Sunday , May 27 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس کی غلط پالیسیوں سے تعلیمی بحران

ٹی آر ایس کی غلط پالیسیوں سے تعلیمی بحران

ریاست میں تعلیمی اداروں کی تعداد میں کمی ۔ اتم کمار ریڈی
حیدرآباد۔ 21 ڈسمبر (سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اُتم کمار ریڈی نے غلط پالیسیوں کو اپنا کر تلنگانہ میں تعلیمی بحران پیدا کرنے کا ٹی آر ایس حکومت پر الزام عائد کیا۔ ایل کے جی تا پی جی تعلیمی اداروں کی جوائنٹ ایکشن کمیٹی کی سندریا وگیانا کیندرم میں منعقدہ راؤنڈ ٹیبل کانفرنس سے خطاب میں یہ بات بتائی۔ اس موقع پر تلنگانہ جے اے سی صدرنشین پروفیسر کودنڈا رام تلگو دیشم رکن اسمبلی آر کرشنیا کے علاوہ دوسرے قائدین اور ماہرین تعلیم موجود تھے۔ اُتم کمار ریڈی نے کہا کہ ملک میں تلنگانہ واحد ریاست ہے جہاں تعلیمی اداروں کی تعداد اور طلبا کے داخلوں کا عمل گھٹ رہا ہے۔ سال 2014-15ء میں 2100 جونیر کالجس تھے جواب گھٹ کر 2017-18میں 1650 تک پہونچ گئے ہیں۔ اسی طرح طلبا کی تعداد 4.45 سے گھٹ کر 2.90 لاکھ ہوگئی ۔ لیکچررس کی تعداد بھی گھٹ گئی ہے۔ کے جی تا پی جی مفت تعلیم کا وعدہ کرکے کے سی آر نے اقتدار حاصل کیا، لیکن اس پر کوئی کارروائی نہیں کی، اس کی بجائے تعلیمی اداروں کو بند کیا جارہا ہے۔ صرف 544 ریسیڈنشیل قائم کرکے 52 لاکھ طلبہ کو تعلیم دینے کا حکومت دعوی کر رہی ہے اور عوام کو گمراہ کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسمبلی میں کئی مرتبہ فیس باز ادائیگی بقایاجات جاری کرنے کا وعدہ کیا، ابھی تک عمل آوری نہیں کی۔

TOPPOPULARRECENT