Friday , September 21 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس کا بی جے پی کی جانب جھکاؤ

ٹی آر ایس کا بی جے پی کی جانب جھکاؤ

کانگریس کے ساتھ اتحاد کا امکان نہیں ،پارٹی لیڈر کا بیان

کانگریس کے ساتھ اتحاد کا امکان نہیں ،پارٹی لیڈر کا بیان

نئی دہلی 13 مارچ ( پی ٹی آئی)کانگریس اور ٹی آر ایس کے درمیان اتحاد سے متعلق مذاکرات مشکل سے دوچار ہوگئے ہیں۔ تلنگانہ کی علاقائی پارٹی کا بی جے پی کی جانب جھکاؤ بڑھ رہا ہے۔ بی جے پی کے ساتھ امکانی اتحاد کیلئے اندرونی طور پر مذاکرات جاری ہیں۔ٹی آر ایس اور کانگریس کے درمیان بات چیت نشستوں کی تعداد کے مسئلہ پر مشکلات میں محصور ہوگئی ہے۔ نو تشکیل شدہ ریاست تلنگانہ میں ہر ایک نشست اہمیت کی حامل ہے خاص کر 119 رکنی اسمبلی کیلئے انتخابات ہر پارٹی کیلئے اہم ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ ٹی آر ایس سب سے زیادہ حلقے مانگ رہی ہے اسے کانگریس سے زیادہ حلقوں کی ضرورت ہے۔ اسی مسئلہ کے باعث دونوں پارٹیوں کے درمیان شدید اختلافات اُبھریں ہے۔ اس بات کی نشاندہی نہیں کی گئی کہ آخر ٹی آر ایس کتنی نشستوں کا مطالبہ کررہی ہے فی الحال کانگریس کے ساتھ کوئی رسمی مذاکرات نہیں ہوئی ہے اور نہ ہی سودے بازی ہورہی ہے۔ ٹی آر ایس لیڈر نے کہا ہے کہ ہمیں کانگریس کی جانب سے زیادہ سے زیادہ حلقے ملنے چاہئے تا کہ ہم آئندہ حکومت بنا سکے ۔

کانگریس میں انضمام کے مطالبہ کو مسترد کردینے کے بعد ہمارے درمیان رسمی بات چیت جاری تھی۔ ٹی آر ایس کا خیال ہے کہ اگر مرکز میں بی جے پی کی حکومت ہوتی ہے تو ٹی آر ایس کو تلنگانہ میں بی جے پی سے مدد لینی پڑے گی۔ بی جے پی سے رسم و راہ بڑھانے کے اقدامات کو منصفانہ قرار دیتے ہوئے ٹی آر ایس قائدین نے اس بات کی نشاندہی کی کہ بی جے پی نے پارلیمنٹ میں تلنگانہ بل منظور کرانے میں مدد کی ہے ۔ ہمارا خیال ہے کہ دہلی میں آئندہ حکومت بی جے پی کی ہی ہوگی۔ ایسے حالات میں تلنگانہ کی ترقی کیلئے بی جے پی کی مدد درکار ہوگی ۔ کانگریس کے ساتھ دوستی کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT