Thursday , January 18 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس قیادت کیخلاف علم بغاوت کرنے کا مشورہ

ٹی آر ایس قیادت کیخلاف علم بغاوت کرنے کا مشورہ

پارٹی میں حقیقی قائدین کی کوئی اوقات نہیں، ترجمان کانگریس شرون کمار

پارٹی میں حقیقی قائدین کی کوئی اوقات نہیں، ترجمان کانگریس شرون کمار
حیدرآباد ۔ 4 جولائی (سیاست نیوز) تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کے ترجمان اعلیٰ مسٹر شرون کمار نے دوسری پارٹیوں سے ٹی آر ایس میں شامل ہونے والے قائدین کو عہدے حاصل کرنے سے روکنے کیلئے ٹی آر ایس قیادت کے خلاف بغاوت کرنے کا مشورہ دیا۔ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے شرون کمار نے کہا کہ ٹی آر ایس میں حقیقی قائدین اور کارکنوں کی کوئی اہمیت نہیں ہے۔ عام انتخابات میں بھی ٹکٹوں کی تقسیم کے مسئلہ پر پارٹی قائدین سے ناانصافی پر وہ علم بغاوت کرچکے ہیں۔ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ ایک سال سے ریاست کی ترقی اور غریب عوام کی فلاح و بہبود کو فراموش کرتے ہوئے دوسری جماعتوں کے قائدین اور ارکان اسمبلی کو ٹی آر ایس میں شامل کرنے پر زیادہ توجہ دے رہے ہیں۔ تلنگانہ کابینہ میں نصف سے زیادہ وزراء کا دوسری جماعتوں سے تعلق ہے۔ یہاں تک کہ تلگودیشم کے ٹکٹ پر رکن اسمبلی منتخب ہونے والے مسٹر ٹی سرینواس یادو کو وزارت میں شامل کیا گیا۔ تلنگانہ کی مخالفت کرنے والوں اور تحریک سے دور رہنے والوں کو وزارت میں جگہ دی گئی ہے۔ دوسری جماعتوں کے قائدین شامل ہوتے ہی ٹی آر ایس ان کی آؤ بھگت کررہی ہے اور 14 سال تک تلنگانہ تحریک میں مسٹر کے چندرشیکھر راؤ کا ساتھ دینے، تحریک میں شدت پیدا کرنے والے اور احتجاج کرتے ہوئے سینکڑوں مقدمات درج کرنے والوں اور عدالتوں کے چکر کاٹنے والوں، جان کی قرانی دینے والے نوجوانوں کے ارکان خاندان کو نظرانداز کردیا گیا ہے۔ مسٹر شرون کمار نے ڈی سرینواس کو دھوکہ باز، مفاد پرستی اور عہدوں کا لالچی قرار دیتے ہوئے کہا کہ صرف 35 دن عہدوں کے بغیر کانگریس میں پیش رہ سکے۔ انہوں نے ٹی آر ایس کے حقیقی قائدین اور کارکنوں کو پارٹی قیادت کے خلاف بغاوت کرنے پر زور دیا۔

TOPPOPULARRECENT