Thursday , December 13 2018

ٹی آر ایس پارٹی میں صدر کے سی آر کی عدم توجہ پر قائدین و کارکنوں میں تشویش

کیشو راؤ کو تنظیم جدید پارٹی کی ذمہ داری سونپے جانے کا امکان ، مختلف کمیٹیوں کی تشکیل بھی زیر غور

کیشو راؤ کو تنظیم جدید پارٹی کی ذمہ داری سونپے جانے کا امکان ، مختلف کمیٹیوں کی تشکیل بھی زیر غور
حیدرآباد 21 جولائی (سیاست نیوز) تلنگانہ میں ٹی آر ایس کی جانب سے تشکیل حکومت کے بعد چیف منسٹر چندر شیکھر راو کی ساری توجہ سرکاری کام کاج پر مرکوز ہوچکی ہے جس کے باعث وہ پارٹی امور پر توجہ دینے سے قاصر ہیں ۔ تلنگانہ کی تعمیر نو میں مصروف چندرا شیکھر راو کی پارٹی پر عدم توجہی کے باعث پارٹی قائدین اور کارکنوں میں تشویش پائی جاتی ہے ۔ تلنگانہ تحریک کے دوران پارٹی میں اہم رول ادا کرنے والے بیشتر قائدین یا تو کابینہ میں شامل کرلئے گئے یا پھر حکومت کی سرگرمیوں کا حصہ بن چکے ہیںجس کے نتیجہ میں پارٹی پر توجہ کم ہوچکی ہے ۔ 2 جون کو ٹی آر ایس حکومت نے حلف لیا تھا جس کے بعد سے پارٹی ہیڈ کوارٹر تلنگانہ بھون پر سرگرمیاں کم ہوچکی ہے ۔وہ قائدین جو اکثر و بیشتر پارٹی آفس پر نظر آتے تھے وہ اب سکریٹریٹ میں دکھائی دے رہے ہیں۔ تلنگانہ بھون پر پارٹی قائدین اور کارکنوں کی آمد کا سلسلہ بتدریج کم ہوچکا ہے ۔ ان حالات کودیکھتے ہوئے پارٹی کے بعض قائدین نے چیف منسٹر کی توجہ مبذول کی اور مشورہ دیا کہ پارٹی کو مستحکم کرنے پر توجہ دی جائے ۔ بتایا جاتا ہے کہ چندرا شیکھر راو بہت جلد پارٹی کی تنظیم جدید پر توجہ مرکوز کریں گے اور اہم عہدوں پر نئے قائدین کا تقرر کیا جائے گا ۔ پارٹی کے قومی سکریٹری جنرل ڈاکٹر کیشو راو کو پارٹی کی تنظیم جدید کی ذمہ داری دی جاسکتی ہے ۔ اہم قائدین کی حکومت میں شمولیت کے بعد پولیٹ بیورو اور اسٹیٹ کمیٹی میں اہم عہدوں کیلئے قائدین کی دوڑ دھوپ کا آغاز ہوچکا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ چندرا شیکھر راو نہ صرف پولیٹ بیورو بلکہ اسٹیٹ کمیٹی اور محاذی تنظیموں کی از سر نو تشکیل عمل میں لائیں گے اور بہت جلد پارٹی کا توسیعی اجلاس منعقد کرنے پر غور کیا جارہا ہے ۔ مختلف اضلاع سے تعلق رکھنے والے قائدین بھی چاہتے ہیں کہ پارٹی کو دوبارہ متحرک کیا جائے اور اس کے ذریعہ سرکاری اسکیمات کی عوام میں تشہیر کی جائے ۔ حکومت کی جانب سے کئے گئے فیصلوں کو عوام میں پیش کرنے کیلئے پارٹی ہی اہم رول ادا کرسکتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT