Tuesday , November 13 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس حکومت مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کی پابند عہد

ٹی آر ایس حکومت مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کی پابند عہد

ہر گاؤں میں ضرورت کے مطابق ترقیاتی منصوبے تیار کئے جائیں گے، کے ٹی راما راؤ کا بیان

ہر گاؤں میں ضرورت کے مطابق ترقیاتی منصوبے تیار کئے جائیں گے، کے ٹی راما راؤ کا بیان
حیدرآباد۔/19جولائی، ( سیاست نیوز) وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی تلنگانہ کے ٹی راما راؤ نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت مسلمانوں اور درج فہرست قبائل کو 12فیصد تحفظات کی فراہمی کے عہد کی پابند ہے اور اس سلسلہ میں بہت جلد علحدہ کمیشن قائم کرتے ہوئے ان کی رپورٹ حاصل کی جائے گی۔ کے ٹی راما راؤ نے کریم نگر کے مختلف علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے حکومت کی منصوبہ بندی کی تیاری سے متعلق اسکیم کا آغاز کیا ہے جس کے تحت ہر گاؤں کی ضرورت کے مطابق ترقیاتی منصوبہ تیار کیا جائے گا۔ ہمارا گاؤں، ہمارے منصوبے کے عنوان سے یہ مہم تمام 10اضلاع میں شروع کی گئی ہے۔ چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ نے وزراء اور عوامی نمائندوں کو ہدایت دی کہ وہ ان پروگراموں میں حصہ لیتے ہوئے مواضعات کی سطح پر ضرورتوں کے مطابق ایکشن پلان تیار کریں تاکہ انہیں بجٹ میں شامل کیا جائے۔ کریم نگر میں وزیر انفارمیشن ٹکنالوجی کے ٹی راما راؤ کے علاوہ وزیر فینانس ای راجندر نے مختلف مواضعات میں اس پروگرام میں شرکت کی۔ کے ٹی راما راؤ نے کہاکہ تحفظات کی فراہمی کے علاوہ کمزور طبقات کی تعلیمی و معاشی ترقی پر خصوصی توجہ کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ کابینہ میں کئے گئے فیصلہ کے مطابق بہت جلد برسرخدمت یا ریٹائرڈ جج کی قیادت میں کمیشن تشکیل دیا جائے گا جو حکومت کو اپنی سفارشات پیش کرے گا۔ حکومت اس بات کی کوشش کرے گی کہ یہ عمل جلد از جلد مکمل کیا جائے تاکہ کم از کم آئندہ سال سے مسلمانوں اور درج فہرست قبائل کو تحفظات فراہم کئے جاسکیں۔ انہوں نے کہا کہ بہبودی خواتین کے سلسلہ میں بھی حکومت بجٹ میں مناسب رقم مختص کرے گی۔ انہوں نے بتایا کہ خواتین کی تنظیموں کیلئے ہر گاؤں میں ایک بھون تعمیر کیا جائے گا۔ وزیر فینانس ای راجندر نے کہا کہ ہر اسمبلی حلقہ میں کم از کم 10ہزار دیپم کنکشن فراہم کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ دسہرہ تہوار سے مختلف اسکیمات پر عمل آوری کا آغاز ہوگا جن میں وظائف کی تقسیم بھی شامل ہے۔ حکومت نے معذورین، بیواؤں اور معمرین کے وظائف کی رقم میں اضافہ کیا ہے جن کی تقسیم دسہرہ سے عمل میں آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ تلنگانہ کے تمام کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات کو بحال کرنے کا حکومت نے فیصلہ کیاہے اور اس طرح کے ملازمین کی تعداد تقریباً 40ہزار ہوگی۔ انہوں نے نوجوانوں کو یقین دلایاکہ حکومت کے اس فیصلہ سے ان کیلئے روزگار کے مواقع میں کوئی کمی نہیں ہوگی۔ راجندر نے کہا کہ حکومت بہت جلد تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کی تشکیل کے ذریعہ مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کا عمل شروع کرے گی۔ وزیر فینانس نے کہا کہ تلنگانہ حکومت کا پہلا بجٹ فلاحی بجٹ ہوگا جس میں کمزور طبقات، خواتین اور نوجوانوں کی ہمہ جہتی ترقی پر خصوصی توجہ مرکوز کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT