Tuesday , November 21 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ٹی آر ایس حکومت تمام طبقات کی ترقی کیلئے کوشاں

ٹی آر ایس حکومت تمام طبقات کی ترقی کیلئے کوشاں

محبوب نگر میں ائمہ و موذنین میں عطیہ جات کی تقسیم ، ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کا خطاب

محبوب نگر ۔ 17 مئی ۔ ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز ) ٹی آر ایس حکومت ریاست کے تمام طبقات کے ساتھ یکساں سلوک کرتے ہوئے انھیں ترقی کی راہ پر گامزن کرنے کیلئے اقدامات کررہی ہے ۔ حکومت پوری سنجیدگی کے ساتھ ریاست کے عوام کو تعلیم کے ساتھ ساتھ معاشی طورپر مستحکم کرنے کو اولین ترجیح دے رہی ہے۔ اسی سلسلہ کی کڑی ہیکہ ریاست کے ائمہ و موذنین کو ماہانہ 1000 روپئے عطیات حکومت کی جانب سے فراہم کئے گئے ہیں۔ ان خیالات کا اظہار ریاستی ڈپٹی چیف منسٹر جناب محمد محمود علی نے آج شام مستقر محبوب نگر کے شالیمار گارڈن میں منعقدہ ’’ائمہ و مؤذنین میں عطیہ جات تقسیم اسکیم ‘‘ کا آغاز کرتے ہوئے کیا ۔ انھوں نے مسرت بھرے انداز میں کہا کہ وہ خوش نصیب ہیں کہ تلنگانہ کے پہلے ڈپٹی چیف منسٹر بنے جو ٹی آر ایس پارٹی کے سیکولر ہونے کا کھلا ثبوت ہے ۔انھوں نے کہا کہ تلنگانہ کے حصول کیلئے بہتر حکمت عملی کے تحت 14 سال تک مسلسل جدوجہد کی گئی ۔ انھوں نے فخریہ انداز میں کہاکہ چیف منسٹر مسلمانوں کو ترقی کے میدان میں دیگر طبقات کے شانہ بہ شانہ کھڑا کرنا چاہتے ہیں انھوں نے انتخابی مہم کے دوران جو وعدے کئے تھے اس سے بھی زائد کام انجام دے رہے ہیں ۔ انھوں نے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ ٹی آر ایس کا وعدہ ہے اور بہرقیمت پورا ہوکر رہے گا۔ ریاستی حکومت نے سدھیر کمیشن قائم کیا اور بہت جلد اس کی رپورٹ حاصل ہوگی اور اسمبلی میں بحث کے بعد بی سی کمیشن کا قیام عمل میں لاتے ہوئے اور بی سی کمیشن کی رپورٹ کو اسمبلی میں منظور کرواتے ہوئے پارلیمنٹ روانہ کیا جائے گا ۔ کے سی آر چاہتے ہیں کہ تحفظات کے راستہ میں کوئی قانونی رکاوٹ پیش نہ آئے ۔ اس لئے بڑی احتیاط کے ساتھ سفر جاری ہے ۔ بیشتر حکومتوں نے اقلیتوں کو 4 فیصد تحفظات دیئے لیکن قانونی رکاوٹوں کو دور کرے بغیر اس اقدام سے آج یہ تحفظات قانون کی کشمکش میں ہیں۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہاکہ ملک پر 400 برس حکومت کرنے والے مسلمان سچر کمیشن رپورٹ کی روشنی میں دلتوں سے بھی بدتر ہیں چنانچہ چیف منسٹر ہر قدم پھونک پھونک  کر اُٹھارہے ہیں تاکہ ریاست کے مسلمان کسی پریشانی کے بغیر تحفظات سے استفادہ کریں۔ ریاست کے مسلمانوں کیلئے حکومت کئی ایک اسکیمات جیسے شادی مبارک ، اقلیتی ریسیڈنشیل اسکولس کا جال بچھارہی ہے ۔

 

ریاست بھر میں 71 اسکولس جاریہ سال سے قائم ہوں گے اور محبوب نگر میں 8 اسکولس قائم ہورہے ہیں جہاں معیاری تعلیم کے ساتھ ساتھ دینی تعلیم کا بھی نظم ہے ۔ جلسہ کی صدارت مقامی ایم ایل اے سرینواس گوڑ نے کی ۔ انھوں نے بتایا کہ ضلع سے 876 ائمہ و مؤذنین کی درخواستیں وصول ہوئی ہیں اور پہلے مرحلہ میں 448 ائمہ و مؤذنین میں فی کس 10 ہزار روپئے تقسیم کئے جارہے ہیں ۔ ریاست بھر میں 8934 درخواستیں وصول ہوئی ہیں ۔ ایم پی اے پی جتیندر ریڈی نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اقلیتوں کو چاہئے کہ وہ حکومت کی فلاحی اسکیمات سے بھرپور استفادہ کریں۔ وزیر صحت لکشما ریڈی نے کہاکہ ریاستی حکومت اقلیتوں کو 80 فیصد سبسیڈی پر قرضہ جات فراہم کررہی ہے ۔ بیشتر حکومتوں میں وقفہ وقفہ سے امن و ضبط کے مسائل پیدا ہوتے رہے ہیں لیکن ہماری حکومت کو 2 سال ہوئے ایسے مسائل نہیں ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ملک کی 29 ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ میں کے سی آر کو فلاحی اسکیمات رائج کرنے میں منفرد مقام حاصل ہے ۔ پروگرام میں ایم ایل اے اچم پیٹھ جی بال راج ، پرنسپال سکریٹری مائناریٹی ویلفیر عمر جلیل نے بھی مخاطب کیا ۔ اس موقع پر ضلع کلکٹر سری دیوی ، ضلع پریشد چیرمین بنڈاری بھاسکر ، سی ای او وقف بورڈ اسداﷲ ، ای ڈی ایم ایف سی عبدالحمیدامتیاز اسحق ریاستی قائد ، افتخارالدین احمد ، محسن خان ، محمد اقبال ، محمد مقبول ، عبدلواحد ، حافظ ادریس ، ایم ایل علیم ، خواجہ حسین مقصود و دیگر شہ نشین پر موجود تھے ۔ ڈپٹی چیف منسٹر کے ہاتھوں ائمہ و مؤذنین کو چیکس کی تقسیم عمل میں لائی گئی ۔ پروگرام میں ضلع بھر سے ائمہ و مؤذنین بڑی تعداد میں شریک تھے ۔

TOPPOPULARRECENT