Monday , December 18 2017
Home / Top Stories / پیرس میں بم دھماکے اور فائرنگ تمام انسانیت پر حملہ کے مترادف : عالمی قائدین

پیرس میں بم دھماکے اور فائرنگ تمام انسانیت پر حملہ کے مترادف : عالمی قائدین

صدر فرانس سے صدر امریکہ براک اوباما کی فون پر بات چیت ، ہر طرح کی مدد کرنے کی پیشکش ، جان کیری ، بان کی مون ، صدر ایران کا اظہار مذمت
واشنگٹن ۔ 14 نومبر۔(سیاست ڈاٹ کام) پیرس میں سلسلہ وار بم دھماکوں اور اندھا دھند فائرنگ کی لہر پر عالمی قائدین نے شدید برہمی ، غم و غصہ کا اظہار کیا ۔ صدر امریکہ براک اوباما نے ان حملوںکی شدید مذمت کرتے ہوئے عالمی قائدین کی قیادت کی اور کہا کہ یہ حملہ انسانیت پر حملے کے مترادف ہے ۔تمام قائدین نے اس نازک گھڑی میں فرانس کے ساتھ اظہاریگانگت کیا اور مہلوکین کے رشتہ داروں سے اظہارتعزیت کیا ۔صدر اوباما نے صدر فرانس کو فون کیا اور اس حملے میں بے گناہ شہریوں کی ہلاکت کو دہشت گردوں کی بزدلانہ کوشش قرار دیا ۔ انھوں نے عہد کیاکہ خاطیوں کو انصاف کے کٹہرے میں لانے کیلئے امریکہ اپنی جانب سے ہر ممکنہ مدد کرے گا ۔ انھوں نے ان حملوں کو دل دہلادینے والی صورتحال سے تعبیر کیا اور کہاکہ یہ حملہ تمام انسانیت پر حملہ ہے۔ انھوں نے اپنے فرانس کے ہم منصب فرانسیسی ہولینڈ سے ٹیلی فون پر بات چیت کی اور ان حملوں کی تحقیقات میں اپنی جانب سے مدد کی پیشکش کی ۔ امریکی سکریٹری آف اسٹیٹ جان کیری نے پیرس حملوں کو گھناؤنے ، شیطانیت اور دل سوز قرار دیا اور کہا کہ یہ حملے بلاشبہ ہمارے عام انسانوں پر حملے کے مترادف ہیں ۔ اقوام متحدہ سکریٹری جنرل بان کی مون اور سکیورٹی کونسل نے دہشت گرد حملوں کو بہیمانہ کارروائی قرار دیتے ہوئے مذمت کی ۔ بان کی مون نے کہا کہ انھیں پورا بھروسہ ہے کہ فرانس کے حکام اپنے پورے اختیارات اور طاقت کا استعمال کرتے ہوئے حملوں کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لاکھڑا کریں گے ۔ مہلوکین کے ارکان خاندان سے تعزیت کرتے ہوئے غم و صدمہ کا بھی اظہار کیا اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کیلئے نیک تمنائیں ظاہر کیں ۔ انھوں نے کہاکہ اس نازک گھڑی میں وہ حملوں کی تحقیقات کیلئے صدر فرانس کی کوششوں کے ساتھ وہ بھی شریک ہوں گے ۔

ایک علحدہ بیان میں سلامتی کونسل نے ان حملوں کی پرزور مذمت کی ۔ 15 رکنی عالمی ادارہ نے ان حملوں کو بربریت انگیز اور بزدلانہ دہشت گرد کارروائی قرار دیا ۔ جرمنی کی چانسلر انجیلا مرکل نے کہاکہ انھیں یہ خبر سن کر صدمہ ہوا ہے اور تصاویر دیکھنے کے بعد ان کا دل مغموم ہوگیا ۔ جرمنی کی لیڈر نے مزید کہا کہ ان کی تمام تر ہمدردیاں ان متاثرین کے لئے ہیں جو اس بظاہردہشت گرد حملوں میں ہلاک ہوئے ہیں۔ وزیراعظم برطانیہ ڈیوڈ کیمرون نے بھی کہا کہ انھیں پیرس حملوں اور تشدد سے شدید صدمہ ہوا ہے ۔ ہم ان تمام مہلوکین کے افراد خاندان سے اظہارتعمیر کرتے ہیں ۔ ہماری جانب سے جو کچھ مدد کرنا ہو اس میں پہل کریں گے ۔ چین نے بھی ان حملوں کی شدید مذمت کی اور کہا کہ یہ ایک خطرناک صدمہ خیز دہشت گرد حملہ تھا اس میں کئی افراد کی قیمتی جانیں ضائع ہوئی ہیں ۔ صدر ایران نے بھی حملوں کی مذمت کی اور کہاکہ جرائم کرنے والوں کو ہرگز بخشا نہیں جانا چاہئے ۔ عراق کے وزیراعظم حیدر العبادی نے پیرس میں بندوق اور بم حملوں کی مذمت کی جس میں زائد از 200افراد ہلاک ہوئے ہیں ۔ انھوں نے اپنے بیان میں کہا کہ ہم ان حملوں کی مذمت کرتے ہیں اور بین الاقوامی سطح پر زور دیتے ہیں کہ دہشت گردی کے خلاف مقابلہ کرنے کیلئے پوری دنیا کو متحد ہوجانا چاہے ۔
پیرس حملوں پر جامعہ ازہر کے مفتی اعظم کا اظہار مذمت
قاہرہ ۔ 14 نومبر۔(سیاست ڈاٹ کام) سنی اسلامی سرکردہ یونیورسٹی قاہرہ کی جامعہ ازہر کے سربراہ مفتی اعظم نے آج پیرس حملوں کی شدید مذمت کی جس میں تقریباً 200 افراد ہلاک ہوئے ۔ انھوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ انتہاپسندی کے خلاف متحد ہوجائیں۔ ٹیلی ویژن پر نشر کردہ ان کے بیان میں بتایا گیا ہے کہ احمد الطیب نے ان نفرت انگیز حملوں کی مذمت کی ہے ۔ ایسے نازک وقت میں تمام دنیا کو متحد ہونے کی ضرورت ہے ۔

TOPPOPULARRECENT