Monday , November 20 2017
Home / دنیا / پاکستان کوصیانتی امدادمشروط بنائی جائے گی

پاکستان کوصیانتی امدادمشروط بنائی جائے گی

امریکہ کے عہدیدار کا بیان‘ پاکستان کو امریکہ سے عدم تعاون پر نقصان کا انتباہ ‘ خواجہ آصف کا عنقریب دورہ امریکہ
واشنگٹن ۔27اگست ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکہ کی پاکستان کو مدد اسلام آباد کے دہشت گروپس جیسے طالبان اور حقانی نیٹ ورک کے خلاف کارروائی سے مشروط بنائی جائے گی ۔ ٹرمپ انتظامیہ کے ایک عہدیدار نے کہا کہ عرصہ سے یہ دہشت گرد گروپس پاکستانی محکمہ سراغ رسانی کے عہدیداروں اور ان دہشت گرد گروپس کے درمیان روابط عرصہ سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں رکاوٹ بن رہے ہیں ۔ اس لئے ہم راتوں رات حالات میں کسی قسم کی تبدیلی کی توقع نہیں رکھتے ۔ ہمیں توقع ہے کہ بتدریج تبدیلیاں وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ آئیں گی ۔ ان کا یہ تبصرہ صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے پاکستان پر دہشت گروپس کے ایجنٹوں کو محفوظ پناہ گاہ فراہم کرنے کے سلسلہ میں پاکستان پر تنقید کے کچھ دن بعد سامنے آیا ہے ۔ یہ دہشت گروپس افغانستان میں امریکیوں کو قتل کررہے ہیں ۔ چنانچہ ڈونالڈ ٹرمپ نے پاکستان کو انتباہ دیا تھا کہ اگر وہ دہشت گردی کی سرپرستی جاری رکھے گا تو اس کو کافی نقصان اٹھانا پڑے گا ۔ صدر ٹرمپ نے کہا کہ ہم دیکھیں گے کہ تبدیلیوں کا آغاز ہوتا ہے ‘ انہیں فوری اور نمایاں تبدیلیاں عوام میں نہیں لانی پڑیں گی ‘ لیکن ہمیں اعتماد ہے کہ جب پاکستان ہماری خواہش کے مطابق دہشت گردوں کے خلاف کارروائیاں شروع کریں تو ہمیں اس کا علم ہوجائے گا اور ہم اس کا تجزیہ کرنے کے قابل ہوں گے ۔

اس طرح ہماری صیانتی امداد ان کارروائیوں کے ساتھ مشروط ہوگی جس کی ہم خاص طور پر طالبان اور حقانی نیٹ ورٹ کے خلاف پاکستان سے توقع رکھتے ہیں اور ہمیں توقع ہے کہ اس سلسلہ میں کچھ پیشرفت ہوگی ۔ عہدیدار نے کہا کہ وہ حقیقی وقت کا تعین نہیں کرسکتے ‘ تاہم یقیناً امریکہ کو پاکستان سے توقع ہے کہ وہ کچھ تبدیلیوں کا آغاز کرے گا ۔ وقت گذرنے کے ساتھ ساتھ اس کا انتظامیہ کارروائیوں میں پیشرفت کرے گا جو پاکستان دہشت گرد گروپ کے خلاف کرے گا ۔ امریکی عہدیدار نے سوالات کی بوچھاڑ کا جواب دیتے ہوئے جو پاکستان کے بیانات کے بارے میں ہورہی تھی کہا کہ جنوبی ایشیاء کی ٹرمپ کی حکمت عملی کی سخت مخالفت کی جارہی ہے ۔ پاکستان کا ردعمل کیسے دیکھا جائے گا ‘ اس سوال کا جواب دیتے ہوئے امریکی عہدیدار نے کہا کہ آپ کے خیال میں ہمیں کیسا دیکھنا چاہیئے ۔ اس قسم کے ردعمل جو عوامی شعبہ میں کئے جاتے ہیں عوام ان کے ساتھ اس بار تعاون کریں گے ۔ دہشت گردی کے خلاف مسائل سے امریکہ کے ساتھ تعاون کیا جائے گا ۔ انہوں نے کہا کہ ان کے خیال میں صدر امریکہ نے واضح کردیا ہے کہ ہم ایک مختلف رویہ اور موقف اختیار کریں گے ۔ امریکہ میں مایوسی پائی جاتی ہے اور یہ مایوسی جاری رہے گی اگر پاکستان نے دہشت گردگروپ کی محفوظ پناہ گاہیں برقرار رہیں گی لیکن ہمیں اُمید ہے کہ پاکستان کی جانب سے ان مسائل پر وسیع تر تعاون کیا جائے گا ۔ اب فیصلہ پاکستان کے ہاتھ میں ہے ۔ امریکہ کے ساتھ تعاون سے پاکستان کو کافی فائدہ پہنچے گا ۔ دوسری صورت میں اسے بہت زیادہ نقصان اٹھانا پڑے گا ۔ عہدیدار نے کہا کہ وزیر خارجہ پاکستان خواجہ آصف جلد ہی امریکہ کا دورہ کریں گے اور وزیر خارجہ ٹلر سن سے ملاقات کریں گے ۔ دورہ امریکہ سے قبل خواجہ آصف چین ‘ روس اور ترکی کے دورہ کر کے وہاں کے قائدین سے ملاقاتیں کریں گے اور ٹرمپ کی جنوبی ایشیاء پالیسی پر تبادلہ کریں گے ۔

TOPPOPULARRECENT