Monday , November 19 2018
Home / شہر کی خبریں / پرانے شہر کے متعدد مقامات پر آوارہ کتوں کی کثرت

پرانے شہر کے متعدد مقامات پر آوارہ کتوں کی کثرت

شہریوں کی آمد و رفت مشکل ، بلدیہ سے فوری توجہ دینے کی ضرورت
حیدرآباد۔5اپریل(سیاست نیوز) شہر حیدرآباد میں آوارہ کتوں کی کثرت سے شہریو ںبالخصوص رات کے اوقات سڑکوں سے گذرنے والے راہگیروں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے اور کئی مقامات پر آوارہ کتوں کی کثرت کے سبب حادثات پیش آرہے ہیں ۔ حیدرآباد کے علاوہ سکندرآباد کے کئی رہائشی علاقوں کے علاوہ انر رنگ روڈ پر کتوں کی کثرت کے سبب نہ صرف موٹر سیکل سواروں کو تکالیف کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے بلکہ موٹرکاروں میں گذرنے والوں کو بھی ان آوارہ کتوں کی وجہ سے اچانک گاڑیوں کو روکنا پڑرہا ہے جس کے سبب حادثات پیش آنے لگے ہیں۔ موسم گرما کے دوران آوارہ کتوں کے ذہنی توازن بگڑ جانے کے سبب کتے پاگل ہونے کی شکایات میں بھی اضافہ ہوتا ہے اسی لئے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے متعلقہ شعبہ کو حفظان صحت اور شہریوں کو حادثات سے پاک ماحول کی فراہمی کیلئے آوارہ کتوں کو پکڑنے کی خصوصی مہم شروع کرنی چاہئے ۔گذشتہ دو برسوں کے دوران پرانے شہر کے علاقوں بندلہ گوڑہ ‘ فلک نما‘ ہاشم آباد‘ اسمعیل نگر‘ راجیو گاندھی نگر کے علاوہ دیگر علاقو ںمیں پاگل کتوں کا قہر دیکھا گیا ہے اور موسم گرما کے دوران بندلہ گوڑہ اور ہاشم آباد کے علاقوں میں آوارہ کتوں کی کثرت کی متعدد شکایات کے باوجود جی ایچ ایم سی کی لاپرواہی کے سبب ایک علاقہ میں کتے کے کاٹنے کے سبب 16 معصوم بچوں کو دواخانہ سے رجوع کرنا پڑا تھا اسی لئے مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے متعلقہ شعبہ کے عہدیداروں کو چاہئے کہ وہ موسم گرما کے شدت اختیار کرنے اور شہریوں کے کتوں کے کاٹنے کا انتظار کئے بغیر فوری حرکت میں آتے ہوئے ان آوارہ کتوں کو گرفت میں لینے کا عمل شروع کرے ۔ بندلہ گوڑہ اور فلک نما کے علاقوں میں رات کے وقت آوارہ کتوںکے خوف نے لوگوں میں دہشت پیدا کر رکھی ہے کیونکہ رات دیرگئے تقاریب میں شرکت کے بعد واپس ہونے والوں پر کتوں کے غول حملہ کردیتے ہیں اور اس اچانک حملہ سے کئی لوگ خوف کے عالم میں نہ صرف گاڑی سے گر پڑتے ہیں بلکہ بسا اوقات بڑے حادثہ کا شکار ہونے لگتے ہیں۔ شہریوں کو حادثات اور کتے کے کاٹنے سے ہونے والی بیماریوں سے محفوظ رکھنے لئے بلدی حدود کے تمام زونس میں یکساں مہم چلانے کی ضرورت ہے کیونکہ آوارہ کتوں کی کثرت کا مسئلہ شہر کے کسی ایک علاقہ کا مسئلہ نہیںرہا بلکہ اس مسئلہ سے نمٹنے کے لئے جی ایچ ایم سی کے ہر زون میں عملہ کو متحرک کرنے کی ضرورت ہے۔

TOPPOPULARRECENT