Tuesday , February 20 2018
Home / شہر کی خبریں / پرسنل لا بورڈ کے مختلف امور کا جائزہ

پرسنل لا بورڈ کے مختلف امور کا جائزہ

دوسرے دن دو علیحدہ سشن ۔ کولکتہ اجلاس کی قرار دادوں کی توثیق
حیدرآباد۔10فروری (سیاست نیوز) شہر میں جاری کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ کے اجلاس کے دوسرے دن دو علحدہ سیشن منعقد ہوئے جس میں بورڈ کے مختلف امورکا جائزہ لیا گیا۔ پہلے سیشن کے دوران صدارتی خطبہ‘ جنرل سیکریٹری کی رپورٹ کے علاوہ بورڈ کی جانب سے انجام دی جانے والی سرگرمیوں کی تفصیلات سے واقف کروایا گیا اور کولکتہ میں ہوئے اجلاس کی قرار دادوں کی توثیق کی گئی ۔ مولانا سید محمد رابع حسنی ندوی صدر کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ کی زیر صدارت جاری اس اجلاس کے پہلے سیشن کے بعد شام میں دوسرا سیشن منعقد کیا گیا وار اس سیشن کے دوران بورڈ کی مالی صورتحال ‘ خازن کی رپورٹ‘ اور سالانہ بجٹ پیش کرتے ہوئے اسے منظور کیا گیا۔ اس کے علاوہ اس سیشن میں بورڈ کے مالی استحکام اور قانونی معاملات کے اخراجات کا جائزہ لینے کے لئے مختلف تدابیر پر غور و خوص کیا گیا۔ اراکین بورڈ کے اجلاس کے دوران سرگرم اراکین اور مدعوین کو اس بات کی ترغیب دی گئی کہ وہ بورڈ کی جانب سے تشکیل دی گئی مختلف کمیٹیوں کی کارکردگی کو بہتر بنانے میں سرگرم کردار ادا کریں۔ سیشن کے آخری حصہ میں کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ کی جانب سے قائم کی گئی مختلف کمیٹیوں کی رپورٹ پیش کی گئی اور اس پر تبادلہ ٔ خیال کیا گیا۔ بتایا جاتاہے کہ سیشن کے آخر میں اصلاح معاشرہ کمیٹی ‘ دارالقضاء کمیٹی ‘ تفہیم شریعت کمیٹی ‘بابری مسجد کمیٹی‘ قانونی کمیٹی مجموعہ قوانین اسلامی کمیٹی ‘ آثار قدیمہ کمیٹی اور خواتین ونگ کی سرگرمیوں کی مفصل رپورٹ پیش کی گئی ۔ بتایاجاتاہے کہ اس سیشن کے دوران ان کمیٹیوں کو مزید کارکرد وفعال بنانے کے علاوہ زیادہ سے زیادہ عوام سے رجوع کرنے کے قابل بنانے کے لئیہ تجاویز و تدابیر حاصل کی گئیں اور ان امور پر سنجیدہ غور کرنے کا تیقن دیا گیا ۔ کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ کے اجلاس کی دوسری نشست میں موجود سرگرم ارکان نے موجودہ کمیٹیوں کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کمیٹیوں کی کارکردگی کے دائرہ کار کو مزید وسعت دینے کے اقدامات کئے جانے چاہئے ۔ کل ہند مسلم پرسنل لاء بورڈ کے ارکان کے اس اجلاس میں بورڈ کے مالی موقف کو مستحکم کرنے کے لئے بھی مختلف تجاویز پیش کی گئیں اوران تجاویز پر عمل آوری کے ذریعہ بورڈ کی کارکردگی کو بہتر بنانے پر غور کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ بابری مسجد کمیٹی اور قانونی کمیٹی نے بورڈ کی جانب سے جاری مقدمات میں قانونی مصارف کے سلسلہ میں تخمینہ پیش کیا جسے بورڈ کی جانب سے سالانہ بجٹ کے حصہ کے طور پر منظور کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT