Tuesday , April 24 2018
Home / Top Stories / پندرہ سال بعد فوج کا قبضہ برخواست ‘ لال قلعہ کے اسدبرج کو عوام کے لئے کھولنے کی تیاری

پندرہ سال بعد فوج کا قبضہ برخواست ‘ لال قلعہ کے اسدبرج کو عوام کے لئے کھولنے کی تیاری

این کے پاٹھک‘ سپریڈنٹگ آرکیالوجسٹ اے ایس ائی( دہلی سرکل)نے کہاکہ’’ اسد برج لال قلعہ کے اندر واقعہ ایک ٹاؤر ہے‘ جس پر آزادی کے بعد سے لیکر 2003تک فوج کا قبضہ تھا۔ ہم نے قلعہ کے کچھ حصہ کی تزین نو کا کام کیا۔ اگست اورستمبر تک یہ عوام کے لئے تیار کردیاجائے گا‘‘
نئی دہلی۔

اب تک عوام کی رسائی سے دور لال قلعہ کا وہ حصہ‘ جس کا احیاء آرکیالوجیکل سروے آف انڈیا( اے ایس ائی)نے عمل میں لایاہے او ریہ بہت جلد منفرد لال قلعہ کا حصہ بن جائے گا جس کولال قلعہ کامشاہدہ کرنے کے لئے آنے والے سیاحوں کے لئے بہت جلد کھول دیاجائے گا۔ل

ال قلعہ میں تزئن نو کا کام جاری ہے اور اگست تک یہ سلسلہ برقرار رہے گا ‘ اسد برج جس کو مغل حکمران شاہجہاں نے تعمیر کیاتھا‘ یہاں پر 2003سے فوج کا قبضہ تھا‘ اور بہت جلد اس کو عوام کے لئے کھول دیاجائے گا۔این کے پاٹھک‘ سپریڈنٹگ آرکیالوجسٹ اے ایس ائی( دہلی سرکل)نے کہاکہ’’ اسد برج لال قلعہ کے اندر واقعہ ایک ٹاؤر ہے‘ جس پر آزادی کے بعد سے لیکر 2003تک فوج کا قبضہ تھا۔ ہم نے قلعہ کے کچھ حصہ کی تزین نو کا کام کیا۔

اگست اورستمبر تک یہ عوام کے لئے تیار کردیاجائے گا‘‘

دیوان خاص پر مشتمل سفید مربل کا فرش جہاں پر شاہجہاں دنیابھر سے آنے والے ممالک کے لوگوں سے ملاقات کیا کرتے تھے کی بھی سائنٹفیک صفائی کی جارہی ہے۔پاٹھک نے کہاکہ ’’ملتانی مٹی کی تکنیک کو سفید مربل کی صفائی کے لئے استعمال کیاجارہا ہے۔

مارچ31تک چھت کی مرمت کا بھی کام مکمل کرلیاجائے گا‘‘۔فرانس کے ٹریویلر فرانکوس بیرنیر کے ریکارڈ کے مطابق یہاں پر خوبصورت مور کا بسیرا تھا ‘جس کا ذکر بیرنیر نے ’ٹراویلس ان دی مغل ایمپریر اے ڈی 1656-1668‘ میں کیاہے۔

اس طرح کی تزئن نو کا کام موتی مسجد ‘ جس کی تعمیر مغل بادشاہ اورنگ زیب عالمگیر نے کی تھی‘ خاص محل جو کہ خانگی عبادت گاہ تھی ‘اور آرام گاہ ‘ دونشستیں ساون بھادوپر بھی کیاجارہا ہے۔شاہجہاں نے جب آگرہ سے اپنا تخت دہلی کو منتقل کیاتو تو اس وقت لال قلعہ کی تعمیر کے لئے نوسال لگے۔

تاج محل کے چیف ارکٹیکٹ کی حیثیت سے مشہور استاد احمد لاہوری نے بھی لال قلعہ کی تعمیرمیں اہم رول ادا کیاتھا۔ نوبت خانہ اور ممتاز محل کی تزئن نو کے ساتھ وہاں پرموجودمیوز یم کو بی اول ‘ بی دوم کے طرز پر دوبارہ کھول دیاجائے گا‘ اور یہ دو عظیم شاہکار سال کے آخر تک عوام کے لئے کھول دئے جائیں گے۔نوبت خانہ پر پلاسٹک کیاکام کیاجارہا ہے تاکہ اس کو مضبوط بنایاجاسکے۔

اس کے علاوہ لال قلعہ کا مشاہدہ کرنے کے لئے آنے والوں کے واسطے بہترپینے کے پانی کی سہولت کے علاوہ ماڈرن واش روم کی تعمیر کے ذریعہ بنیادی سہولتوں کی فراہمی کو یقینی بنانے کاکام بھی کیاجارہا ہے۔پاٹھک کا کہنا ہے کہ ’’ سکیورٹی کے انتظامات کو موثر بنانے کے اقدامات بھی اٹھائے جارہے ہیں‘

TOPPOPULARRECENT