ٹی آر ایس کے 69 امیدواروں کا اعلان ‘ صرف ایک مسلمان شامل

پارٹی سربراہ چندر شیکھر راؤ گجویل سے مقابلہ کرینگے ۔ کسی بھی جماعت سے مفاہمت کے بغیر تنہا مقابلہ

پارٹی سربراہ چندر شیکھر راؤ گجویل سے مقابلہ کرینگے ۔ کسی بھی جماعت سے مفاہمت کے بغیر تنہا مقابلہ

حیدرآباد۔/4اپریل، ( سیاست نیوز) تلنگانہ راشٹرا سمیتی نے آج اپنے 69 امیدواروں کی پہلی فہرست جاری کردی ہے۔ پہلی فہرست میں صرف اسمبلی نشستوں کے امیدواروں کے ناموں کا اعلان کیا گیا جبکہ مابقی50اسمبلی اور 17پارلیمانی حلقوں کے امیدواروں کے ناموں کا اندرون دو یوم اعلان کیا جائے گا۔ پارٹی سربراہ کے چندر شیکھر راؤ نے آج امیدواروں کی پہلی فہرست اور انتخابی منشور جاری کیا۔ پہلی فہرست میں زیادہ امیدوار پارٹی کے موجودہ ارکان اسمبلی ہیں تاہم دو ارکان اسمبلی کو پہلی فہرست میں جگہ نہیں مل سکی۔ ورنگل کے پرکال اسمبلی حلقہ سے رکن اسمبلی ایم بھکشا پتی اور ملکاجگیری رکن اسمبلی اے راجندر کے نام پہلی فہرست میں شامل نہیں ہوئے۔ دو دن قبل ہی راجندر نے ٹی آر ایس میں شمولیت اختیار کی۔ انہوں نے الزام عائد کیا تھا کہ ایم آر پی ایس صدر مندا کرشنا مادیگا انہیں انتخابات میں حصہ نہ لینے دھمکی دے رہے ہیں۔ 69امیدواروں کی پہلی فہرست میں چندر شیکھر راؤ نے اگرچہ 55فیصد کمزور طبقات کو نمائندگی دینے کا دعویٰ کیا ہے تاہم مسلم اقلیت کا ایک امیدوار ہے۔ کے سی آر نے اعلان کیا کہ پارٹی کسی جماعت سے کوئی مفاہمت نہیں کریگی اور تنہا مقابلہ کریگی ۔ پہلی فہرست میں چندر شیکھر راؤ میدک کے حلقہ گجویل سے امیدوار ہونگے ۔ پارٹی نے شکیل احمد کو بودھن ( نظام آباد) سے امیدوار بنایا ہے۔ کے سی آر نے کہا کہ این نرسمہا ریڈی کی زیر قیادت الیکشن کمیٹی نے ناموں کو قطعیت دی ہے۔ اندرون دو یوم مابقی ناموں کو قطعیت دی جائیگی۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ کمزور طبقات، تلنگانہ تحریک میں حصہ لینے والوں، ڈاکٹرس، وکلاء، طلباء قائدین کو مناسب نمائندگی دی گئی ہے۔ ملکاجگری رکن اسمبلی اے راجندر کو دوبارہ ٹکٹ کے مسئلہ پر چندر شیکھر راؤ نے کہا کہ انہیں ٹکٹ دینے میں پارٹی کیلئے کوئی مسئلہ نہیں ہے تاہم راجندر نے انتخابی سیاست سے دستبرداری کا اعلان کیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پرکال رکن اسمبلی بھکشا پتی کے مقدمہ کا جائزہ لینے کے بعد ان کی امیدواری کا فیصلہ کیا جائیگا۔ پارٹی نے جن 69 اسمبلی امیدواروں کے ناموں کا اعلان کیا ہے ان میں چندر شیکھر راؤ ( گجویل) ایٹالہ راجندر ( حضور آباد) ٹی ہریش راؤ ( سدی پیٹ) پی سرینواس ریڈی ( بانسواڑہ) جوگو رامنا ( عادل آباد) کے ہریشور ریڈی ( پرگی) جی نگیش( بوتھ ) جوپلی کرشنا راؤ ( کولاپور ) ایس وینو گوپال چاری ( مدھول ) پی مہیندر ریڈی ( تانڈور ) ستیہ وتی راٹھور ( ڈورناکل ) کے ایشور( دھرما پوری) ڈی ونئے بھاسکر ( ورنگل ویسٹ ) سی ایچ رمیش بابو ( ویملواڑہ ) جی کملاکر ( کریم نگر ) کے ودیا ساگر راؤ ( کورٹلہ ) این اوڈیلو( چنور) ای رویندر ریڈی ( ایلا ریڈی) ہنمنت شنڈے ( جکل ) گمپا گوردھن ( کاماریڈی) ایس ستیہ نارائنا ( راما گنڈم) ڈاکٹر ٹی راجیا ( اسٹیشن گھن پور ) کے سامیا(سرپور) کے ایس رتنم ( چیوڑلہ) کے ٹی راما راؤ ( سرسلہ ) وائی یلا ریڈی( مکتھل ) جئے پال یادو ( کلواکرتی) پدما راؤ گوڑ (سکندرآباد) ایس مدھوسدن چاری (بھوپال پلی) جی جگدیش ریڈی ( سوریہ پیٹ ) وی سرینواس گوڑ ( محبوب نگر ) ایس نرنجن ریڈی ( ونپرتی) ٹی روی ( ستو پلی) پی سدرشن ریڈی ( نرسہم پیٹ ) اجمیرا چندولال ( ملگ) ڈاکٹر سی لکشما ریڈی ( جڑچرلہ ) شریمتی کونڈہ سریکھا ( ورنگل ایسٹ ) شکیل احمد ( بودھن) جی سنیتا( آلیر) جی بالراج ( اچم پیٹ) ڈاکٹر این سدھاکر راؤ ( پالا کرتی) اے وینکٹیشور ریڈی ( دیورکدرہ )ای بالا کشن رسمئی ( مناکونڈور ) وی ستیش کمار ( حسن آباد)

ایم سریناتھ ( عالم پور) ایم یادگیری ریڈی ( جنگاؤں ) لالو نائیک (دیور کنڈہ) ڈی منوہر ریڈی ( پدا پلی) پی بابو موہن ( جوگی پیٹ) شریمتی پدما دیویندرریڈی ( میدک ) اے رمیش ( وردھنا پیٹ) کے سری ہری راؤ ( نرمل) چنیا ( بیلم پلی) ایم جناردھن ریڈی( ناگرکرنول) شریمتی ریکھا نائیک ( خانہ پور) اے جیون ریڈی( آرمور) اے لکشمی ( آصف آباد) وی پرشانت ریڈی ( بالکنڈہ ) چنتا پربھاکر( سنگاریڈی) جلگم وینکٹ راؤ ( کتہ گوڑم ) پی مدھو ( منتھنی) امریندر ریڈی ( مریال گوڑہ ) کے شنکراماں ( حضور نگر) ڈاکٹر ایم سنجے کمار ( جگتیال) جی مہیپال ریڈی ( پٹن چیرو) بی سنجیوا راؤ ( وقارآباد) بی کرشنا موہن ریڈی ( گدوال ) ویریشم ( نکریکل ) اور ایم سدھیر ریڈی ( میڑچل ) شامل ہیں۔کے سی آر نے صدر تلنگانہ پردیش کانگریس پونالہ لکشمیا اور صدر تلگودیشم چندرا بابو نائیڈو کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ ان کو ٹی آر ایس پر تنقید کا کوئی حق نہیں۔ انہوں نے کہا کہ نائیڈو نے لمحہ آخر تک تلنگانہ بل کو روکنے کوشش کی تھی۔ انہوں نے پونالہ لکشمیا کو سیما آندھرا قائدین کا ایجنٹ قرار دیا ۔

TOPPOPULARRECENT