Monday , May 21 2018
Home / دنیا / پابندیوں کی وجہ سے اقوام متحدہ کے بقایا کی ادائیگی سے شمالی کوریا کا انکار

پابندیوں کی وجہ سے اقوام متحدہ کے بقایا کی ادائیگی سے شمالی کوریا کا انکار

شمالی کوریا کو الگ تھلگ کرنے پر اتحادی متفق‘نائب صدر امریکہ پنس کا ادعا
اقوام متحدہ، 11 فروری (سیاست ڈاٹ کام ) شمالی کوریا نے اپنے غیر ملکی کرنسی بینک پر عائد بین الاقوامی پابندیوں کی وجہ سے 2018 کے اقوام متحدہ کے بجٹ میں اپنے حصے کا تعاون دینے میں ناکامی کااظہار کرتے ہوئے اقوام متحدہ کے سینئر افسران سے مدد کی درخواست کی ہے ۔ اقوام متحدہ میں شمالی کوریا کے سفیر ‘جا سونگ نام’ نے اقوام متحدہ مینجمنٹ کے سربراہ جان بیگل سے ایک بینکنگ لین دین چینل کو یقینی بنانے میں مدد کی درخواست کی تاکہ پیانگ یانگ 2018 کے بجٹ میں اپنے حصے کا ایک لاکھ 84 ہزار امریکی ڈالر ادا کر سکے ۔اقوام متحدہ کے رکن ممالک کو باقاعدہ اور امن بجٹ میں اپنے ممکنہ شراکت رقم ادا کرنا ہوتا ہے ۔ اس کے علاوہ بین الاقوامی ٹریبونلز کا بھی بجٹ ہے ۔شمالی کوریا مشن نے کل ایک بیان میں کہا کہ امریکہ اور اقوام متحدہ کی جانب سے شمالی کوریا کے پرائمری فاریکس بینک پر پابندی لگنے سے نہ صرف ہمیں اقوام متحدہ کے رکن کے طور پر اپنی ذمہ داریوں سے روکا جا رہا ہے بلکہ اقوام متحدہ کے بقایا کی ادائیگی جیسی معمول کی سرگرمیوں میں بھی رکاوٹ پیدا ہوتی ہے ”۔بیان میں کہا گیا “یہ بھی ظاہر کرتا ہے کہ پابندیاں کس قدر ظالمانہ اور غیر مہذب ہیں”۔امریکہ نے 2013 میں شمال کوریا کے غیر ملکی کامرس بینک پر پابندی لگا دی تھی جبکہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے گزشتہ اگست میں بینک کو بلیک لسٹ میں ڈال دیا تھا۔واشنگٹن سے موصولہ اطلاع کے بموجب ونٹر اولمپک کے ذریعے دونوں کوریائی ممالک اپنے سفارتی تعلقات مزید بہتر کرنے کے درمیان امریکی نائب صدر مائیک پینس نے کہا کہ جوہری ہتھیاروں کے پروگرام کے قضیہ پر شمالی کوریا کو الگ تھلگ کرنے کے معاملہ پر امریکہ، جاپان اور جنوبی کوریا مکمل طور پر اتفاق کرتا ہے ۔مسٹر پینس نے جنوبی کوریا، جہاںونٹر اولمپک ہو رہا ہے ، سے واپس آنے کے دوران طیارہ میں صحافیوں کو بتایا”جب تک کہ شمالی کوریا جوہری اور بیلسٹک میزائل پروگرام کو ختم نہیں کر دیتا تبتک اس پر اقتصادی اور سفارتی پابندیاں جاری رکھنے پر امریکہ، جاپان اور جنوبی کوریا نے اتفاق کیا ہے ۔ اس معاملہ میں تینوں ممالک میں کسی قسم کا اختلاف نہیں ہے ”۔مسٹر پینس کے طیارہ میں موجود ایک سینئر انتظامی افسر نے کہا کہ جنوبی کوریا اور جاپان ہمارے اتحاد کے حق میں پوری مضبوطی کے ساتھ ہیں۔

TOPPOPULARRECENT