Friday , February 23 2018
Home / اضلاع کی خبریں / ٹی آر ایس حکومت میں غنڈہ عناصر کی پشت پناہی

ٹی آر ایس حکومت میں غنڈہ عناصر کی پشت پناہی

کانگریس قائدین کو ہراساں کرنے کے سنگین نتائج ہوں گے ‘ نلگنڈہ میں تعزیتی اجلاس ‘مسرس کانیتا ‘ اتم کماریڈی اور دیگر کا خطاب

نلگنڈہ 4 ؍ فبروری ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)کانگریس قائدین و صدرنشین میونسپل کونسل نلگنڈہ شریمتی بی لکشمی کے شوہر کے قتل و دیگر امور سے پارٹی ہائی کمان کو واقف کرواتے ہوئے پارلیمنٹ اجلاس میں قتل کی غیر جانبدارانہ تحقیقات کے لئے مرکزی حکومت سے نمائندگی کرنے کانگریس پارٹی ریاستی انچارج مسٹر کانتیا نے آج نلگنڈہ میں کانگریس قائد بی سرینواس کو خراج عقیدت پیش کرنے کے لئے منعقدہ تعزیتی جلسہ عام کو مخاطب کرتے ہوئے تیقن دیا ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی غیرقانونی سرگرمیوں اور قتل و غارت گری کی حوصلہ افزائی نہیں کرتی ۔ اس قتل کا جواب 2019 ء کے انتخابات میں ٹی آر ایس کو اقتدار سے ہٹا دیا جائیگا ۔ اس جلسہ سے یہ بات واضح ہوچکی ہے کہ کانگریس میں متحدہ طورپر حکومت کو سبق سیکھانے کے لئے کمر بستہ ہوچکی ہے اور ٹی آر ایس سربراہ کو چیالنج کیا کہ 2019 میں کانگریس کو اقتدار حاصل ہوگا ۔ صدر پردیش کانگریس صدر مسٹر این اتم کمار ریڈی نے چیف منسٹر کو انتباہ دیا کہ ریاستی کانگریس قائدین و کارکنوںکو ہراساں کرنا بند کردے ورنہ سنگین نتائج ہوں گے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی کا ریاستی وفد مرکزی وزیر داخلہ اور صدر جمہوریہ ہند سے قتل کی سی بی آئی کے بذریعہ تحقیقات کا مطالبہ کرتے ہوئے نمائندگی کی جائیگی ۔ انہوں نے اس قتل کی غلط تحقیق کرنے پر ضلع مہتمم پولیس کو فوری معطل کرناچاہئے ۔ قائد اپوزیشن کانگریس مسٹر کے جاناریڈی نے کہا کہ بھرپور خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ اسمبلی اور باہر کانگریس پارٹی اس قتل کی غیر جانبدار تحقیق کروانے کے لئے جدوجہد کرائے گی ۔ علحدہ ریاست کا قیام عوام کی خوشحالی کے لئے عمل میں آیا لیکن عہدوں پر فائز قائدین کے لئے جدوجہد کرے گی ۔ علحدہ ریاست کا قیام عوام کی خوشحالی کے لئے عمل میں آیا لیکن عہدوں پر فائز قائدین غنڈہ عناصر کی پشت پناہی کر رہے ہیں ۔ سہ نشین کانگریس کے قائدین میں اتحاد کا نمونہ ہے اور تمام متحدہ طو رپر جدوجہد کرتے ہوئے ٹی آر ایس حکومت کواقتدار سے بیدخل کریں گے۔ قائد اپوزیشن قانون ساز کونسل مسٹر محمد علی شبیر نے کہا کہ علحدہ ریاست کا قیام بیروزگاری ‘ کسانوں کی خوشحالی اور عوامی خدمات کو ملحوظ رکھ کر عمل میں لائی ہے ۔ لیکن تلنگانہ ریاست میں صرف کے سی آر کے خاندان ہی میں خوشحالی دیکھائی دے رہی ہے ۔ انہوں نے بی سرینواس کے قتل کو چلر قتل کے طور پر پیش کئے جانے سے متعلق برہمی کا اظہار کیا اور کہا کہ یہ سیاسی قتل ہے ۔ اس کی مکمل تحقیقات ضروری ہے اور تمام خاطیوں کو عوام کے سامنے لانے تک کانگریس قائدین جدوجہد کریں گے ۔ سینئر قائدین و سابقہ مرکزی وزیر مسٹر جے پال ریڈی نے کہا کہ نلگنڈہ کی سرزمین انقلابی ہے یہاں سے آتماکو۔۔ ہونے والی جدوجہد کامیاب ہوتی ہے ۔ قتل کی تحقیقات نہ ہونے پر کانگریس کو اقتدار حاصل ہوتے ہی اس کی دوبارہ تحقیقات کروائی جائیگی ۔ کانگریس قائد و رکن اسمبلی کوڑنگل مسٹر ریونت ریڈ ی نے دریافت کیا کہ ریاست میں پولیس اور جمہوریت ہے ۔ یہاں پر جدوجہد کرنے والے قائدین کو جیل میں بند کر دیا جا رہا یہ ۔ اور پولیس عہدیدار حکمرانوں کے اشاروں پر کام کر رہے ہیں سرینواس کا قتل حکومت کے خلاف جدوجہد کا ذریعہ بنا ہے ۔ انہوں نے کہاکہ مہلوک قائد اور قتل میں ملوث افراد کا کال ڈاٹا فراہم کر کے تحقیقات کرنا چاہئے لیکن عہدیدار اس میں ناکام ہوگئے ۔ بلاخر میڈیا کے ذریعہ واضح ہوگیا ہے کہ قاتلوں نے قتل سے قبل اور بعد میں رکن اسمبلی تکریکل کے بھائی سے بات چیت کی ہے ان کی تفتیش اور تحقیق سے پس پردہ قائدین کے نام منظر پر آئیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ نکریکل رکن اسمبلی اور ریاستی وزیر جگدیش ریڈی کا پس منظر جرائم میں ملوث ہے ۔ رکن اسمبلی نلگنڈہ مسٹر کے وینکٹ ریڈی نے کہاکہ قتل کی تحقیقات سے متعلق عدالت اور مرکزی حکومت کے وزراء سے نمائندگی جائیگی اور کہا کہ سیاسی طور پر مقابل کرنے کی ہمت نہ رہنے والے سمجھ کرکمزور کر نے کے لئے بی سرینواس کا قتل کیا ہے ۔ انہوں نے کانگریس پارٹی متحدہ طور پر تلنگانہ میں یاترا کے ذریعہ عوام کو واقف کروائیں گی اورحکومت کو سبق سیکھایا جائیگا ۔ اس جلسہ کو کانگریس قائدین مسرز وی ہنمنت راؤ ‘ مدھوگوڑ یاشکی ‘ سریدھر بابو ‘ بی وکرم مارکر راج گوپال ریڈی ‘ جگا ریڈی و دیگر نے مخاطب کیا اورآنجہانی قائد کو پھرپور خراج پیش کیا ۔ قبل ازیں 2 منٹ کی خاموشی اختیار کرتے ہوئے خراج عقیدت پیش کیا گیا ۔ جلسہ کی کارروائی سابق رکن اسمبلی نکریکل سی لنگیا نے چلائی ۔ کانگریس قائدین و کارکن کثیر تعداد میں شریک تھے ۔

TOPPOPULARRECENT