Tuesday , November 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / پاکستان میں عالمی کرکٹ کی واپسی میں وقت لگے گا : عباس

پاکستان میں عالمی کرکٹ کی واپسی میں وقت لگے گا : عباس

کراچی ، 23 مئی (سیاست ڈاٹ کام) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے صدر اور سابق عظیم بلے باز ظہیر عباس نے تسلیم کیا ہے کہ پاکستان میں عالمی کرکٹ کی واپسی میں وقت لگے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں سکیورٹی کی صورتحال بہتر ہو رہی ہے لیکن غیر ملکی ٹیمیں اب بھی پاکستان آنے میں ہچکچاہٹ کا شکار ہیں۔ 2009ء میں پاکستان کے دورے پر آئی سری لنکن ٹیم پر لاہور میں دہشت گردوں کے حملے کے ساتھ ہی پاکستان پر عالمی کرکٹ کے دروازے بند ہوگئے تھے اور اس وقت سے اب تک صرف زمبابوے کی ٹیم نے محدود اوورز کے میچز کیلئے پاکستان کا دورہ کیا ہے۔ پاکستان کے سابق کپتان نے ان خیالات کا اظہار پاکستان سوپر لیگ کی فرنچائز کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے مالک ندیم عمر کی جانب سے ان کے اعزاز میں منعقدہ تقریب میں کیا جہاں انہیں گولڈ میڈل اور شیلڈ سے نوازا گیا۔ انہوں نے کہا، ’’ میرا ماننا ہے کہ جب تک ہر چیز واپس ٹھیک نہیں ہو جاتی، ہم مستقبل قریب میں پاکستان میں عالمی کرکٹ نہیں دیکھ سکیں گے۔ لیکن ہمیں امید کا دامن نہیں چھوڑنا چاہئے کیونکہ ایک دن آئے گا جب ہمارے لوگ اپنے اسٹارز کو اپنے عوام کے سامنے کھیلتے ہوئے دیکھیں گے۔ آئی سی سی کے صدر کے عہدہ پر فائز ظہیر عباس آئندہ ماہ اڈنبرا میں مقررہ اگلے اجلاس میں اپنے عہدہ سے سبکدوش ہو جائیں گے۔ ’’ایشین براڈ مین‘‘ کے نام سے مشہور ظہیر عباس نے مزید کہا کہ کون ہمارے اسٹارز کو اپنے عوام کے سامنے کھیلتے نہیں دیکھنا چاہتا؟ ہم سب چاہتے ہیں لیکن اس خواب کو حقیقت بنتے دیکھنے کیلئے ضروری ہے کہ صورتحال بہت بہترین ہو۔ ویسٹ انڈیز والے اس سال دورۂ پاکستان کیلئے تیار تھے لیکن حالیہ خونریزی کے بعد انہوں نے بھی ’نیوٹرل‘ مقام پر کھیلنے کو ترجیح دی۔ اپنے دور کے بہترین بیٹسمن ظہیر عباس فرسٹ کلاس سنچریوں کی سنچری بنانے والے ایشیا کے واحد بلے باز ہیں۔ تاہم انہوں نے 1971ء میں ایجبسٹن کے مقام پر کھیلی گئی 274 رنز کی اننگز کو 78 ٹسٹ میچوں پر محیط کیریئر کی سب سے بہترین سعی قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ میں نے مزید 11 ٹسٹ سنچریاں بھی بنائیں لیکن میری پہلی سنچری سب سے بہترین ہے، یہ میری زندگی کا سب سے جذباتی لمحہ تھا۔

’’پاکستانی کرکٹرز کی پرفارمنس باعث افسوس‘‘
آئی سی سی کے آخری روایتی صدر ظہیر عباس نے کہا کہ انڈیا زیادہ پیسہ دیتا ہے اس لئے اُس کی بات سنی جاتی ہے، پاکستان میں حالات بہتر ہو رہے ہیں ۔ تاہم ظہیر نیشنل کرکٹرز کی پر فارمنس سے مایوس نظر آئے۔ انھوں نے کہا کہ اب پاکستانی ٹیم پر ایسا وقت آ گیا ہے کہ ورلڈ کپ کیلئے کوالیفائی کرنے کے بھی لالے پڑ گئے ہیں۔ 27 جولائی کو ظہیر عباس کی آئی سی سی صدارت کا آخری دن ہے جس کے بعد آئی سی سی میں اس عہدہ کو ختم کردیا جائے گا۔ ہندوستان کے ششانک منوہر اولین آزاد صدر انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) منتخب ہوچکے ہیں اور ظہیر عباس کی میعاد کے اختتام کے ساتھ منوہر تمام امور کی باگ ڈور سنبھال لیں گے۔

TOPPOPULARRECENT