Sunday , September 23 2018
Home / اضلاع کی خبریں / ٹی آر ایس حکومت ، بلند بانگ دعوؤں تک محدود

ٹی آر ایس حکومت ، بلند بانگ دعوؤں تک محدود

نظام آباد /4 اگست ( پریس نوٹ ) قاضی سید ارشد پاشاہ سینئیر قائد کانگریس و سابق وائس چیرمین پرنسپل کونسل نے ایک صحافتی بیان میں کے سی آر حکومت پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ اپنے لگاتار وعدوں اور اعلانات کے ذریعہ عوام کو آس دلائی جارہی ہے تاکہ وہ ریاست کے سلگتے مسائل بے روزگاری اور دیگر اہم مسائل پر متوجہ نہ ہو سکیں ۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر

نظام آباد /4 اگست ( پریس نوٹ ) قاضی سید ارشد پاشاہ سینئیر قائد کانگریس و سابق وائس چیرمین پرنسپل کونسل نے ایک صحافتی بیان میں کے سی آر حکومت پر نکتہ چینی کرتے ہوئے کہا کہ اپنے لگاتار وعدوں اور اعلانات کے ذریعہ عوام کو آس دلائی جارہی ہے تاکہ وہ ریاست کے سلگتے مسائل بے روزگاری اور دیگر اہم مسائل پر متوجہ نہ ہو سکیں ۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس مینی فیسٹو کے وعدوں کے مطابق آج تک ایک بھی تیقن پر عمل آوری نہیں کی گئی ۔ جس میں مسلم اقلیت کو 12 فیصد تحفظات وغیرہ شامل ہیں ۔ قاضی سید ارشد پاشاہ نے کہا کہ نئی ریاست تلنگانہ کو اس میں کوئی شک نہیں کہ بے شمار مسائل کا سامنا ہے لیکن کے سی آر حکومت مسلسل تشہیری مہم کے ذریعہ اپنی کارکردگی کو بڑھا چڑھاکر اعلان کر رہی ہے ۔ اس طرح علاقہ تلنگانہ کے 86 لاکھ خاندانوں کا ایک ہی دن میں سروے کروانے کا اعلان ہے ۔ اس کا مقصد یہ بیان کیا جارہا ہے کہ سرکاری اسکیمات کا فائدے حقیقی مستحقین کو پہونچانا ہے ۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ کے سی آر حکومت اپنے معلنہ وعدوں کی تکمیل کیلئے عاجلانہ قدم اٹھائے ۔ قاضی سید ارشد پاشاہ نے سابق رکن لوک سبھا نظام آباد مسٹر مدھوگوڑ یاشکی کے اس بیان کو حق بجانب قرار دیا کہ کے سی آر کی قیادت میں تلنگانہ راشٹر سمیتی کی ریاستی حکومت تلنگانہ کیلئے اپنی قیمتی زندگیوں کا نذرانہ پیش کرنے والے افراد کے متاثرہ خاندانوں کو بروقت معاوضہ جات کی ادائیگی میں ناکام ثابت ہوئی ہے ۔ جبکہ اس کام کو ترجیحی بنیاد پر انجام دینے کی شدید ضرورت تھی ۔ قاضی سید ارشد پاشاہ نے مسٹر یاشکی کے اس نظریہ سے بھی اتفاق کیا کہ کے سی آر حکومت کے پاس ٹینس اسٹار ثانیہ مرزا کو برانڈ امبیسیڈر قرار دینے اور کیش ایوارڈ دینے کیلئے فنڈ ہے لیکن تلنگانہ جدوجہد کے متاثرہ خاندانوں کو مالی امداد کے دلاسے دئے جارہے ہیں ۔ قاضی سید ارشد پاشاہ نے اس بات کی ضرورت پر زور دیا کہ کے سی آر حکومت اپنی کارکردگی کے بارے میں بڑھا چڑھاکر پروپگنڈہ کا سلسلہ ترک کرے اور فوری اہمیت کے حامل عوامی مسائل کی یکسوئی کیلئے موثر اقدامات کرے ۔

TOPPOPULARRECENT