Tuesday , December 11 2018

چارمینار تا گاندھی بھون ریالی

۔4 مہینے کا وعدہ 40 ماہ کے بعد بھی وفا نہیں ہوا : اُتم کمار
کانگریس کے تحفظات سے 10 لاکھ مسلمان فیضیاب ہوئے ہیں : کانگریس
قرار داد کی پیشرفت سے سب لا علم
آپ نے 12 فیصد وعدہ کیا : کنٹیا
صرف مودی پر ذمہ داری کیوں ؟
نیت صاف ظاہر ہوگئی آپ کی
2019 میں مسلمانوں سے ووٹ نہیں مانگنا

 

حیدرآباد ۔ 11 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : چیف منسٹر کے سی آر نے 2014 کی انتخابی مہم کے دوران مسلمانوں سے وعدہ کیا تھا کہ وہ اقتدار حاصل کرنے کے اندرون 4 ماہ تاملناڈو کی شکل میں تلنگانہ کے مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم کریں گے ۔ 40 ماہ کا وقفہ گذر جانے کے باوجود آج بھی مسلمانوں کو سبز باغ دیکھا رہے ہیں ۔ اسمبلی اور کونسل میں منظورہ قرار داد وزیر اعظم نریندر مودی کو پیش کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے اپنی ذمہ داریوں سے راہ فرار اختیار کررہے ہیں ۔ صدر گریٹر حیدرآباد سٹی کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ شیخ عبداللہ سہیل کی جانب سے چارمینار تا گاندھی بھون تک منظم کردہ 12 فیصد مسلم تحفظات کی ریالی سے چارمینار کے دامن میں خطاب کرتے ہوئے انچارج سکریٹری تلنگانہ کانگریس امور آر سی کنٹیا ، صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی ، قائد اپوزیشن کے جانا ریڈی ، سابق صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی پنالہ لکشمیا ، سابق مرکزی وزیر سروے ستیہ نارائنا اور سابق وزیر ڈی ناگیندر نے خطاب کرتے ہوئے ان خیالات کا اظہار کیا ۔ شیخ عبداللہ سہیل نے اس عظیم الشان ریالی میں نیوز ایڈیٹر روزنامہ سیاست جناب عامر علی خاں کو خصوصی طور پر مدعو کیا اور 12 فیصد مسلم تحفظات کے حصول تک اخبار سیاست کے ذریعہ جدوجہد جاری رکھنے کی اپیل کی ۔ واضح رہے کہ گذشتہ سال اگست 2016 سے روزنامہ سیاست 12 فیصد مسلم تحفظات کے لیے جدوجہد جاری رکھا ہوا ہے ۔ اس موقع پر ارکان اسمبلی رام موہن ریڈی ، پدماوتی ریڈی سابق وزیر ایم ششی دھر ریڈی ، سابق ارکان پارلیمنٹ ملو روی ، انجن کمار یادو ، رکن راجیہ سبھا ایم اے خان ، صدر مہیلا کانگریس این شاردا ، صدر یوتھ کانگریس انیل کمار یادو ، صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ محمد خواجہ فخر الدین سابق صدر محمد سراج الدین ، جنرل سکریٹریز پردیش کانگریس کمیٹی سید عظمت اللہ حسینی ، عظمیٰ شاکر ترجمان ، مہیش کمار گوڑ ، سید نظام الدین ، محمد فہیم سابق سکریٹری سید یوسف ہاشمی ، سید شوکت رحمت علی سابق کارپوریٹرس محمد غوث ، ایس محمد واجد حسین ، شیخ شریف ، مجلس بچاؤ تحریک کے ترجمان امجد اللہ خاں خالد ، صدر تحریک مسلم شبان محمد مشتاق ملک کے علاوہ دوسرے قائدین و کارکن کانگریس کے ہزاروں کارکن نے ریالی میں شرکت کی ۔ مسٹر آر سی کنٹیا نے 12 فیصد مسلم تحفظات کی قرار داد مرکز کو روانہ کرنے پر چیف منسٹر کے سی آر سے استفسار کیا کہ کیا انہوں نے مرکز یا بی جے پی سے اجازت لے کر مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کا وعدہ کیا تھا جو آج وزیراعظم پر انحصار کررہے ہیں ۔ کے سی آر نے انتخابی مہم میں اس کا کوئی تذکرہ نہیں کیا تھا ۔ اپنے وعدے کو عملی جامہ پہنانے کا وقت آیا تو ٹی آر ایس حکومت ٹال مٹول کی پالیسی اپناتے ہوئے مسلمانوں کو ہتھیلی پر جنت دیکھا رہی ہے ۔ اگر 2019 سے قبل 12 فیصد تحفظات فراہم نہیں کیے گئے تو مسلمان ٹی آر ایس کو سبق سکھائیں گے ۔ صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی نے چیف منسٹر تلنگانہ کو دھوکہ باز قرار دیتے ہوئے 2019 تک 12 فیصد مسلم تحفظات کی عدم عمل آوری پر مسلمانوں سے ووٹ نہ مانگنے پر زور دیا ۔ انہوں نے کانگریس کارکنوں پر زور دیا کہ وہ گھر گھر مہم چلاتے ہوئے کے سی آر کی وعدہ خلافی کے خلاف عوام میں شعور بیدار کریں ۔ اتم کمار ریڈی نے چیف منسٹر سے استفسار کیا کہ اگر وزیراعظم نے تمہیں 12 فیصد مسلم تحفظات فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے تو تم سپریم کورٹ جانے کی بات کیوں کررہے ہو ۔ کیا ٹی آر ایس اور بی جے پی میں میچ فکسنگ ہوگیا ہے ۔ اس لیے مسلمانوں کو گمراہ کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کے سی آر نے ہمیشہ بی جے پی اور وزیراعظم نریندر مودی کے فیصلوں کی تائید کی ہے ۔ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی کی تائید اس کا ثبوت ہے ۔ بی جے پی نے رام ناتھ کویند کو صدارتی امیدوار نامزد کیا ۔ ٹی آر ایس نے علحدہ تلنگانہ ریاست تشکیل دینے میں اہم رول ادا کرنے والی سابق اسپیکر لوک سبھا میرا کمار کو نظر انداز ہوئے بی جے پی کے صدارتی امیدوار کی تائید کی ہے ۔ اسمبلی اور کونسل میں 12 فیصد مسلم تحفظات کی جو قرار داد منظور ہوئی ہے ۔ اس کی پیشرفت سے کوئی واقف نہیں ہے ۔ صرف مودی پر ذمہ داری عائد کرتے ہوئے کے سی آر اپنی ذمہ داریوں سے راہ فرار اختیار کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔ اس سے چیف منسٹر کی نیت میں کھوٹ نظر آرہی ہے ۔ کانگریس نے وعدے کے مطابق مسلمانوں کو 58 دن میں تحفظات فراہم کیا جس سے ابھی تک 10 لاکھ سے زائد مسلمانوں کو فائدہ پہونچا ہے ۔ صدر گریٹر حیدرآباد کانگریس اقلیت ڈپارٹمنٹ شیخ عبداللہ سہیل نے کہا کہ 2 جون 2018 کو ٹی آر ایس حکومت کے 4 سال مکمل ہورہے ہیں ۔ اس سے قبل چیف منسٹر مسلمانوں سے کئے گئے وعدے کو پورا کریں بصورت دیگر آئندہ 203 دن تک کانگریس پارٹی احتجاجی مہم کے ذریعہ عوام میں شعور بیدار کرے گی ۔ انہوں نے کہا کہ ٹی آر ایس بہانے کرتے ہوئے اپنی ذمہ داریوں سے ہرگز راہ فرار اختیار نہیں کرسکتی ۔ چارمینار سے گاندھی بھون تک منظم کی جانے والی ریالی ابتداء ہے ۔ چیف منسٹر کے سی آر اور ٹی آر ایس حکومت اس کو انتہا سمجھنے کی غلطی نہ کریں ۔ کانگریس پارٹی نے 12 فیصد مسلم تحفظات کے لیے کامیاب دستخطی مہم چلائی ۔ 12 فیصد مسلم تحفظات کا بل 7 ماہ قبل اسمبلی اور کونسل میں منظور ہوچکا ہے ۔ ابھی تک اس پر کوئی پیشرفت نہیں ہوئی ۔ شہر کے مختلف مقامات سے کانگریس کے قائدین اور کارکنوں کی بڑی تعداد نے ریالی میں شرکت کی ۔ ریالی کو کامیاب بنانے پر شیخ عبداللہ سہیل نے کانگریس کے قائدین اور کارکنوں ، دوسرے سیاسی و رضاکارانہ تنظیموں سے بھی اظہار تشکر کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT