پارلیمانی حلقہ میدک سے ٹی آر ایس امیدوار کی شاندار کامیابی

سنگاریڈی 16 ستمبر (سیاست نیوز) حلقہ پارلیمان میدک کی نشست پر ٹی آر ایس پارٹی نے اپنا قبضہ برقرار رکھا حلقہ پارلیمان میدک کے ضمنی انتخابات میں ٹی آر ایس امیدوار کے پربھاکر ریڈی نے 361286 ووٹوں کی بھاری اکثریت کے ساتھ کامیابی حاصل کی جبکہ کانگریس امیدوارہ سنیتا لکشما ریڈی دوسرے اور بی جے پی امیدوار ٹی جئے پرکاش ریڈی نے تیسرا مقام حاصل کیا ۔ حلقہ پارلیمان میدک کے ضمنی انتخابات کیلئے آج صبح 8 بجے سے سنگا ریڈی ٹاون کے قریب موضع رودرارم میں واقع گیتم یونیورسٹی میں رائے شماری منعقد ہوئی ووٹوں کی گنتی کے پہلے راونڈ سے ہی ٹی ار ایس امیدوار کے پربھاکر ریڈی نے دیگر امیدواروں پر سبقت حاصل کی جو آخر تک برقرار رہی ۔ ٹی آر ایس امیدوار کے پربھاکر ریڈی نے جملہ 571810 ووٹ ، بی جے پی امیدوار ٹی جئے پرکاش ریڈی نے 186343 ووٹ ،کانگریس امیدوارہ سنیتا لکشما ریڈی نے 210524 ووٹ حاصل کئے جبکہ سنگاریڈی سے تعلق رکھنے والے نوجوان قائد محمد مشتاق احمد نے بحیثیت آزاد امیدوار مقابلہ کرتے ہوئے 4058 ووٹ حاصل کئے جبکہ ایک اور آزاد امیدوار سید حمید نے 3374 ووٹ حاصل کئے ۔ حلقہ اسمبلی سنگاریڈی میں ٹی آر ایس پارٹی نے 69474 ،بی جے پی 50625 اور کانگریس نے 14227 ووٹ حاصل کئے حلقہ اسمبلی سنگاریڈی میں ٹی آر ایس کو 18849ووٹوں کی اکثریت حاصل ہوئی جو کہ گذشتہ انتخابات کے مقابل کم ہے ۔ حلقہ اسمبلی پٹن چیرو میں ٹی ار ایس کو 82075 کانگریس کو 31230 اور بی جے پی کو 42830 ووٹ حاصل ہوئے اس حلقہ میں ٹی آر ایس کو 39245 ووٹوں کی اکثریت حاصل ہوئی حلقہ اسمبلی نرسا پور میں ٹی آر ایس کو 73710 کانگریس کو 67237 اور بی جے پی کو 7111 ووٹ حاصل ہوئے جبکہ ٹی آر ایس نے اس حلقہ سے 6473 ووٹوں کی سبقت حاصل کی ۔ حلقہ اسمبلی میدک سے ٹی آر ایس نے 76945 کانگریس نے 35640 اور بی جے پی نے 14842 ووٹ حاصل کئے ۔ ٹی آر ایس کو 41305 ووٹوں کی اکثریت حاصل رہی ۔ حلقہ اسمبلی دوباک سے ٹی آر ایس کو 86025 کانگریس 18686 اور بی جے پی کو 16048 ووٹ حاصل ہوئے اس طرح دوباک حلقہ میں ٹی آر ایس کو 67366 ووٹوں کی اکثریت حاصل ہوئی حلقہ اسمبلی سدی پیٹ میں ٹی آر ایس کو 93759 ،کانگریس کو 13193 اور بی جے پی کو 17026 ووٹ حاصل ہوئے سدی پیٹ میں ٹی آر ایس نے 76733 ووٹوں کی اکثریت حاصل کی حلقہ اسمبلی گجویل میں ٹی آر ایس نے 89785 کانگریس نے 30280 اور بی جے پی نے 37852 ووٹ حاصل کئے ۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راو کے اپنے حلقہ اسمبلی گجویل میں ٹی آر ایس کو 51933 ووٹوں کی زبردست اکثریت حاصل ہوئی کانگریس پارٹی امیدوار سنیتا لکشما ریڈی نے با اعتبار محصلہ ووٹ حلقہ اسمبلی نرسا پور ،دوباک،میدک میں دوسرا مقام حاصل کیا جبکہ بی جے پی امیدوار ٹی جئے پرکاش ریڈی نے حلقہ اسمبلی گجویل ،سدی پیٹ ،پٹن چیرو اور سنگاریڈی میں دوسرا مقام حاصل کیا ۔ ٹی آر ایس امیدوار کے پربھاکر ریڈی نے پہلے راونڈ میں اپنے قریبی حریف کانگریس امیدوار سنیتا لکشماریڈی پر 18443 کی اکثریت حاصل کی دوسرے راونڈ میں انہوں نے 38632 تیسرے راونڈ میں 58772 چوتھے راونڈ میں 79930پانچویں راونڈ میں 101127 چھٹے راونڈ میں 120995 ساتویں راونڈ میں 145540 آٹھویں راونڈ میں 164706 نویں راونڈمیں 182350 دسویں راونڈ میں 200555 گیارہویں راونڈ میں 217374 ، بارہویں راونڈ میں 237599 ،تیرہویں راونڈ میں 256847 ،چودھویں راونڈ میں 276900 ،پندرہویں راونڈ میں 2974001 ،سولہویں راونڈ میں 319796 ،سترہویں راونڈمیں 339345،اٹھارہویں راونڈمیں 347871،انیسویں راونڈ میں 351325 ،بیسویں راونڈ میں 356438 ،اکیسویں راونڈ میں 359870 ،بائیسویں اور آخری راونڈ میں ٹی آر ایس امیدوار نے مجموعی طور پر 361277 ووٹوں کی اکثریت حاصل کی انہیں دس پوسٹل بیالٹ بھی حاصل ہوئے ۔ حلقہ پارلیمنٹ میدک کے ضمنی انتخابات میں جملہ 10 لاکھ46 ہزار 092 رائے دہندگان نے اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا جو 67.8 فیصد ہے جو گذشتہ عام انتخابات سے ساڑھے نو فیصد کم ہے جس کی بناء پر سیاسی حلقوں نے ٹی آر ایس کی اکثریت میں بھاری کمی کی پیش قیاسی کی تھی جو کہ بالکلیہ غلط ثابت ہوئی کم ووٹنگ کے باوجود ٹی آر ایس نے 3.61 لاکھ کی ریکارڈ اکثریت کے ساتھ کامیاب ہوتے ہوئے اپنی عوامی مقبولیت کا پھر ایک مرتبہ ثبوت دیا ہے ۔ اس مرتبہ بھی مسلمانوں نے متحدہ طور پر جوش و خروش کے ساتھ ٹی آر ایس کے حق میں ووٹ دیا جس کی دلیل ٹی آر ایس کی بھاری اکثریت کے ساتھ کامیابی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT