Tuesday , November 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / پاکستانی کرکٹ کے مسائل کی جلد یکسوئی ممکن نہیں : مدثر نذر

پاکستانی کرکٹ کے مسائل کی جلد یکسوئی ممکن نہیں : مدثر نذر

ہم نے اب تک صلاحیتوں اور وسائل کو ضائع کیا ۔ ڈومیسٹک ڈھانچہ کو بہتر بنانے کی ضرورت
کراچی 19 جون ( سیاست ڈاٹ کام ) پاکستان کے نئے ڈائرکٹر کرکٹ اکیڈیمیز و سابق ٹسٹ کھلاڑی مدثر نذر نے آج واضح کردیا کہ پاکستان کرکٹ کو جن مسائل کا سامنا ہے انہیں آسانی سے یاجلدی دور نہیں کیا جاسکتا ۔ مدثر نذر نے انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کی گلوبل اکیڈیمی دوبئی میں اپنی خدمات کو ترک کرتے ہوئے پاکستان کرکٹ بورڈ کی ذمہ داری سنبھالی ہے ۔ انہوں نے تاہم اس یقین کا اظہار کیا کہ پاکستان میں کرکٹ اکیڈیمیوں کے ذریعہ ہر سال تین تا چار کرکٹرس کو تیار کرکے انہیں بین الاقوامی کرکٹ کیلئے آگے بڑھایا جاسکتا ہے ۔ مدثر نذر نے کہا کہ ملک میں اب بھی زبردست نوجوان صلاحیتیں موجود ہیں اور ہمیں ضرورت اس بات کی ہے کہ نیشنل کرکٹ اکیڈیمی بنایئں اور علاقائی اکیڈیمیاں بنائیں تاکہ مزید موثر اور کارکرد انداز میں ان نوجوانوں کو پروان چڑھایا جاسکے اور ان کی صلاحیتوں کو فروغ دیا جاسکے ۔ مدثر نذر نے انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کی گلوبل اکیڈیمی میں آٹھ برس کا وقت گذارا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کسی بھی ملک کیلئے ایک طاقتور اور مستحکم کرکٹ نظام رکھنا ضروری ہوتا ہے ۔ چھ تا آٹھ سال کا وقفہ ترقیاتی پروگراموں کو ثمر آور بنانے درکار ہوسکتا ہے اسکے بعد نتائج ملنے شروع ہوسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ افسوس ہے کہ پاکستان کرکٹ میں فوری اثر والے اور مختصر مدتی فیصلے معاون ثابت نہیں ہوسکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس سلسلہ میں بہت کچھ کام کیا جانا باقی ہے اور اسی وجہ سے انہوں نے یہ نئی ذمہ داری چیلنج کے طور پر قبول کی ہے ۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ اپنی پچس اور ڈومیسٹک ڈھانچہ کو بہتر بنائیں۔ ہمیں نوجوان اور ابھرتے ہوئے کھلاڑیوں پر توجہ دینے کی ضرورت ہے ۔ دوسرے ممالک نے بدلتے وقتوں کے تقاضوں سے خود کو ہم آہنگ کرلیا ہے اور ہمیں ایسا کرنے کی ضرورت ہے ۔ افسوس ہے کہ اب تک ہم نے وسائل کو ضائع کیا ہے ۔ مدثر ماضی میں پاکستان اے اور سینئر ٹیم کی کوچنگ بھی کرچکے ہیںاور وہ نیشنل کرکٹ اکیڈیمی سے بھی کچھ وقت وابستہ رہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT