Thursday , November 23 2017
Home / شہر کی خبریں / چندرائن گٹہ حملہ کیس ‘ مجسٹریٹ کا دوبارہ بیان قلمبند

چندرائن گٹہ حملہ کیس ‘ مجسٹریٹ کا دوبارہ بیان قلمبند

حیدرآباد ۔ 10 جنوری ۔ ( سیاست نیوز) چندرائن گٹہ حملہ کیس میں جیل میں شناختی پریڈ کرانے والے مجسٹریٹ نے پھر ایک مرتبہ عدالت میں اپنا بیان قلمبند کروایا ، جس پر وکیل دفاع ایڈوکیٹ جی گرومورتی نے جرح کیا ۔ ضلع نلگنڈہ آبکاری کے خصوصی مجسٹریٹ وی ستیہ نارائنہ نے آج ساتویں ایڈیشنل میٹرو پولیٹن سیشن جج کے اجلاس پر حاضر ہوکر اپنا بیان قلمبند کروایا ، بعد ازاں وکیل دفاع نے اُن پر جراح کرتے ہوئے کئی سوالات کئے ۔ گواہ نے یہ بتایا کہ اُنھیں سی سی ایس پولیس کی جانب سے جیل میں شناختی پریڈ کروانے کیلئے تین درخواستیں موصول ہوئیں تھیں جس کے نتیجہ میں اُنھوں نے 4 جون سال 2011 ء کو چیرلہ پلی سنٹرل جیل میں پانچ ملزمین کی شناختی پریڈ کروائی تھی ۔ جراح کے دوران گواہ مجسٹریٹ نے بتایاکہ تین شناختی پریڈ کروائے گئے جس میں ایک میں بھی انھوں نے مشتبہ شخص یا ملزمین کی حلیہ کا تذکرہ نہیں کیا ۔ وکیل دفاع نے سوال کیا کہ کیا عمر ، قد ، رنگ ، جسامت ، ایک شخص کے حلیہ کے تحت آتے ہیں ۔ گواہ نے بتایا کہ مخصوص شخص کے حلیہ میں مذکورہ باتیں شامل نہیں ہے۔ انھوں نے اس بات کی تصدیق کی کہ شناختی پریڈ کی کارروائی کے دوران انھوں نے شناختی نشان (تل) کی موجودگی کا تذکرہ نہیں کیا۔ مجسٹریٹ وی ستیہ نارائنہ نے عدالت کو بتایا کہ شناختی پریڈ کی کارروائی کے دوران کسی بھی گواہ نے ملزمین سے روابط یا اُس کے شناختی نشانوں سے متعلق تفصیلات نہیں بتائی۔ وکیل دفاع کے اس دعویٰ کو گواہ نے غلط قرار دیا کہ وہ شناختی پریڈ کی کارروائی کیلئے قانون کے مطابق کارروائی نہیں کی ۔ جج نے گواہ کے بیان اور جراح مکمل ہونے پر سماعت کل تک کیلئے ملتوی کردی ۔

TOPPOPULARRECENT