Tuesday , June 19 2018
Home / شہر کی خبریں / پورندیشوری راجم پیٹ سے بی جے پی کی امیدوار

پورندیشوری راجم پیٹ سے بی جے پی کی امیدوار

تلگودیشم کی اعلیٰ قیادت کے اصرار پر حلقہ وشاکھاپٹنم سے محرومی

تلگودیشم کی اعلیٰ قیادت کے اصرار پر حلقہ وشاکھاپٹنم سے محرومی
نئی دہلی۔/16اپریل، ( پی ٹی آئی) سابق مرکزی وزیر ڈی پورندیشوری جو مسئلہ تلنگانہ پر کانگریس سے مستعفی ہوکر بی جے پی میں شامل ہوگئی تھیں انہیں بی جے پی نے آج ان کے قدیم حلقہ لوک سبھا وشاکھاپٹنم سے راجم پیٹ کو منتقل کردیا جہاں سے وہ انتخابی مقابلہ کریں گی۔آندھرا پردیش کے سابق چیف منسٹر اور تلگودیشم کے بانی این ٹی راما راؤ کی دختر ڈی پورندیشوری وشاکھاپٹنم کی موجودہ رکن پارلیمنٹ ہیں اور وہ اس حلقہ سے دوبارہ ٹکٹ دینے کی شرط پر بی جے پی میں شامل ہوئی تھیں۔ بی جے پی کی مرکزی الیکشن کمیٹی نے وشاکھاپٹنم سے اپنی آندھرا پردیش یونٹ کے صدر کے ہری بابو کو ٹکٹ دینے کا فیصلہ کیا ہے اور یہ اعلان کیا کہ

پورندیشوری حلقہ لوک سبھا راجم پیٹ سے مقابلہ کریں گی۔ ذرائع نے کہا کہ تلنگانہ اور آندھرا پردیش میں تلگودیشم سے بی جے پی کی مفاہمت نے اس پارٹی کو پورندیشوری کا حلقہ تبدیل کرنے پر مجبور کیا ہے کیونکہ تلگودیشم کی اعلیٰ قیادت نے ان ( پورندیشوری ) کی امیدواری کی سخت مخالفت کی تھی۔ تلگودیشم پارٹی کے صدر این چندرا بابو نائیڈو جو این ٹی راما راؤ کے داماد ہیں اور پورندیشوری کی بہن کے شوہر ہیں ۔این چندرا بابو نائیڈو اور پورندیشوری ایک دوسرے کے کٹر سیاسی حریف ہیں۔ پورندیشوری کے حلقہ میں تبدیلی کے ایک سوال پر بی جے پی کے ایک لیڈر نے طنزیہ انداز میں برجستہ جواب دیا کہ ’’ یہ دونوں بہنوں کے درمیان کا معاملہ ہے۔‘‘ قبل ازیں یہ قیاس آرائیاں کی جارہی تھیں کہ پورندیشوری کو ٹکٹ دینے سے انکار کردیا جائے گا لیکن بی جے پی نے انہیں حلقہ لوک سبھا راجم پیٹ سے ٹکٹ دینے کا اعلان کیا۔

TOPPOPULARRECENT