Saturday , December 15 2018

پرانے شہر کی اقلیتی آبادی میں تاڑی کمپاونڈ کے خلاف احتجاج

شرابیوں کی وجہ سے روزانہ گڑبڑ ، خواتین اور شریف نوجوانوں کا راہ چلنا مشکل

شرابیوں کی وجہ سے روزانہ گڑبڑ ، خواتین اور شریف نوجوانوں کا راہ چلنا مشکل
حیدرآباد ۔ 25 نومبر ۔ ( سیاست نیوز ) حکومت کی جانب سے شہر میں تاڑی کمپاؤنڈ کو اجازت کی فراہمی کے بعد شہر کے بیشتر علاقوں سے کمپاؤنڈ کے قیام کے خلاف عوامی ردعمل ظاہر ہورہا ہے لیکن حسینی علم کے علاقہ میں عوام کمپاؤنڈ کے آغاز پر بے بسی کا اظہار کرتے ہوئے صرف تحریری شکایت پر اکتفاء کئے ہوئے ہیں۔ پرانے شہر کے ایک بااثر شخص کی جانب سے کمپاؤنڈ کے آغاز کے سبب پرانے شہر کی اقلیتی غالب آبادی والے علاقہ میں کمپاؤنڈ کے خلاف احتجاج نہیں ہوپارہا ہے لیکن مقامی عوام نے تحریری مکتوب کمشنر اکسائز کو روانہ کرتے ہوئے اس بات کی خواہش کی ہے کہ فوری طورپر مذکورہ کمپاؤنڈ کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے اسے مقفل کیا جائے تاکہ مقامی عوام سکون سے زندگی گذار سکے۔ شہریوں نے الزام عائد کیا کہ کمپاؤنڈ کے آغاز کے بعد سے علاقہ میں خواتین و شریف نوجوانوں کا چلنا پھرنا دشوار ہوچکا ہے ، چونکہ کمپاؤنڈ میں نشہ کرتے ہوئے سڑکوں پر نکلنے والے نشہ میں دھت افراد غیرضروری چھیڑ چھاڑ کے ذریعہ حالات کو کشیدہ بنارہے ہیں۔ اسی طرح خواتین کے خلاف نازیبا ریمارکس اور چھیڑ چھاڑ کے واقعات میں بتدریج اضافہ ہوتا جارہا ہے ۔ مقامی عوام نے بتایا کہ جو لوگ کمپاؤنڈ چلارہے ہیں اُن سے مقابلہ علاقہ کے عوام کی بس کی بات نہیں ہے اسی لئے پولیس سے اس بات کی خواہش کی جارہی ہے کہ فوری طورپر کارروائی کرتے ہوئے کمپاؤنڈ کو اگر اجازت فراہم کی گئی ہے تو اُسے فوری مسترد کیا جائے چونکہ کمپاؤنڈ کی برقراری سے علاقہ میں صورتحال ابتر ہوتی جارہی ہے جس کے سبب علاقہ کے امن و امان میں خطرہ پیدا ہونے کے خدشات بھی ظاہر ہونے لگے ہیں۔ چونکہ حسینی علم ، چیلہ پورہ کے جس علاقہ میں یہ کمپاؤنڈ کھولا گیا ہے اُس علاقہ میں اقلیتی و اکثریتی طبقہ سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں خاندان بستے ہیں اور نشہ میں دھت افراد بعض نازیبا حرکات کے سبب حالات کچھ اور موڑ اختیار کرسکتے ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT