Tuesday , September 25 2018
Home / سیاسیات / پی ڈی پی ۔ بی جے پی حکومت کے عنقریب میں سنگین نتائج

پی ڈی پی ۔ بی جے پی حکومت کے عنقریب میں سنگین نتائج

ممبئی 7 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) جموں و کشمیر میں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے ساتھ گٹھ جوڑ قائم کرنے پر بی جے پی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اس کی حلیف جماعت شیوسینا نے کہا ہے کہ زعفرانی پارٹی مفتی محمد سعید حکومت میں شامل ہوکر نہ صرف اپنی اُنگلیاں جلالی ہیں بلکہ پورے ملک کیلئے ایک امکانی خطرہ پیدا کردیا ہے۔ شیوسینا کے ترجمان ’سامنا‘ کے ا

ممبئی 7 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) جموں و کشمیر میں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے ساتھ گٹھ جوڑ قائم کرنے پر بی جے پی کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے اس کی حلیف جماعت شیوسینا نے کہا ہے کہ زعفرانی پارٹی مفتی محمد سعید حکومت میں شامل ہوکر نہ صرف اپنی اُنگلیاں جلالی ہیں بلکہ پورے ملک کیلئے ایک امکانی خطرہ پیدا کردیا ہے۔ شیوسینا کے ترجمان ’سامنا‘ کے اداریہ میں کہا گیا ہے کہ جموں و کشمیر میں پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے ساتھ تشکیل حکومت کا فیصلہ کرکے بی جے پی نے نہ صرف اپنے ہاتھ جلا لئے میں ایک ہماری نظر میں یہ اتحاد ہندوستان کیلئے مشکلات اور مسائل پیدا کرسکتی ہے۔ ترجمان نے وزیراعظم نریندر مودی کی حکومت سے مطالبہ کیاکہ پارلیمنٹ میںسعید کے بیان کی مذمت کریں جنھوں نے جموں و کشمیر میں پرامن اسمبلی انتخابات کا سہرا علیحدگی پسندوں اور پاکستان کے سر باندھا ہے جبکہ سعید نے جموں و کشمیر میں پرامن انتخابات کا کریڈٹ حریت اور سرحد پار کے لوگوں کو دے کر یہ ثابت کردیا ہے کہ وہ قوم پرست نہیں ہیں۔

سعید کی پارٹی نے یہ مطالبہ کیاکہ افضل گرو کی باقیات وادی کشمیر واپس لایا جائے یہ تنازعہ ختم بھی نہیں ہوا تھا کہ بی جے پی کے جنرل سکریٹری رام مادھو جنھوں نے تشکیل حکومت کیلئے سعید سے مذاکرات کئے تھے انھیں قوم دشمن بیانات سے باز رکھنے میں ناکام رہے۔ سامنا میں یہ الزام بھی عائد کیا گیا ہے کہ سابق میں سعید نے تقسیم کشمیر کے مطالبہ پر کوئی موقع نہیں چھوڑا، حتیٰ کہ پاکستانی عسکریت پسندوں کی رہائی کیلئے اپنی دختر کے اغواء کا ڈرامہ بھی کیا تھا اور گزشتہ چالیس پچاس سال کے دوران سعید نے ہمیشہ آزاد کشمیر کے حق میں آواز بلند کی ہے اور نیشنل فرنٹ حکومت میں جب سعید وزیرداخلہ تھے اُس وقت اپنی مغویہ دختر کے عوض پاکستانی عسکریت پسندوں کو رہا کردیا تھا۔ شیوسینا نے مزید کہاکہ اگر مفتی سعید متنازعہ بیانات دیتے رہیں گے تو ہندوستان کو اس کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی اور آرٹیکل 370 کو منسوخ کرنے کی اشد ضرورت ہے اور حکومت کو چاہئے کہ پارلیمنٹ میں یہ وضاحت کردی جائے کہ سعید کے بیانات سے اتفاق نہیں کیا جاتا۔

TOPPOPULARRECENT