Monday , July 16 2018
Home / Top Stories / ٹی آر ایس ایم پیز مسلم تحفظات کیلئے پارلیمنٹ میں آواز اٹھائیں ‘ عامر علی خاں

ٹی آر ایس ایم پیز مسلم تحفظات کیلئے پارلیمنٹ میں آواز اٹھائیں ‘ عامر علی خاں

 حقوق کیلئے جدوجہد کرنا زندہ قوم کی علامت ۔ نیوز ایڈیٹر سیاست کا خطاب
 اسمبلی میں مسلمانوں کی آواز بن کر گرجنے ڈاکٹر گیتا ریڈی کا تیقن
 کوہیر میں 12 فیصد مسلم تحفظات کیلئے جلسہ ۔ مختلف جماعتوں کے قائدین شریک
 تلگودیشم اور بی ایس پی کی جانب سے بھی تحفظات تحریک کی مکمل حمایت

کوہیر ۔ /6 فبروری (محمد طیب علی کی رپورٹ) نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست عامر علی خاں نے ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ کو 12 فیصد مسلم تحفظات کیلئے پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں میں آواز اٹھاتے ہوئے مرکزی حکومت پر دباؤ بنانے کا مشورہ دیا ۔ اور کہا کہ طلاق ثلاثہ کے مسئلہ پر جو راہ اختیار کی گئی اور بی جے پی حکومت کو مدد دی گئی اس طرح کا اقدام نہ کیا جائے ۔ کانگریس کی رکن اسمبلی ڈاکٹر جے گیتا ریڈی نے عامر علی خاں کی آواز کو مسلمانوں کی آواز کے طور پر اسمبلی میں اٹھانے کا تیقن دیا ۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی کوہیر کی جانب سے تحصیل آفس پر 12 فیصد مسلم تحفظات کا احتجاجی جلسہ منعقد کرتے ہوئے تحصیلدار کو 12 فیصد مسلم تحفظات کیلئے یادداشت پیش کی گئی ۔ جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے عامر علی خاں نے کہا کہ چیف منسٹر کے سی آر نے ٹی آر ایس کو اقتدار حاصل ہونے کے بعد اندرون 4 ماہ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا تھا ۔ اقتدار کے 4 سال مکمل ہونے کے باوجود مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات نہیں ملے ۔ انہوں نے جمہوری انداز میں حکومت پر دباؤ بنانے کیلئے تین سال قبل 12 فیصد مسلم تحریک کا آغاز کیا تھا جس کی تمام قائدین نے جماعتی وابستگی سے بالاتر ہوکر تائید کی ۔ اس تحریک کی تائید تمام مذہبی ، رضاکارانہ و سماجی تنظیموں اور نوجوانوں نے اس کی بھرپور تائید کی ۔ عامر علی خاں نے کہا کہ زندہ قوم کا کام اپنے حق کیلئے جدوجہد کرنا ہے ۔ساری ریاست میں 12 فیصد مسلم تحفظات میں شدت پیدا ہوجانے کے بعد حکومت نے اسمبلی اور کونسل میں قرارداد منظور کرتے ہوئے مرکز کو روانہ کردیا ۔ مرکز میں 12 فیصد مسلم تحفظات کی قرارداد کہاں ہے ۔ شاید اس کا چیف منسٹر کو بھی علم نہیں ہے ۔ لہذا حکومت پر دوبارہ دباؤ بنانے کیلئے /26 جنوری تا /15 اگست تک 12 فیصد مسلم تحفظات چلانے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔ اس کا بھی عوام تہہ دل سے خیرمقدم کررہے ہیں ۔ چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر نے انڈیا ٹوڈے اینکلیو کے انٹرویو میں 12 فیصد مسلم تحفظات پر مثبت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے پارلیمنٹ کے جاریہ بجٹ سیشن میں آواز اٹھاتے ہوئے مرکزی حکومت پر دباؤ بنانے کا اعلان کیا تھا اب وقت آگیا ہے ٹی آر ایس کے ارکان پارلیمنٹ دونوں ایوانوں میں 12 فیصد مسلم تحفظات کی آواز اٹھائے ۔ چیف منسٹر نے جو وعدہ کیا اس کو پورا کرنے کیلئے اپنی جدوجہد کا آغاز کریں ۔ عامر علی خاں نے قرآنی آیات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اللہ تعالیٰ قرآن میں فرماتے ہیں کہ ہم اس قوم کی حالت نہیں بدلتے جنہیں نہ ہو خود اپنی حالت بدلنے کا ۔ مسلم تحفظات کے معاملے میں ہمارے پیشرو رہنماؤں نے جو غلطی کی تھی اس کی سزا ہمیں مل رہی ہے ۔ اگر اب بھی ہم وہی غلطی دہراتے ہیں تو آنے والی نسلیں ہمیں کبھی معاف نہیں کریں گی ۔ عامر علی خاں نے کہا کہ وہ 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک کے دوران اضلاع کا دورہ کرتے ہوئے مسلمانوں کی معیشت اور ذہین بچوں کی نشاندہی کررہے ہیں ۔ ایک طرف تحریک عروج پر پہونچ رہی ہے تو دوسری طرف مسلم ڈاٹا تیار ہورہا ہے ۔ جس کی بنیاد پر ہم مستقبل کی حکمت عملی تیار کرسکتے ہیں ،جو ذہین بچے اور کچھ کرنا چاہتے ہیں روزنامہ سیاست ان کی مکمل حوصلہ افزائی اور رہنمائی کرے گا ۔ نیوز ایڈیٹر سیاست نے کورٹلہ سے تعلق رکھنے والے جنید کا حوالہ دیا جو اردو میڈیم کا طالبعلم تھا اور کریم نگر میں ٹاپ کرچکا تھا ۔ اس کی تعلیمی ذمہ داری قبول کی وہ حیدرآباد میں رہ کر تعلیم حاصل کی اور آج انفوسیس میں ماہانہ 90 ہزار روپئے کمارہا ہے ۔ عامر علی خاں نے کہا کہ وہ مسلمانوں میں شعور بیدار کرنے کیلئے سیاست سے بالاتر ہوکر تحریک چلارہے ہیں ۔

 

چیف منسٹر کے یہ اختیار میں ہے کہ کم از کم ریاستی بجٹ میں ایس سی ،ایس ٹی سب پلان کی طرز پر اگر ہم کو 12 فیصد حصہ بجٹ میں دیا جائے گا جو تقریباً 20 ہزار کروڑ روپئے کے برابر ہوگا ۔ کانگریس حکومت کے دیئے گئے 4 فیصد سے تقریباً ہر سال 50 ہزار بچے انجنیئر اور تقریباً 10 ہزار بچے دیگر شعبوں میں داخلہ لے رہے ہیں ۔ تلنگانہ میں تقریباً 5 لاکھ مسلم خاندان ہیں اگر 12 فیصد تحفظات دیئے جائیں تو تقریباً ہر سال ایک لاکھ بچوں کا فائدہ ہوگا ۔انہوں نے کہا کہ سڑک پر گزرنے پر کئی گاڑیاں ایسی نظر آتی ہیں جن پر ایس سی ، ایس ٹی فینانس کارپوریشن کا نام درج ہوتا ہے ۔ لیکن آج تک کوئی گاڑی میناریٹی فینانس کارپوریشن کی نہیں دکھائی دی ۔ انہوں نے کہا کہ اسمبلی میں 12 فیصد تحفظات کے مباحثہ کے دوران شہر کی ایک بڑی جماعت کے قائد اس وقت موجود نہیں تھے ۔ 800 سال حاکم رہنے والے مسلمان پسماندہ کیوں ہوگئے ۔اس کی بنیادی وجہ تعلیمی پسماندگی ہے ۔ کانگریس کی رکن اسمبلی ڈاکٹر جے گیتا ریڈی نے مسلمانوں اور دلتوں میں اتحاد کو وقت کا تقاضہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ جلسہ عام میں مجھے تمام مقررین نے 12 فیصد مسلم تحفظات کے مسئلہ پر اسمبلی میں مسئلہ کو اٹھانے کا مشورہ دیا وہ اس جلسہ عام سے مسلمانوں کو تیقن دیتی ہیں کہ اسمبلی میں 12 فیصد مسلم تحفظات کو موضوع بحث بنائیں گی اور اسمبلی میں مسلمانوں کی زبان بن کر گرجنے کی کوشش کریں گی ۔ گیتا ریڈی نے کہا کہ زاہد علی خاں صاحب کے خاندان سے ہمارے قدیم تعلقات رہے ہیں ۔ نوجوان عامر علی خاں اپنی صحافت کی بڑی ذمہ داری ہونے کے باوجود ریاست کے چپے چپے کا دورہ کرتے ہوئے مسلم تحفظات کیلئے مسلمانوں میں شعور بیدار کرنے کی کوشش کررہے ہیں جو قابل ستائش ہے ۔ وہ تمام مسلمانوں سے اپیل کرتی ہیں کہ جماعتی وابستگی سے بالاتر ہوکر عامر علی خاں کے تحریک کی تائید کریں اور سارے مسلمان اتحاد کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنے حقوق کیلئے جدوجہد کریں ۔ اسمبلی حلقہ ظہیرآباد انچارج تلگودیشم وائی نروتم نے چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر پر تمام مذاہب و طبقات میں پھوٹ ڈالکر راج کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ 70 سال تک مسلمانوں کو ووٹ بینک کی طرح استعمال کیا گیا ۔ علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دینے کے بعد کے سی آر وہی کررہے ہیں جو ماضی کے حکمرانوں نے کیا ہے ۔ 4 ماہ میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا گیا ۔ 4 سال مکمل ہونے کے باوجود اس کو پورا نہیں کیا گیا ۔ 12 فیصد مسلم تحفظات کے جلسوں کو سارے ریاست میں منعقد کرنے کا مشورہ دیا ۔ سکریٹری ٹی یو ڈبلیو جے محمد عبدالقادر فیصل نے روزنامہ سیاست کی جانب سے شروع کردہ 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک اور اخبار کے فلاحی سرگرمیوں پر روشنی ڈالی اور کہا کہ سیاست کے دباؤ کے باعث حکومت نے اسمبلی و کونسل میں 12 فیصد تحفظات کی قرارداد منظور کی اور کہا کہ عامر علی خاں نے پہلے مرحلے میں 2 ہزار کیلو میٹر کا سفر کرتے ہوئے 150 سے زائد جلسوں سے خطاب کیا ۔ کھمم سے ظہیرآباد اور عادل آباد سے محبوب نگر تک تحریک چلائی ۔ کوہیر گرام پنچایت اور منڈل پریشد کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ مشترکہ طور پر دونوں اجلاسوں میں 12 فیصد مسلم تحفظات کی قرارداد منظور کی ہے ۔ بی ایس پی کے قائد جناردھن نے مسلم تحفظات کی بھرپور تائید کرتے ہوئے کہا کہ 800 سال تک حکومت کرنے والے مسلمان آج 12 فیصد تحفظات طلب کرنے کیلئے مجبور ہوگئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ امبیڈکر نے دلتوں کو تحفظات فراہم کیا ۔ انہوں نے مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کی سفارش کرنے کا مولانا ابوالکلام آزاد کو مشورہ دیا تھا ۔ مگر آزاد نے اس کو قبول نہیں کیا ۔ محمد شمشیر علی صدر ٹاؤن کانگریس نے کہا کہ عامر علی خاں کی جانب سے چلائی جانے والی 12 فیصد مسلم تحفظات کی تحریک انقلاب میں تبدیل ہوگئی ہے ۔ کوہیر منڈل جماعت اسلامی کے امیر محمد اکبر فاروق 12 فیصد مسلم تحفظات کی بھرپور تائید کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں مساوات کو فروغ دینے کیلئے مسلمانوں کو بھی ہر شعبہ میں برابر کی ذمہ داری دی جائے ۔ منصور علی صدر ایم آر پی سی ، ارشد علی صدر ویلفیر پارٹی ، آشا آپا صدر جے اے سی کوہیر ، سید رافع التمش ، محمد اظہر صدر ایم ڈی اے ، محمد معز الدین صدراقلیتی سیل کانگریس ظہیرآباد ، محمد شوکت علی سابق صدر منڈل پریشد کوہیر ، محمد سلیم سماجی کارکن ، جناردھن دلت قائد نے بھی مخاطب کیا ۔ اس موقع پر محمد طیب علی نامہ نگار سیاست کوہیر ، شیخ زاہد علی جرنلسٹ ، محمد عمر فاروق ، محمد اشرف علی معاون رکن ، عبدالرشید ڈیڈی ، سید منیر ، محمد وسیم غوری ، محمد ارشد محی الدین ، محمد حاجی علی ، محمد اشفاق پٹیل ، رام لنگا ریڈی صدر کانگریس کوہیر ، محمد ارشد علی بلاک کانگریس صدر ظہیرآباد ، محمد مقبول احمد ، سائیلو ، رام داس سرپنچ دگوال ، ملکارجن ، ملکنا ، محمد مجاہد مسعود ، ساجد علی ، ڈاکٹر عبدالستار ، عبدالغنی ، عبدالستار نائب سرپنچ کوہیر اور دیگر قائدین و نوجوان موجود تھے ۔ محمد فردوس نے نظامت کے فرائض انجام دیئے ۔ قبل ازیں سداسیو پیٹ میں جناب عامر علی خاں کا زبردست استقبال کیا گیا ۔ محمد حاجی علی صدر پریس کلب سداسیو پیٹ کی قیامگاہ پر جناب عامر علی خاں نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست سے چنتا پربھاکر رکن اسمبلی ، پی سبھاش نمائندہ چیرمین بلدیہ سداسیو پیٹ، محمد امجد حسین ناظم جماعت اسلامی ضلع سنگاریڈی ، محمد اشفاق پٹیل صدر خدمت بینک ، محمد عبدالخالق حسینی اسٹاف رپورٹر، مسعود خاں ، ایم اے متین ، پون کمار صدر یوتھ کانگریس ، رحمن شریف ، سید یزدانی ، محمد واجد ، محمد عبدالجبار ، وسیم اکرم ، عبدالطیف ، کامل انصار ، محمد ذاکر علی ، ظہیر پٹیل ، عبدالغنی ، محمد ریاض نے ملاقات کی ۔

TOPPOPULARRECENT