Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / پرانے شہر کے دورئیل اسٹیٹ تاجرین کے کروڑہا روپئے مالیتی اثاثے ضبط

پرانے شہر کے دورئیل اسٹیٹ تاجرین کے کروڑہا روپئے مالیتی اثاثے ضبط

ٹولی چوکی، انجن باؤلی، شاستری پورم اور وجئے واڑہ میں انکم ٹیکس کے دھاوے۔ امپورٹیڈ کاریں، شیئرس اور بے نامی جائیدادوں کا انکشاف
۔11خصوصی ٹیموں کی مکانات، دفاتر اور شادی خانوں پر بیک وقت کارروائی ،آج تحقیقاتی عہدیداروں کے روبرو پیش ہونے کی ہدایت ، کئی سیاسی قائدین بوکھلاہٹ کا شکار

 

حیدرآباد۔ 25 اکتوبر (سیاست نیوز) محکمہ انکم ٹیکس نے آج پرانے شہر کے دو بڑے رئیل اسٹیٹ تاجرین کے مکانات و دفاتر پر بیک وقت دھاوے کرتے ہوئے کروڑہا روپئے مالیتی جائیدادوں کی دستاویزات، قیمتی امپورٹیڈ کاریں اور مختلف کمپنیوں کے شیئرس برآمد کرلئے۔رات دیر گئے تک یہ دھاوے جاری رہے ۔ذرائع کے بموجب انکم ٹیکس انوسٹی گیشن ونگ کی 11 خصوصی ٹیموں نے اسسٹنٹ ڈائریکٹر مسٹر شاکر حسین کی زیرقیادت علاقہ شاستری پورم، انجن باؤلی اور ٹولی چوکی میں مشہور رئیل اسٹیٹ تاجرین کے دفاتر، شادی خانوں اور مکانات پر بیک وقت حیدرآباد اور وجئے واڑہ میں دھاوے کئے جانے کی اطلاع ہے۔باوثوق ذرائع نے بتایا کہ یہ رئیل اسٹیٹ تاجرین بے نامی جائیدادیں رکھنے کیلئے مشہور اور قیادت کے بااعتماد اور قریبی سمجھے جاتے ہیں۔ ایک تاجر ایسے قائدین جو قومی سطح کے نیوز چیانلس کی زینت بنے ہوئے ہیں اور ہندوستانی مسلمانوں کے چہرے کے طور پر نیشنل چیانلس پر پیش ہوتے ہیں، ان کا دست ِراست ہے۔ ذرائع نے بتایا کہ شاستری پورم کے رئیل اسٹیٹ تاجر کے دفاتر اور شادی خانوں پر دھاوؤں کے دوران کروڑہا روپئے مالیتی جائیدادوں اور اراضیات کی دستاویزات انکم ٹیکس عہدیداروں کے ہاتھ لگی ہیں۔ ابتدائی تحقیقات میں محکمہ انکم ٹیکس کے عہدیداروں نے یہ پتہ لگایا ہے کہ مذکورہ دونوں رئیل اسٹیٹ تاجرین نے بڑے پیمانے پر غیرمحسوب اثاثہ جات بنائی ہے۔ انکم ٹیکس عہدیدار کو شبہ ہے کہ شاستری پورم کے تاجر ،کئی سیاسی قائدین اور قیادت کے بے نامی جائیدادوں کا رکھوالا ہے۔ انکم ٹیکس ڈپارٹمنٹ کی جانب سے اچانک کارروائی میں قائدین کو بھی بوکھلاہٹ میں مبتلا کردیا ہے چونکہ انکم ٹیکس ڈپارٹمنٹ نے مذکورہ تاجر پر گزشتہ چند ماہ سے قریبی نظر رکھی تھی کیونکہ کئی ایمپورٹیڈ اور قیمتی کارس شاستری پورم میں واقع اس کے مکان میں پائی گئی تھیں۔ واضح رہے کہ آج صبح یہ دھاوؤں کا اچانک آغاز ہوا اور رات دیر گئے تک بھی یہ دھاوے جاری رہے۔ محکمہ انکم ٹیکس کے دھاوؤں میں یہ بات منظر عام پر آنے کی اطلاع ہے کہ ان لوگوں نے مختلف کمپنیوں کے شیئرس بھی خریدے تھے اور وجئے واڑہ سٹی میں بھی کئی بے نامی جائیدادیں ان کے نام ہیں۔ ٹولی چوکی کے ایک مشہور رئیل اسٹیٹ تاجر جس کا تعلق بھی کئی سیاسی قائدین سے بتایا جاتا ہے ، نے بھی شہر کے اطراف و اکناف علاقوں میں کئی بے نامی جائیدادیں حاصل کی ہیں اور ان کی دستاویزات انکم ٹیکس عہدیداروں نے ضبط کرکے اپنے ساتھ لے گئے۔ دھاوؤں کے بعد ان تاجروں کے ارکان خاندان نے قیادت سے مدد کیلئے ربط پیدا کرنے کی کوشش کی لیکن انہیں مایوسی ہاتھ آئی۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ دو رئیل اسٹیٹ تاجرین کو انکم ٹیکس عہدیداروں کو نوٹس جاری کیا ہے اور انہیں کل صبح آئیکر بھون واقع بشیرباغ میں تحقیقاتی عہدیداروں کے روبرو پیش ہونے کا حکم دیا ہے۔ انکم ٹیکس کے اچانک دھاوؤں کی اطلاع عام ہوتے ہی قائدین کو ان کے حامیوں نے مسلسل فون پر انکم ٹیکس عہدیداروں کی نقل و حرکت کی اطلاع دیتے رہے اور عہدیداروں کی بعض گاڑیوں شاستری پورم ہلز کی سمت جانے پر تشویش کا اظہار کرنے لگے۔

TOPPOPULARRECENT