چارمینار اور مکہ مسجد کے قریب ٹھیلہ بنڈیوں کی دوبارہ آمد

پیدل راہرو پراجکٹ کی تکمیل پر اجازت ، متبادلہ مقام فراہم کرنے کی تیاریاں جاری
حیدرآباد۔5اپریل (سیاست نیوز) چارمینار کے دامن میں موجود ٹھیلہ بنڈیوں کو چارمینار پیدل راہرو پراجکٹ کے تحت اس علاقہ سے منتقل کردیا گیا تھا لیکن اس کے بعد اب دوبارہ کچھ ٹھیلہ بنڈی راں چارمینار اور مکہ مسجد کے درمیان پہنچنے میں کامیاب ہوچکے ہیںجن کے متعلق محکمہ ٹریفک پولیس اور مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کے عہدیداروں کا کہناہے کہ انہیں تعمیری و ترقیاتی کاموں کی انجام دہی تک وہاں رہنے دیا جائے گا اور اس کے بعد انہیں وہاں سے منتقل کردیا جائے گا۔ جی ایچ ایم سی کی جانب سے ان ٹھیلہ بنڈی رانوں کو متبادل جگہ کی فراہمی کے اعلان کے بعد یہ کہا جا رہاتھا کہ انہیں چارمینار بس اسٹینڈ کے قریب جگہ کی فراہمی عمل میں لائی جائی گی لیکن ٹھیلہ بنڈی رانوں کی منتقلی کے عمل کے ساتھ ساتھ جی ایچ ایم سی کی جانب سے منصوبہ کے مطابق چارمینار بس اسٹینڈ کی جگہ پارکنگ کامپلکس کی تعمیر کے سلسلہ میں اقدامات شروع کردیئے گئے اور چارمینار بس اسٹینڈ کی عمارت کو منہدم کرنے کا عمل شروع کردیا گیا ۔ عمارت کی انہدامی کاروائی کو دیکھتے ہوئے اس جگہ پر ٹھیلہ بنڈی رانوں کی بازآبادکاری کو روک دیا گیا اور انہیں وہاں سے بھی بے دخل کرنے کے اقدامات کئے گئے جس پر ٹھیلہ بنڈی رانوں نے احتجاج بھی کیا اور مرحوم صدر مجلس کی تصاویر تھام کر قیادت کی توجہ اپنی جانب مبذول کروانے کی کوشش کی ۔ٹھیلہ بنڈی رانو ںکا کہناہے کہ چارمینار پیدل راہرو پراجکٹ کے آغاز سے قبل اس بات کا تیقن دیا گیا تھا کہ ان کی بازآبادکاری کے اقدامات کئے جائیں گے اور انہیں بے دخل کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی لیکن پراجکٹ کی تعمیراتی سرگرمیوں کے دوران انہیں بے دخل کردیا گیا اور اب انہیں جھوٹے دلاسے دیئے جا رہے ہیں ۔ ٹھیلہ بنڈی رانوں کی بے دخلی کے متعلق عہدیداروں کا کہنا ہے کہ مکمل تحقیقات کے بعد ہی ان ٹھیلہ بنڈی رانوں کو بے دخل کیا گیا ہے لیکن اس کے باوجود زائد از 150 ایسے نوجوانوں کو اس بے دخلی سے شدید معاشی نقصان ہوا ہے جو ان ٹھیلہ بنڈیوں پر ملازمت کیا کرتے تھے۔ بتایاجاتاہے کہ ٹھیلہ بنڈیوں کی چارمینار کے دامن سے منتقلی اور انہیں متبادل جگہ کی عدم فراہمی کے سبب 150 سے زائد نوجوان بے روزگار ہوئے ہیں اور انہیں متبادل روزگار حاصل ہونے کی کوئی توقع نہیں ہے ۔ بیروزگار ہونے والے ٹھیلہ بنڈی رانوں کا کہناہے کہ انہیں سالار جنگ میوزیم کے قریب برج کی تعمیر اور جگہ کی فراہمی کے جو خواب دکھائے جا رہے ہیں ان کی حقیقت سے وہ اب اچھی طرح واقف ہو چکے ہیں لیکن جو لوگ یہ کہہ رہے ہیں انہیں اس بات پر بھی غور کرنا چاہئے کہ ان برجس کی تعمیر تک غریب ٹھیلہ بنڈی راں جو قلب شہر میں کاروبار کیا کرتے تھے وہ ابھی گذشتہ ایک ماہ سے زائد عرصہ سے بے روزگار ہیں اور آئندہ چند ماہ کے دوران ان کے مسائل کے حل کے کوئی آثار نظر نہیں آتے لیکن اس کے باوجود یہ کہا جا رہاہے کہ بہت جلد ٹھیلہ بنڈی رانوں کی بازآبادکاری کو یقینی بنایا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT