Wednesday , November 22 2017
Home / Top Stories / پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس کا آئندہ ہفتہ ہنگامہ خیز آغازمتوقع

پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس کا آئندہ ہفتہ ہنگامہ خیز آغازمتوقع

کئی اہم بلوں کی منظوری کے علاوہ نوٹوں کی تنسیخ‘ طلاق ثلاثہ اور دیگر مسائل پر اپوزیشن کی ہنگامہ آرائی ممکن

نئی دہلی، 13 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اگلے ہفتے شروع ہو رہے پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں کالا دھن نکالنے کیلئے بڑے نوٹوں کو بند کرنے سے ملک بھر میں عام آدمی کو ہو رہی پریشانی کے علاوہ پاک مقبوضہ کشمیر میں سرجیکل اسٹرائک، تین طلاق اور سیمی کارکنوں کو مبینہ تصادم میں ہلاک کئے جانے کے معاملے کے ساتھ مہنگائی کے مسئلہ پر ہنگامہ آرائی کے آثار ہیں۔ اہم اپوزیشن پارٹی کانگریس نے 500 اور 1000 روپے کے نوٹ کو بند کئے جانے کی وجہ سے پیدا ہوئی بدنظمی کو دیکھتے ہوئے پہلے دن کام روکو تحریک پہلے لانے کا نوٹس ابھی سے دے دیا ہے ۔ راجیہ سبھا میں پارٹی کے ڈپٹی لیڈر آنند شرما نے ضابطہ 267 کے تحت یہ نوٹس دیا ہے ۔ کانگریس سمیت تمام اپوزیشن پارٹیاں اس مسئلے کو زور شور سے اٹھائیں گی۔ اجلاس کے دوران اشیا اور خدمات ٹیکس (جی ایس ٹی) کو نافذ کرنے کے لئے تین بلوں سمیت کل نو نئے بل لائیگي جن میں سنٹرل اشیا اور خدمات ٹیکس بل شامل ہے ۔ حکومت کا مقصد یکم اپریل 2017 سے جی ایس ٹی کو پورے ملک میں نافذ کرنا ہے ۔ اس اجلاس میں سروگیسي ریگولیشن بل بھی آئے گا

جس میں قومی سروگیسي بورڈ، ریاستی سروگیسي بورڈ کی تشکیل اور سروگیسي کے عمل اور روایت کو ضابطہ کے تحت لانے کے لئے مناسب اتھارٹیزکی تقرری سمیت دیگر امور شامل ہیں۔ ان کے علاوہ پیش ہونے والے 6 دیگر بلوں میں آئی آئی ایم خود مختاری، ایچ آئی وی ایڈز روک تھام اور کنٹرول بل، دماغی صحت کی دیکھ بھال بل، انسداد بدعنوانی (ترمیم) بل اور زچگی سے متعلق بل شامل ہیں۔ حکومت دشمن کی جائیداد آرڈیننس کی جگہ لائے جانے والے بل کو بھی اسی اجلاس میں منظور کرایے گی۔ حکومت نے کھانے پینے کی اشیاء اور خاص طور پر مٹھائیوں میں ملاوٹ کو روکنے کے لئے نئے اور سخت بل سرمائی اجلاس میں لانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ واضح رہے کہ 16 نومبر سے 16 دسمبر تک جاری رہنے والے پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں کئی اہم مسائل پر بحث ہوگی جس میں اپوزیشن پارٹیاں حکومت کو گھیرنے کی کوشش کریں گی۔ اپوزیشن پارٹیاں تین طلاق کے معاملے پر حکومت کو گھیرنے کی کوشش کریں گی۔ ان کا الزام ہے کہ اس بہانے سے حکومت ملک میں اقلیت مخالف یکساں سول کوڈ کو لانے کی کوشش کر رہی ہے ۔ پاکستان مقبوضہ کشمیر میں فوج کی طرف سے کی گئی سرجیکل اسٹرائک کی وجہ سے پیدا حالات پر بھی اپوزیشن حکومت کو گھیرنے کی کوشش کرے گی ۔ کالے دھن کو نکالنے کیلئے مرکزی حکومت کی طرف سے آٹھ نومبر کو آدھی رات سے 500 اور 1000 روپے کے نوٹ کو بند کئے جانے کی وجہ سے پیدا ملک بھر میں پیدا ہوئے افراتفری کے ماحول پر اپوزیشن نے حکومت کو گھیرنے کی تیاری کر لی ہے ۔ سرمائی اجلاس کے پہلے لوک سبھا اسپیکر سمترا مہاجن نے 14 نومبر کی شام کو اور حکومت نے 15 نومبر کو کل جماعتی میٹنگ طلب کی ہے ۔ عام طور پر سرمائی اجلاس نومبر کے تیسرے ہفتے میں ہوتا ہے ۔ لیکن جی ایس ٹی اور کچھ دیگر اہم بلوں کو پاس کرانے کے لئے اس وقت سرمائی اجلاس وقت سے تھوڑا پہلے طلب کیا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT