Tuesday , January 16 2018
Home / شہر کی خبریں / ٹی ڈی پی ۔ بی جے پی اتحاد پر دونوں پارٹیوں کے قائدین ناراض

ٹی ڈی پی ۔ بی جے پی اتحاد پر دونوں پارٹیوں کے قائدین ناراض

ریاستی صدر بی جے پی کشن ریڈی کی بھی ناراضگی، مشترکہ پریس کانفرنس میں شرکت سے گریز

ریاستی صدر بی جے پی کشن ریڈی کی بھی ناراضگی، مشترکہ پریس کانفرنس میں شرکت سے گریز

حیدرآباد 6 اپریل (سیاست نیوز) ریاست میں جاریہ ماہ کے اختتام اور آئندہ ماہ کے پہلے ہفتہ میں لوک سبھا و اسمبلی کیلئے منعقد ہونے والے انتخابات کے سلسلہ میں تلگودیشم پارٹی اور بی جے پی کے مابین طے پائی انتخابی مفاہمت سے جہاں تلگودیشم اور بی جے پی قائدین میں زبردست ناراضگی پائی جارہی ہے وہیں بالخصوص خود ریاستی صدر تلنگانہ بی جے پی مسٹر جی کشن ریڈی کی تلگودیشم ۔ بی جے پی انتخابی مفاہمت پر ناراضگی آج واضح ہوچکی ہے۔ مسٹر جی کشن ریڈی بحیثیت صدر تلنگانہ ریاستی بی جے پی طے پائی مفاہمت کے بعد تلگودیشم پارٹی و بی جے پی قائدین کی مشترکہ طور پر منعقدہ پریس کانفرنس میں شریک ہونے سے عملاً گریز کیا کیونکہ گزشتہ دن سے ہی یہ بات واضح ہوچکی تھی کہ مسٹر جی کشن ریڈی علاقہ تلنگانہ میں منعقد ہونے والے پہلے مرحلہ کے تحت انتخابات میں تنہا مقابلہ کرکے اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنا چاہتے تھے اور بالخصوص تلگودیشم پارٹی کے ساتھ انتخابی مفاہمت سے گریز کرکے ٹی آر ایس سے انتخابی مفاہمت کیلئے کوشاں ہی نہیں بلکہ خصوصی دلچسپی رکھتے تھے لیکن گزشتہ دو دن سے انتخابی مفاہمت کیلئے تلگودیشم پارٹی کی کوشش آج دوپہر قطعی فیصلہ پر پہونچی لیکن اس انتخابی مفاہمت سے تلگودیشم پارٹی کے ہی بعض سینئر قائدین بالخصوص ڈاکٹر کے سیوا پرساد راؤ سابق وزیر اور مسٹر ایم ہنمنت راؤ رکن اسمبلی نے اپنی سخت ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے بالآخر آزاد امیدوار کی حیثیت سے انتخابی مقابلہ کرنے کا اعلان کردیا۔ اس طرح تلگودیشم پارٹی میں انتخابی مفاہمت کی وجہ سے انتہائی تشویشناک صورتحال پیدا ہوگئی ہے۔

اسی دوران تلگودیشم پارٹی کے ساتھ بی جے پی کی انتخابی مفاہمت سے ناراض ہونے سے متعلق خبروں کے ٹی وی چیانلوں پر ٹیلی کاسٹ ہونے پر فوری اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے مسٹر جی کشن ریڈی نے اپنی ناراضگی سے متعلق خبروں کی پرزور تردید کی اور کہاکہ انتخابی مفاہمت سے بی جے پی قائدین و کارکنوں میں زبردست ناراضگی کے علاوہ سخت احتجاج پایا جارہا تھا لہذا ان قائدین و کارکنوں کو سمجھانے اور احتجاج ختم کرنے کی ترغیب دینے میں مصروف رہنے کے باعث وہ تلگودیشم پارٹی اور بی جے پی قائدین کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس میں حصہ نہیں لے سکے۔ مسٹر کشن ریڈی نے واضح طور پر کہاکہ وہ تلگودیشم پارٹی کے ساتھ بی جے پی کی ہوئی انتخابی مفاہمت پر ہرگز ناراض نہیں ہیں اور وہ قومی بی جے پی قیادت کے فیصلوں اور ہدایت پر عمل کرنے کے پابند ہیں۔ اُنھوں نے کہاکہ بی جے پی قائدین و کارکنوں میں انتخابی مفاہمت سے پائی جانے والی ناراضگی و خفگی آئندہ ایک دو دن تک ضرور برقرار رہے گی اور دو تین یوم بعد خود بخود قائدین کی ناراضگی ختم ہوجائے گی۔ مسٹر کشن ریڈی نے مزید کہاکہ ایک طرف تلگودیشم پارٹی اور دوسری طرف بی جے پی قائدین میں اس انتخابی مفاہمت کے مسئلہ پر ناراضگی اور احتجاج پایا جارہا ہے لیکن کسی بھی صورت میں مسٹر نریندر مودی کو وزیراعظم بنانا ہم تمام کا اہم مقصد ہونا چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT