریش راؤ ٹکٹ سے محروم ہونے والے پارٹی قائدین کو سمجھارہے ہیں ۔ پارٹی کے دوبارہ اقتدار میں آنے کا انہیں یقین دلاتے ہوئے مکمل انصاف کرنے کا تیقن دیا جارہا ہے تو دوسری طرف اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کے خلاف مقدمات درج کئے جارہے ہیں یا قدیم مقدمات کے تحت انہیں گرفتار کرتے ہوئے ان کے حوصلے پست کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ 105 رکنی امیدواروں کی پہلی فہرست میں اسمبلی حلقہ چنور سے اودیلو کے بجائے ٹی آر ایس کے رکن پارلیمنٹ بی سمن کو ٹی آر ایس کا ٹکٹ دیا گیا جس سے وہ سخت ناراض تھے اور کل انہوں نے اپنے آپ کو گھر میں نظر بند کرتے ہوئے انوکھا احتجاج کیا اور فیصلہ تبدیل کرنے کیلئے 24 گھنٹوں کی سربراہ ٹی آر ایس کو مہلت دی۔ بصورت دیگر جو بھی ناگہانی واقعہ پیش آتا ہے تو اس کے لئے نگران چیف منسٹر ذمہ دار ہونے کا انتباہ دیا۔ رکن پارلیمنٹ بی سمن آج جیسے ہی اسمبلی حلقہ چنور جئے پور منڈل پہنچے اودیلو کے حامیوں نے ان کے خلاف احتجاج کیا اور ’’ گو بیاک سمن ‘‘ کے نعرے لگائے۔ گٹھیا نامی ایک ٹی آر ایس کارکن نے اپنے جسم پر کیروسین چھڑک کر آگ لگالی جس سے اس کے قریب رہنے والے مزید 4 کارکن بھی آگ کی لپیٹ میں آگئے۔ عوام نے آگ پر قابو پاتے ہوئے جھلس جانے والے افراد کو مقامی ہاسپٹل منتقل کردیاجن میں 3 افراد کی حالت تشویشناک بتائی گئی ہے۔ 2010 سے ٹی آر ایس میں شامل رہنے والے این اودیلو ابھی تک تین مرتبہ اسمبلی کیلئے منتخب ہوچکے ہیں۔ پر)

ضلع نظام آباد سے تعلق رکھنے والے ٹی آر ایس کے رکن قانون ساز کونسل بھوپتی ریڈی نے پارٹی قیادت کے خلاف بغاوت کردی ہے۔ ٹی آر ایس سربراہ کے سی آر کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور ٹی آر ایس کے خلاف کام کرنے کا اعلان کیا۔ نظام آباد رورل اسمبلی حلقہ سے ٹی آر ایس کے امیدوار باجی ریڈی گوردھن ریڈی کو شکست دینے کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ وہ آزاد امیدوار کی حیثیت سے مقابلہ کریں گے یا کسی جماعت سے مقابلہ کریں گے، اپنے اس فیصلہ سے عوام کو بہت جلد واقف کرائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس میں شامل ہونے والے دوسری جماعتوں کے ارکان اسمبلی ، ارکان قانون ساز کونسل سے استعفی طلب کیا گیا تو ان سے استعفی طلب کرنے کا پارٹی قیادت کو اخلاقی حق نہیں پہنچتا۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس کا بینہ میں 70 فیصد مخالفین تلنگانہ اور کے سی آر کو تنقید کا نشانہ بنانے والے ہیں ۔ اسمبلی حلقہ چپہ ڈنڈی کے ٹکٹ سے محروم ہونے والی سابق رکن اسمبلی شوبھا نے ٹی آر ایس کا دوبارہ ٹکٹ نہ ملنے پر مستقبل کی حکمت عملی تیار کرنے کیلئے اپنے حامیوں کا اجلاس طلب کیا۔ ان کے حامیوں نے ٹکٹ نہ ملنے پر بغاوت کرنے کا مشورہ دیا۔ شوبھانے مزید دو دن کے انتظار کے بعد مستقبل کا فیصلہ کرنے کا اعلان کیا۔

TOPPOPULARRECENT