Tuesday , December 18 2018

پروفیسر ایس اے شکور اقلیتی مالیاتی کارپوریشن کے منیجنگ ڈائرکٹر و وائس چیرمین مقرر

حیدرآباد۔/18جنوری، ( سیاست نیوز) حکومت نے پروفیسر ایس اے شکور ڈائرکٹر سکریٹری اردو اکیڈیمی کو نائب صدر نشین و منیجنگ ڈائرکٹر آندھرا پردیش ریاستی اقلیتی مالیاتی کارپوریشن مقرر کیا ہے۔ اس سلسلہ میں اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے آج احکامات جاری کئے۔ پروفیسر ایس اے شکور نے احکامات کی اجرائی کے بعد نئی ذمہ داری سنبھال لی

حیدرآباد۔/18جنوری، ( سیاست نیوز) حکومت نے پروفیسر ایس اے شکور ڈائرکٹر سکریٹری اردو اکیڈیمی کو نائب صدر نشین و منیجنگ ڈائرکٹر آندھرا پردیش ریاستی اقلیتی مالیاتی کارپوریشن مقرر کیا ہے۔ اس سلسلہ میں اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل نے آج احکامات جاری کئے۔ پروفیسر ایس اے شکور نے احکامات کی اجرائی کے بعد نئی ذمہ داری سنبھال لی ہے۔ حکومت نے اقلیتی فینانس کارپوریشن کی کارکردگی کو بہتر بنانے اور اسکیمات پر موثر عمل آوری کیلئے پروفیسر ایس اے شکور کو اس عہدہ کی مکمل اختیارات کے ساتھ زاید ذمہ داری دی ہے۔ جبکہ اس عہدہ پر موجود محمد ہاشم شریف اسپیشل گریڈ ڈپٹی کلکٹر لینڈ ایکویزیشن وشاکھاپٹنم کی خدمات محکمہ مال کو واپس کردی گئی ہیں۔

واضح رہے کہ محمد ہاشم شریف کی خدمات محکمہ مال سے 9اکٹوبر 2013ء کو حاصل کی گئی تھیں اور 15اکٹوبر 2013ء کو انہیں ڈپوٹیشن پر ایک سال کی مدت کیلئے منیجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن مقرر کیا گیا تھا۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن کی اسکیمات پر عمل آوری میں تاخیر کے سبب حکومت محمد ہاشم شریف کی خدمات سے مطمئن نہیں تھی اور کمشنر اقلیتی بہبود نے اس سلسلہ میں حکومت کو مکتوب روانہ کرتے ہوئے اس عہدہ پر کسی موزوں عہدیدار کے تقرر کی سفارش کی تھی۔ پروفیسر ایس اے شکور نئے احکامات کی اجرائی تک اس عہدہ پر برقرار رہیں گے۔ واضح رہے کہ پروفیسر ایس اے شکور فی الوقت پہلے ہی سے تین اہم ذمہ داریاں بحسن و خوبی انجام دے رہے ہیں۔ سکریٹری؍ ڈائرکٹر اردو اکیڈیمی کے علاوہ وہ سنٹر فار ایجوکیشنل ڈیولپمنٹ آف میناریٹیز عثمانیہ یونیورسٹی کے ڈائرکٹر اور حج کمیٹی کے اسپیشل آفیسر کے عہدہ پر فائز ہیں۔ ان تینوں اداروں میں ان کی نمایاں خدمات کو دیکھتے ہوئے حکومت نے اقلیتی فینانس کارپوریشن کی اسکیمات پر عمل آوری کیلئے انہیں یہ ذمہ داری دی ہے۔ اقلیتی اداروں میں جاریہ مالیاتی سال حکومت کی جانب سے بجٹ کی اجرائی اور اس کے خرچ کے سلسلہ میں اقلیتی مالیاتی کارپوریشن کی کارکردگی سب سے ناقص رہی ہے جس پر مختلف گوشوں سے حکومت کو تنقیدوں کا سامنا تھا۔

TOPPOPULARRECENT