Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / چار فیصد مسلم تحفظات سے 29 مسلم کارپوریٹرس منتخب

چار فیصد مسلم تحفظات سے 29 مسلم کارپوریٹرس منتخب

کانگریس کے کارناموں کے ثمر آور نتائج ، حملہ آور کو معاف کرنے کا اعلان : محمد علی شبیر
حیدرآباد ۔ 8 ۔ فروری : ( سیاست نیوز ) : قائد اپوزیشن تلنگانہ قانون ساز کونسل مسٹر محمد علی شبیر نے ان پر حملہ کرنے والے مسلم نوجوانوں کو شخصی طور پر معاف کرتے ہوئے کہا کہ وہ مسلم نوجوانوں کو تعلیم یافتہ بنا رہے ہیں جب کہ مجلس سیاسی مفادات کی خاطر انہیں مجرم بنا رہی ہے ۔ ان کی کاوشوں سے مسلم تحفظات حاصل ہوئے اور تحفظات کی وجہ سے 29 مسلم کارپوریٹر منتخب ہوئے ہیں ۔ آج اسمبلی کے احاطے میں میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے مسٹر محمد علی شبیر نے کہا کہ وہ اسلامی تعلیمات پر ایقان رکھتے ہیں اس لیے اسد الدین اویسی کی ہدایت پر ان پر حملہ کرنے والے مسلم نوجوانوں کو شخصی طور پر معاف کررہے ہیں ۔ تاہم قانون اور کانگریس پارٹی اپنا کام کرے گی ۔ مسٹر محمد علی شبیر نے کہا کہ وہ مسلم نوجوانوں کو اعلیٰ تعلیم کے زیور سے آراستہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں ۔ اور وہ اس میں کامیاب بھی ہوئے ہیں ۔ مسلمانوں کو تحفظات فراہم کرنے کے لیے پارٹی نے جدوجہد کی ۔ کانگریس کی صدر مسز سونیا گاندھی اور سابق چیف منسٹر ڈاکٹر راج شیکھر ریڈی کی وجہ سے مسلمانوں کو 4 فیصد مسلم تحفظات حاصل ہوئے ہیں ۔ جس سے تعلیم کے میدان میں 10 لاکھ مسلم نوجوانوں کو فائدہ ہوا ہے ۔ وہ مسلم نوجوانوں کے ہاتھوں میں قلم تھمانا چاہتے ہیں ۔ جب کہ مسلم تحفظات کی مخالفت کرنے والی مجلس کے صدر اسد الدین اپنے سیاسی مفادات کی خاطر مسلم نوجوانوں کو غنڈہ ، روڈی شیٹر اور مجرم بنانے کی کوشش کررہے ہیں ۔ اسد الدین اویسی نے ایک ٹیلی ویژن مباحثہ میں مسلم تحفظات کو فتنہ قرار دیتے ہوئے مستقبل میں مسلمانوں کو دو علحدہ علحدہ قبرستان کی ضرورت پڑنے کا دعویٰ کیا تھا مگر مسلم تحفظات حاصل ہوتے ہی اس کو اپنا کارنامہ قرار دینے کی کوشش کی ہے ۔ جس مسلم تحفظات کو اسد الدین اویسی نے فتنہ قرار دیا تھا ۔ مسلمانوں کے لیے دو قبرستانوں کی ضرورت تو نہیں پڑی مگر اسی مسلم تحفظات بی سی ( ای ) کے زمرے سے جی ایچ ایم سی کے انتخابات میں جملہ 50 ڈیویژنس مختص کئے گئے تھے ۔ جس میں 29 مسلمان بی سی ( ای ) زمرہ بندی سے کامیاب ہوئے ہیں ۔ ویسے جملہ 46 مسلمان کامیاب ہوئے ہیں ۔ جن میں 17 مسلمان جنرل بلدی ڈیویژنس سے کامیاب ہوئے ہیں ۔ پارٹی شکست کے لیے ذمہ دار کون ہے ؟ اس سوال کا جواب دیتے ہوئے محمد علی شبیر نے کہا کہ تمام قائدین متحدہ طور پر شکست کے ذمہ دار ہیں ۔ کانگریس پارٹی عوام کے فیصلے کا احترام کرتی ہے اور حکومت پر زور دیتی ہے کہ وہ عوام سے کئے گئے تمام وعدوں کو پورا کرے ۔ نارائن کھیڑ کے ضمنی انتخابات کے بعد پارٹی قائدین جی ایچ ایم سی انتخابات میں شکست کا جائزہ لیں گے ۔ ٹی آر ایس کی شاندار کامیابی کے تعلق سے پوچھے گئے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ ٹی آر ایس فی الحال اولڈ گولڈ سونا ہے جو اصلی سونے سے زیادہ چمکدار ہوتا ہے ۔ مگر چھ ماہ بعد اس کی چمک اصلی سونے کے سامنے ماند پڑ جاتی ہے ۔ شہر اور اضلاع میں 2 لاکھ ڈبل بیڈ روم فلیٹس تعمیر کرنے کے لیے 12500 کروڑ روپئے کی ضرورت پڑے گی ۔ اسمبلی کے بجٹ سیشن میں اتنی رقم مختص کی جاتی ہے یا نہیں ، آنے والا وقت ہی بتائے گا ۔ الکٹرانک وویٹنگ مشینوں کے تعلق سے عوام میں شکوک ہیں الیکشن کمیشن اور حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ عوامی شکوک کو دور کریں ۔۔

TOPPOPULARRECENT