Monday , June 25 2018
Home / شہر کی خبریں / چندرابابو کو حیدرآباد کے بجائے سیما آندھرا میں ہی رہ کر حکومت کرنے کا مشورہ

چندرابابو کو حیدرآباد کے بجائے سیما آندھرا میں ہی رہ کر حکومت کرنے کا مشورہ

حیدرآباد آندھراپردیش کا حصہ نہیں، دارالحکومت کو بھی تبدیل کرنے پر زور، کے ایس راؤ کا بیان

حیدرآباد آندھراپردیش کا حصہ نہیں، دارالحکومت کو بھی تبدیل کرنے پر زور، کے ایس راؤ کا بیان
حیدرآباد 6 جولائی (سیاست نیوز) سابق مرکزی وزیر و بی جے پی قائد مسٹر کے ایس راؤ نے چیف منسٹر مسٹر این چندرابابو نائیڈو کو حیدرآباد میں بیٹھ کر آندھراپردیش میں راج کرنے کے بجائے آندھراپردیش میں کسی بھی شیڈ میں بیٹھ کر اقتدار سنبھالنے کا مشورہ دیا اور چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ کو پولاورم کے مسئلہ پر کوئی تنازعہ نہ پیدا کرنے کا مشورہ دیا۔ ریاست کی تقسیم کے بعد بطور احتجاج بی جے پی میں شمولیت اختیار کرنے والے سابق مرکزی وزیر مسٹر کے ایس راؤ نے اقتدار سنبھالنے کے ایک ماہ مکمل ہونے پر چیف منسٹر مسٹر این چندرابابو کو مشورہ دیا کہ وہ حیدرآباد میں قیام کرکے آندھراپردیش میں راج کرنے کے بجائے آندھراپردیش میں قیام کرنے کو ترجیح دیں۔ حیدرآباد اب آندھراپردیش کا حصہ نہیں رہا۔ آندھراپردیش میں نئے دارالحکومت کا جلد از جلد انتخاب کریں۔ پختہ عمارتوں کی فکر نہ کریں بلکہ ٹین شیڈس میں بیٹھ کر کام کریں۔ ریاست کی ترقی اور عوامی فلاح و بہبود کو ترجیح دیں۔ ریاست کی تقسیم سے جن چیالنجس کا سامنا ہے اُس سے نمٹنے کی حکمت عملی تیار کریں۔ جس ریاست کا چیف منسٹر اُس ریاست میں قیام کرے تو سرکاری ملازمین میں بھی کام کا جذبہ بڑھے گا اور عوام بھی مطمئن رہیں گے۔ مسٹر کے ایس راؤ نے کہاکہ صرف اور صرف کانگریس نے سیاسی مفادات کے لئے ریاست کو تقسیم کیا ہے اور ریاست کی تقسیم میں آندھراپردیش سے مکمل ناانصافی کی ہے۔ مگر بی جے پی کی زیرقیادت این ڈی اے حکومت آندھراپردیش سے مکمل انصاف کرے گی۔ آندھراپردیش کے لئے مرکز سے جو بھی ملا ہے وہ بی جے پی کے سینئر قائدین کی مرہون منت سے یو پی اے حکومت نے پولاورم پراجکٹ تعمیر کرنے اور ضلع کھمم کے 7 منڈل آندھراپردیش میں ضم کرنے کا فیصلہ کیا تھا تاہم انتخابی قواعد کے باعث وہ اس سلسلہ میں آرڈیننس جاری نہیں کرسکی۔ این ڈی اے حکومت سابق حکومت کے فیصلے کے مطابق آرڈیننس جاری کیاہے۔ اس کے علاوہ اور بھی کئی مزید فیصلے کرنے باقی ہیں۔ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندرشیکھر راؤ پولاورم کے مسئلہ کو متنازعہ نہ بنائیں۔ اس سے دونوں ریاستوں کے درمیان اختلافات بڑھنے کا اندیشہ ہے۔ مسٹر کے ایس راؤ نے کہاکہ ریاست کی تقسیم کے موقع پر بل میں اہم فیصلے کئے گئے ہیں اس پر عمل آوری ہنوز باقی ہے۔

TOPPOPULARRECENT