Sunday , November 19 2017
Home / بچوں کا صفحہ / چڑیا کی نصیحت

چڑیا کی نصیحت

کسی گاؤں میں ایک لکڑہارا رہتاتھا ۔ وہ بہت غریب تھا ۔ اس کا ایک بیٹا تھا جس کا نام احمر تھا ۔ احمر بہت بدتمیز اور نکما لڑکا تھا ۔ کسی کا کہنا بھی نہیں مانتا تھا ۔ لکڑہارے کی بیوی بہت عقلمند تھی ۔ وہ اپنے بیٹے کو ہمیشہ سمجھاتی ۔ احمد ! اب تم برے ہوگئے ہو اپنے ابو کے ساتھ کھیتوں میں جاکر کام میں ہاتھ بٹایا کرو ۔ تمہارے والد اب بوڑھے ہوچکے ہیں ۔
انہیں آرام کی ضرورت ہے ۔ لیکن وہ ایک کان سے سنتا اور دوسرے کان سے نکال دیتا ۔ سارادن باہر گھومتا اور شام کو آکر کھانے پینے کیلئے شور مچاتا ۔ ایک دن یوں ہی گھومتا پھرتا وہ ایک جنگل میں چلاگیا اور آرام کی غرض سے ایک درخت کے نیچے لیٹ گیا ۔ ابھی وہ لیٹا ہی تھا کہ اچانک اس کے کانوں میں کسی کی آواز آئی ۔ یہ چڑیا اور چڑے کا جوڑا تھا جو آپس میں باتیں کر رہے تھے ۔ چڑا کہنے لگا جو بچے اپنے والدین کی نافرمانی کرتے ہیں ان کا کہنا نہیں مانتے وہ ہمیشہ ہمیشہ کیلئے اپنے گھر کا راستہ بھول جاتے ہیں اور اللہ بھی ان سے ناراض ہوجاتا ہے ۔ یہ سنتا تھا کہ احمد فوراً اٹھا اور دل میں سوچنے لگا ۔ میں اب واقعی بڑا ہوگیا ہوں اور مجھے اپنی ذمہ داریاں سمجھتی چاہئیں ۔ یہ خیال آتے ہی اس نے فوراً اپنے گھر کی راہ لی اور اپنے والد کو آئندہ کام کرنے سے منع کرتا ہوا کھیتوں کی طرف چل دیا ۔ اس کے والدین بہت خوش تھے کہ ان کے بیٹے نے ٹھوکر کھائے بغیر ہی اپنی ذمہ داریوں کو سمجھ لیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT