Wednesday , December 19 2018

چارسارک ممالک کے مابین آمد و رفت کی سہولت

نئی دہلی 16 مارچ (سیاست ڈاٹ کام )ہندوستان‘ بنگلہ دیش ‘نیپال اور بھوٹان توقع ہے کہ بہت جلد ایک ایسے معاہدے پر عمل کریں گے جس سے ان چار سارک ممالک کے مابین مسافرین اور کارگو گاڑیوں کی بلا رکاوٹ آمد و رفت یقینی ہوگی۔ اس معاہدہ کو متعلقہ مقامی عہدیداروں کی منظوری کا انتظار ہے ۔ اس پر جاریہ سال کے اواخر میں عمل کیا جائے گا اور دیگر چار سار

نئی دہلی 16 مارچ (سیاست ڈاٹ کام )ہندوستان‘ بنگلہ دیش ‘نیپال اور بھوٹان توقع ہے کہ بہت جلد ایک ایسے معاہدے پر عمل کریں گے جس سے ان چار سارک ممالک کے مابین مسافرین اور کارگو گاڑیوں کی بلا رکاوٹ آمد و رفت یقینی ہوگی۔ اس معاہدہ کو متعلقہ مقامی عہدیداروں کی منظوری کا انتظار ہے ۔ اس پر جاریہ سال کے اواخر میں عمل کیا جائے گا اور دیگر چار سارک ممالک کیلئے بھی شمولیت کی گنجائش رکھی گئی ہے۔ ایک مرتبہ اس معاہدہ پر عمل آوری کے نتیجہ میں عوام اور اشیاء کو سرحدی کراسنگ پوائنٹس پر بار بار اتارنے یا انہیں دوبارہ سوار کرنے کی تکلیف نہیں ہوگی اس سے وقت اور لاگت کی بچت ہوگی۔ منسٹر آف اسٹیٹ روڈ ٹرانسپورٹ اینڈ ہائی ویز پی رادھا کرشنن نے آج راجیہ سبھا کو تحریری جواب میں یہ بات بتائی۔ انہوں نے کہا کہ ٹرانسپورٹ اور تجارت کو سرحدوں پر آسان بنانے ‘وقت کی بچت اور مالی فوائد کے مقصد سے یہ معاہدہ تیار کیاگیا ہے ۔ انہو ںنے کہا کہ اس معاہدہ کے نتیجہ میں چار ممالک کی معاشی راہداریوں کو فروغ ملے گا اور عوام سے عوام کا رابطہ بھی بڑھے گا ۔ رادھا کرشنن نے کہا کہ ہر ملک میں متعلقہ حکام کی جانب سے اسے منظوری کے بعد ہی عمل آوری یقینی بنائی جاسکتی ۔ گذشتہ ماہ چار ممالک کے سینئر عہدیداروں نے کولکتہ کے قریب رائے چک میں ملاقات کی تھی جہاں معاہدہ کو قطعیت دی گئی اور اس پر عاجلانہ عمل آوری کا منصوبہ تیار کیا گیا ۔ توقع ہے کہ جاریہ سال چار ممالک کے وزرائے ٹرانسپورٹ اجلاس میں اس معاہدہ پر دستخط کئے جائیں گے ۔ اس معاہدہ کے ذریعہ یورپی یونین کی طرز پر چار ممالک کے مابین ہر قسم کی گاڑیوں کی نقل و حرکت کی اجازت ہوگی ۔ سارک موٹر وہیکل معاہدے کو قطعیت اور اب تک کی پیشرفت کے بعد چار ممالک نے اس نئے معاہدہ کیلئے رضامندی ظاہر کی ۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT