Friday , September 21 2018
Home / شہر کی خبریں / پرانے شہر میں میٹرو ریل پراجکٹ کا جلد آغاز:کے سی آر

پرانے شہر میں میٹرو ریل پراجکٹ کا جلد آغاز:کے سی آر

شادی مبارک کی امدادی رقم میں اضافہ، ایس سی ، ایس ٹی کے مماثل اقلیتوں کو مراعات، شہر میں ایک لاکھ مکانات کی تعمیر
حیدرآباد ۔ 14 ۔مارچ (سیاست نیوز) چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے پرانے شہر میں میٹرو ریل کے کاموں کے جلد آغاز کا اعلان کیا ۔ انہوں نے مقررہ منصوبہ کے تحت میٹرو ریل پراجکٹ پر عمل آوری کیلئے متعلقہ وزیر کو ہدایت دینے کا تیقن دیا۔ چیف منسٹر نے شادی مبارک اور کلیان لکشمی کے تحت دی جانے والی امدادی رقم میں اضافہ اور اسلامک سنٹر کے تعمیری کام کے جلد آغاز کا بھی اعلان کیا۔حیدرآباد میں ایک لاکھ ڈبل بیڈروم مکانات غریبوں کیلئے تعمیر کئے جائیں گے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ اقلیتوں کو ایس سی ، ایس ٹی طبقات کے مماثل مراعات فراہم کی جا ئیں گی ۔ اس سلسلہ میں حکومت نے احکامات جاری کردیئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جو مراعات حکومت کے احکامات میں شامل نہیں ہوسکے ، ان کیلئے علحدہ جی او جاری کیا جائے گا۔ چیف منسٹر نے کہا کہ ایس سی ، ایس ٹی طبقات کے مماثل مراعات کی فراہمی کیلئے حکومت پابند عہد ہے۔

چیف منسٹر نے کہا کہ فیس باز ادائیگی اسکیم کے تحت مرحلہ وار طور پر فنڈس جاری کئے جائیں گے۔ اسمبلی میں گورنر کے خطبہ پر مباحث کا جواب دیتے ہوئے چیف منسٹر نے کہا کہ حکومت پرانے شہر میں میٹرو ریل پراجکٹ پر عمل آوری کے سلسلہ میں سنجیدہ ہے ۔ مقررہ منصوبہ کے مطابق پراجکٹ پر عمل کیا جائے گا اور بہت جلد اراضی کے حصول کی کارروائی شروع کی جائے گی ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ انٹرنیشنل اسلامک سنٹر کی تعمیر کیلئے اراضی الاٹ کی گئی ہے اور بہت جلد تعمیری کاموں کے آغاز کا سنگ بنیاد رکھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ پرانے شہر میں برقی سربراہی کی صورتحال بہتر بنانے کیلئے وزیر برقی پرانے شہر کا دورہ کریں گے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے برقی سربراہی کے سلسلہ میں پرانے شہر پر 800 کروڑ روپئے خرچ کئے ہیں ۔ اب جبکہ موسم گرما کا آغاز ہورہا ہے ، برقی سربراہی کے سلسلہ میں شکایات کا جائزہ لینے کیلئے وہ وزیر برقی کو پرانے شہر کے دورہ کی ہدایت دیں گے تاکہ برسر موقع صورتحال کا جائزہ لے سکیں۔ چیف منسٹر نے کہا کہ ان کی حکومت اقلیتوں کی ہمہ جہتی ترقی کی خواہاں ہے اور اس سلسلہ میں کئی منفرد اسکیمات کا آغاز کیا گیا ۔

شادی مبارک اور کلیان لکشمی اسکیمات کا حوالہ دیتے ہوئے چیف منسٹر نے کہا کہ غریب لڑکیوں کی شادی کو آسان بنانے کیلئے حکومت نے ان اسکیمات کا آغاز کیا ہے۔ آئندہ مالیاتی سال سے دونوں اسکیمات کی امدادی رقم میں اضافہ کیا جائے گا ۔ فی الوقت ان اسکیمات کے تحت 75000 روپئے ادا کئے جارہے ہیں۔ توقع ہے کہ حکومت یہ رقم ایک لاکھ روپئے کردے گی۔ چیف منسٹر نے کانگریس پر الزام عائد کیا کہ اس نے مسلمانوں کو ووٹ بینک کے طور پر استعمال کیا لیکن ان کی ترقی کے لئے کوئی اقدامات نہیں کئے گئے ۔ کے سی آر نے کہا کہ ٹی آر ایس حکومت نے اقلیتوں کی تعلیمی ترقی کے لئے 204 اقامتی اسکولس قائم کئے ہیں ، جو ملک بھر میں ایک کارنامہ ہے ۔ ملک کی کسی اور ریاست میں ایسی مثال نہیں ملتی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے اقامتی ہاسٹلس کے میس چارجس میں اضافہ کردیا ہے ۔ طلبہ طویل عرصہ سے یہ مطالبہ کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ طلبہ کو بیرونی ممالک میں اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لئے اوورسیز اسکالرشپ اسکیم متعارف کی گئی۔ اس اسکیم کے تحت ابتدائی مرحلہ میں 10 لاکھ روپئے فراہم کئے گئے۔ جاریہ سال سے اس رقم کو بڑھاکر 20 لاکھ روپئے کیا گیا ۔ چیف منسٹر نے کہا کہ یہ رقم قرض نہیں بلکہ صد فیصد امداد ہے۔ ملک کی کسی اور ریاست میں اس طرح کی اسکیم موجود نہیں۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی قائدین نے زندگی میں کبھی اس طرح کی اسکیمات کا تصور بھی نہیں کیا ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی ملک کی 20 ریاستوں میں برسر اقتدار ہے لیکن وہاں بھی تلنگانہ کی طرح بھلائی اسکیمات نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس نے اپنے انتخابی منشور پر صد فیصد عمل آوری کی ہے، اس کے علاوہ 24 نئی اسکیمات کا آغاز کیا گیا جن کا تذکرہ انتخابی منشور میں شامل نہیں تھا۔

TOPPOPULARRECENT