Friday , April 20 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس کے چھ ارکان اسمبلی کو عہدوں سے ہٹانے کا مطالبہ

ٹی آر ایس کے چھ ارکان اسمبلی کو عہدوں سے ہٹانے کا مطالبہ

گورنر اور الیکشن کمیشن آف انڈیا سے شکایت کرنے کا اعلان : ریونت ریڈی
حیدرآباد ۔ 20 جنوری (سیاست نیوز) کانگریس کے قائد و رکن اسمبلی ریونت ریڈی نے نفع بخش عہدے پر فائز ہوکر تمام سرکاری سہولتیں اور مراعات حاصل کرنے والے ٹی آر ایس کے 6 ارکان کو بھی دہلی کے طرز پر فوری نااہل قرار دینے کا مطالبہ کیا۔ مزید 21 افراد کے نفع بخش عہدوں پر خدمات انجام دینے کی مخالفت کرتے ہوئے فوری انہیں عہدوں سے ہٹا دینے کا حکومت سے مطالبہ کیا۔ 6 ارکان اسمبلی کے خلاف گورنر نرسمہن اور الیکشن کمیشن آف انڈیا کو یادداشت پیش کرنے کا اعلان کیا۔ دہلی میں الیکشن کمیشن آف انڈیا کی جانب سے نفع بخش عہدوں پر فائز ہونے والے 20 ارکان اسمبلی کی رکنیت منسوخ کرنے کی صدرجمہوریہ ہند سے سفارش کرنے کا ریونت ریڈی نے خیرمقدم کیا اور ریاست کے نفع بخش عہدے پر خدمات انجام دینے والے 6 ارکان اسمبلی کو صدر کانگریس مسز سونیا گاندھی سے اخلاقیات کا سبق حاصل کرنے کا مشورہ دیا اور کہا کہ جب سونیا گاندھی پر نفع بخش عہدے پر خدمات انجام دینے کا الزام عائد ہوا تو انہوں نے فوری لوک سبھا کی رکنیت سے مستعفی ہوکر دوبارہ مقابلہ کیا اور کامیابی سے نئی تاریخ قائم کی تھی۔ تلنگانہ میں ارکان اسمبلی، ارکان قانون ساز کونسل کی تعداد کے لحاظ سے 15 فیصد ارکان کو کابینہ میں شامل کرنے کی گنجائش تاہم چیف منسٹر کے سی آر نے ٹی آر ایس کے 6 ارکان اسمبلی ونئے بھاسکر، جے وینکٹ راؤ، وی سرینواس گوڑ، جی کشور کمار، وی نتیش کمار اور کووا لکشمی کو پارلیمنٹ سکریٹری کی حیثیت سے نامزد کیا۔ ان 6 ارکان اسمبلی نے تنخواہوں کے بشمول تمام سرکاری مراعات اور سہولتوں سے استفادہ کیا تھا۔ اس وقت تلگودیشم میں رہنے والے ریونت ریڈی اور کانگریس کے رکن پارلیمنٹ جی سکھندر ریڈی نے حکومت کے اس فیصلے کو ہائیکورٹ میں چیلنج کیا جس پر ہائیکورٹ نے پارلیمنٹ سکریٹری نامزد کرنے کے جی او کو منسوخ کردیا اور حکومت کو پابند کیا تھا۔ مستقل نفع بخش عہدوں پر کس کو نامزد کیا جارہا ہے وہ اس فیصلے سے ہائیکورٹ کو واقف کرائے جس سے اتفاق کرنے والی ٹی آر ایس حکومت نے ہائیکورٹ کو اطلاع دیئے بغیر مزید 21 افراد کو کابینی درجہ دیتے ہوئے نفع بخش عہدوں پر تقرر کردیا جو عدلیہ کی توہین کے مترادف ہے۔ دہلی میں عام آدمی کے 20 ارکان اسمبلی کو پارلیمنٹری سکریٹری نامزد کرنے کے خلاف الیکشن کمیشن آف انڈیا نے انہیں نااہل قرار دینے کی صدرجمہوریہ سے سفارش کی ہے جبکہ ٹی آر ایس کے 6 ارکان اسمبلی نے تمام مراعات سے استفادہ کیا ہے تو انہیں کیوں معطل نہیں کیا جارہا ہے۔ ریونت ریڈی نے کہا کہ وہ اس سلسلے میں بہت جلد گورنر سے ملاقات کریں گے اور دہلی میں الیکشن کمیشن آف انڈیا سے نمائندگی کریں گے۔ تلنگانہ کے 6 ارکان اسمبلی اور 21 دوسرے نفع بخش عہدوں پر خدمات انجام دینے والے قائدین کو عہدوں سے علحدہ کرنے کیلئے بھی صدرجمہوریہ ہند سے سفارش کرنے کا مطالبہ کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT