Tuesday , December 11 2018

چھتیس گڑھ کے بستر ڈیویژن میں 11 ہزار زائد سکیوریٹی جوان تعینات

نئی دہلی۔ 7؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ دُنیا کے سب سے بدترین طور پر ماؤیسٹوں سے متاثرہ علاقہ چھتیس گڑھ کے بستر ڈیویژن میں 11 ہزار زائد نیم فوجی دستوں کو تعینات کیا جائے۔ اس علاقہ میں حال ہی میں ماؤیسٹوں نے حملہ کرکے سی آر پی ایف کے 14 جوانوں کو ہلاک کیا تھا۔ حکومت یہاں پر زائد 11 نئے بٹالینس تعینات کرنا چاہتی ہے۔ ا

نئی دہلی۔ 7؍دسمبر (سیاست ڈاٹ کام)۔ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ دُنیا کے سب سے بدترین طور پر ماؤیسٹوں سے متاثرہ علاقہ چھتیس گڑھ کے بستر ڈیویژن میں 11 ہزار زائد نیم فوجی دستوں کو تعینات کیا جائے۔ اس علاقہ میں حال ہی میں ماؤیسٹوں نے حملہ کرکے سی آر پی ایف کے 14 جوانوں کو ہلاک کیا تھا۔ حکومت یہاں پر زائد 11 نئے بٹالینس تعینات کرنا چاہتی ہے۔ ان میں سے 10 سی آر پی ایف اور ایک بارڈر سکیوریٹی فورس کے ارکان ہوں گے۔ وسطی ہند کی اس ریاست کے جنوبی حصہ میں زیادہ سے زیادہ سکیوریٹی فورسس کو تعینات کیا جارہا ہے۔ وزارت داخلہ نے سی آر پی ایف کی 10 زائد بٹالینوں اور بی ایس ایف کی ایک بٹالین تعینات کرنے کی منظوری دے دی ہے تاکہ چھتیس گڑھ کے علاقہ بستر میں تلاشی مہم شروع کی جاسکے۔ 11 بٹالینوں میں سے 3 بٹالین پہلے ہی بستر ڈیویژن کے جنگلات اور مواضعات کو پہنچ گئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT