Wednesday , December 19 2018

چھتس گڑھ میں 1.8 لاکھ ہڑتالی اساتذہ برخاست ہونگے

رائے پور، 23 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) چھتیس گڑھ میں تقریبا ایک لاکھ 80 ہزار اساتذہ (کنٹراکٹ) کی ہڑتال کی وجہ سے بڑی تعداد میں اسکولوں کے تالے نہ کھلنے کو سنجیدگی سے لیتے ہوئے ریاستی حکومت نے تین دن میں ڈیوٹی پر واپس نہ آنے والے اساتذہ کو برخاست کرنے اور تعلیمی امور کیلئے12 ویں پاس مقامی نوجوانوں کو مدعو کرنے کا حکم دیا ہے ۔ریاست کے ایڈیشنل چیف سکریٹری ایم کے راوت نے اس بارے میں دو مختلف احکامات جاری کیے ہیں، جن میں اساتذہ کی تحریک سے سختی سے نمٹنے کے ہدایات دی گئی ہیں ۔ریاست کے اسکولی تعلیم سکریٹری نے دو دن پہلے90 فیصد اسکولوں کے کھلے ہونے کا دعوی کیا تھا، لیکن مسٹر راوت کی طرف سے جاری ان دونوں احکام سے صاف لگتا ہے کہ تحریک چلانے والے کئی ہزار اسکولوں کے تالے نہ کھلنے کے دعوے میں کہیں زیادہ سچائی ہے ۔مسٹر راوت نے تمام ضلع پنچایتوں اور ڈسٹرکٹ پنچایتوں کے اہم حکام سے کہا کہ ان کے اضلاع میں پروبیشنری اورتبادلہ کئے گئے ایسے اساتذہ کے خلاف تادیبی کارروائی کی جائے جو 20 نومبر سے غیر مجاز طور پر ہڑتال پر ہیں۔

 

یوپی میں مذہب اور ذات پات کی سیاست موقوف ہوگئی: یوگی
فرخ آباد ؍ فیروز آباد 23 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش میں ذات پات اور مذہب کی سیاست پر روک لگ جانے کا دعویٰ کرتے ہوئے چیف منسٹر یوگی ادتیہ ناتھ نے ریاست میں بی جے پی کی حکمرانی کے دوران صرف ’’ترقی کی سیاست‘‘ دور دورہ رہے گا۔ اُنھوں نے یہ دعویٰ بھی کیاکہ ریاست میں ’’غنڈہ راج‘‘ کی جائے قانون کی حکمرانی بحال کی جاچکی ہے۔بی جے پی حکومت میں صرف ترقی کی سیاست چلے گی اور تمام باتیں ترقی پر مرکوز ہوں گی۔ ذات پات اور مذہب کی سیاست ریاست میں ماضی کی باتیں ہوگئی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT