Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / پولیس ایکشن سے تلنگانہ کے مسلمانوں کا زوال

پولیس ایکشن سے تلنگانہ کے مسلمانوں کا زوال

حیدرآباد ۔10 اگست (سیاست نیوز) جناب ظہیر الدین علی خان نے ایس سی‘ ایس ٹی‘ بی سی‘ مسلم فرنٹ کی عید میلاپ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ تلنگانہ کے مسلمانوں کے زوال کا سبب پولیس ایکشن ہے۔انہو ںنے کہاکہ پولیس ایکشن کے ذریعہ حکمران طبقے کو پسماندہ بنانے کی کوئی کسر باقی نہیںرکھی گئی ۔ انہوں نے مزیدکہاکہ پولیس ایکشن کے بعد پسماندہ طبقا

حیدرآباد ۔10 اگست (سیاست نیوز) جناب ظہیر الدین علی خان نے ایس سی‘ ایس ٹی‘ بی سی‘ مسلم فرنٹ کی عید میلاپ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ تلنگانہ کے مسلمانوں کے زوال کا سبب پولیس ایکشن ہے۔انہو ںنے کہاکہ پولیس ایکشن کے ذریعہ حکمران طبقے کو پسماندہ بنانے کی کوئی کسر باقی نہیںرکھی گئی ۔ انہوں نے مزیدکہاکہ پولیس ایکشن کے بعد پسماندہ طبقات اور تلنگانہ کے مسلمانو ںکے اتحاد کو بھی ختم کرنے کے لئے نت نئی سازشوں کا سہارا لیاگیا۔فرقہ پرستی کو بنیاد بناکر مفاد پرست سیاسی قائدین نے ناصرف تلنگانہ کے مسلمانوں کو معاشی طور پر کمزور بنایا بلکہ تلنگانہ کے دیگر پسماندہ طبقات کے ساتھ امتیاز برتنے کے سلسلے کوجاری رکھا۔انہوں نے کہاکہ سلطنت آصفیہ کا زوال ‘ پولیس ایکشن اور پھر متحدہ ریاست آندھرا پردیش کا قیام ریاست تلنگانہ کے مسلمانوں کیساتھ دیگر پسماندہ طبقات کے بھی زوال کا سبب بنا۔ ساٹھ سالوں میں90فیصد کے قریب ریاست کی مجموعی آبادی کاتناسب رکھنے کے باوجود مسلمان اور ایس سی‘ ایس ٹی‘ بی سی ایک پلیٹ فارم پر جمع ہونے سے قاصر ہیں جبکہ متحدہ ریاست آندھرا پردیش ہو یا پھر علیحدہ ریاست تلنگانہ دونوں ہی صورتوں میںدس فیصد سے کم آبادی والے طبقات کی تمام شعبہ حیات میںغیر معمولی اجارہ داری پسماندگی کاشکار تلنگانہ کی عوام کی پریشانیوںمیں مزید اضافے کا ہی سبب بنی ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ آصف جاہی دور میں یقینا مسلمان خوشحال زندگی گذاررہے تھے اور سیاسی طور پر بھی کافی طاقت ور ہونے کے باوجود مسلم حکمرانوں نے فرقہ وارانہ ہم اہنگی اور ریاست کے تمام طبقات کی یکساں ترقی کو ملحوظ رکھتے ہوئے حکمرانی کی۔آصف جاہی دور کے زوال پذیر ہونے کے بعدتلنگانہ کے سیاسی حالات یکسر تبدیل ہوگئے۔ انہوں نے مزید کہاکہ خواہ وہ مسلم قیادتیں ہوں یا پھر پسماندہ طبقات سے تعلق رکھنے والے قائدین ہوں اپنی قوم اور طبقات کی فلاح وبہبود کے بجائے اپنے ذاتی مفادات کو ترجیح دینے کاکام کرتے آرہے ہیں۔ تلنگانہ ریاست کی تشکیل سے قبل تلنگانہ کے ہی قائدین دیوار کی بلی کا رول ادا کررہے تھے۔ انہوں نے کہاکہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل کے بعد آنے والی بڑی تبدیلی نے دوبارہ تلنگانہ کے حالات کو بدل کر رکھ دیا۔ انہوں نے کہاکہ پسماندہ طبقات کے اتحاد نے ہندوستان کی کئی ریاستوں میں انقلابی تبدیلی رونما ہوئی سوائے ریاست تلنگانہ کے۔ انہوں نے کہاکہ تلنگانہ کے نوے فیصد پسماندہ طبقات متحد ہوجائیں تو یقینی طور پر تلنگانہ میںبھی ایک نیا سیاسی انقلاب برپا ہوگا جس کی مثالیںساری دنیا میں پیش کی جائیں گی۔ انہو ںنے کہاکہ اسرائیلی جارحیت کا شکار اٹھارہ سو معصوم بچوں کی شہادت نے جہاں پر دنیا کو لرزہ برندام کردیا ہے وہیںپر فلسطین کے عوام سوپر پاور کے حملوں سے خائف ہوئے بغیر اپنے حق کے لئے اپنی قیمتی زندگیوں کو قربانی کرنے کے لئے آج بھی تیار ہیں۔ انہوں نے اپنے حقوق کے لئے جدوجہد کرنے والے کو حقیقی مجاہد قراردیا اور کہاکہ معصوم فلسطینیوں کی قربانیاں کبھی رائیگاں نہیںجائیںگی۔انقلابی گلوکار غدر نے کہاکہ فرنٹ کے نظریات کی ستائش کرتے ہوئے کہاکہ مذکورہ عنوان میںترمیم کی ضرورت ہے ۔مسلمانوں کے ساتھ ملکر پسماندہ طبقات کو نئی ریاست تلنگانہ میںایک نئی سیاسی حکمت عملی بنانے کی ضرورت ہے۔ تلنگانہ میں تمام پسماندہ طبقات کو ایک پلیٹ فارم پر جمع کرنے کے لئے سرگرمی شروع کرنے کا اس موقع پر اعلان کرتے ہوئے فرنٹ کے ذمہ داران سے اپیل کی کہ وہ عملی سیاست کا حصہ بنیں۔ انہوں نے مزیدکہاکہ ایس سی‘ ایس ٹی‘ بی سی ‘ مسلم فرنٹ کے لئے نئی ریاست تلنگانہ میںمجوزہ بلدی انتخابات ایک سنہری موقع ہے ۔ اس موقع سے استفادہ اٹھاتے ہوئے فرنٹ کو بلدی انتخابات میںاپنے امیدواروں کو میدان میںاتارنے کی اپیل کی۔ انہوں نے کہاکہ جب تک مسلمان اور دیگر پسماندہ طبقات سیاسی طور پر ایک طاقت بن کر نہیںابھریں گے تب تک ان کا کوئی پرسان حال نہیںہوگا۔ کنونیرفرنٹ حیات حسین حبیب نے شکریہ ادا کیا۔ انہو ں نے کہاکہ نئی ریاست تلنگانہ میںپسماندہ طبقات کو متحد کرنے کے لئے فرنٹ کی جانب سے کی جارہی کوششوں کی کامیابی پسماندہ طبقات کے لوگوں کی فرنٹ سے وابستگی پر منحصر ہے ۔ٹی آر ایس اسٹیٹ جنرل سکریٹری میرعنایت علی باقری‘ کنونیر فرنٹ مسٹر جے بی راجو‘ پریم کمار‘ انور پٹیل کے علاوہ مہمان مقررین مہیشور‘ کمارا سوامی کے علاوہ دیگر نے ایس سی ‘ ایس ٹی‘ بی سی‘ مسلم فرنٹ نظریات کی ستائش کی ۔چیف کنونیر فرنٹ ثناء اللہ خان نے تقریب کی کاروائی چلائی اورشکریہ کے فرائض کنونیر فرنٹ ساجد خان نے انجام دئے۔ تلنگانہ کے معروف کامیڈین اشوک نے تلنگانہ اور آندھرا کے مختلف قائدین کی ممکری کے ذریعہ مہمانوں کو لطف اندوز کیا۔

TOPPOPULARRECENT