Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / پروفیسر کانچہ ایلیا کی ضمانت منظور ، عدالت کے باہر کشیدگی

پروفیسر کانچہ ایلیا کی ضمانت منظور ، عدالت کے باہر کشیدگی

بی جے پی اور ویشیا سنگم کی نعرہ بازی ، کانچہ ایلیا پر جوتا پھینکا گیا

حیدرآباد۔ 23 نومبر (این ایس ایس) پروفیسر کانچہ ایلیا نے بی جے پی پر الزام عائد کیا کہ وہ آریہ ۔ ویشیاکے ساتھ حملوں کا نشانہ بنا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی سی ، ایس سی اور ایس ٹی کے ساتھ ناانصافی پر بی جے پی نے کبھی آواز نہیں اٹھائی ۔ آج یہاں ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ بی جے پی سے تعلق رکھنے والے رائٹرس اب عوام ، دلت اور قبائیلیوں کے مسائل پر کتابیں نہیں تحریر کررہے ہیں۔ انہوں نے بی جے پی پر انسانی مساوات کے خلاف کام کرنے کا الزام بھی عائد کیا۔ کورٹلہ میں جس وقت وہ میڈیا سے بات کررہے تھے ، بی جے پی کارکنوں نے نعرہ بازی کرتے ہوئے ان پر حملہ کرنے کی کوشش کی۔ پروفیسر کانچہ ایلیا نے متنازعہ کتاب کے سلسلے میں بی جے پی لیڈر جگن کی جانب سے دائر کردہ مقدمہ کے سلسلے میں ضلع جگتیال کے کورٹلہ کورٹ میں پیش ہوئے۔ اس موقع پر ارویشیا سنگم، بی جے پی کارکنوں نے ہنگامہ آرائی کی اور ہاتھا پائی کی نوبت تک آگئی تھی۔ ارویشیا سنگم سے وابستہ ایک نوجوان نے کانچہ ایلیا پر جوتا پھینکا جو ایک ایڈوکیٹ کو جا لگا۔ اس حملے کے خلاف کانچہ ایلیا کے حامیوں نے نندی چوک کے قریب دھرنا منظم کیا۔ کورٹلہ کورٹ کے جج نے کانچہ ایلیا کی ضمانت منظور کرتے ہوئے مقدمہ کی سماعت 27 ڈسمبر تک ملتوی کردی۔ کانچہ ایلیا عدالت کے باہر جب میڈیا سے بات کررہے تھے ، اس وقت ارویشیا سنگم اور بی جے پی کارکن نعرے بازی کررہے تھے تو دوسری طرف کانچہ ایلیا کے حامیوں نے جوابی نعرہ بازی کی اور صورتحال کشیدہ ہوگئی تھی۔ پولیس نے فوری مداخلت کرتے ہوئے دو گروپس کو منتشر کردیا۔ پروفیسر کانچہ ایلیا پر پھینکا گیا جوتا ایڈوکیٹ کانتی موہن کو جا لگا جس پر برہم ہوکر انہوں نے جوتا پھینکنے والے نوجوان ناگابھوشن کی پٹائی کردی جس کے بعد کشیدگی بڑھ گئی ۔

TOPPOPULARRECENT