Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / ’’چھوٹا راجن کا خودسپردگی کا ارادہ نہ تھا‘‘

’’چھوٹا راجن کا خودسپردگی کا ارادہ نہ تھا‘‘

نئی دہلی، 7 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) راجیندر سداشیو نکالجے کی گرفتاری چھ ماہ طویل آپریشن رہی جس میں سی بی آئی، ہندوستانی اور بین الاقوامی ایجنسیوں نے کھلے اور مخفی طور پر تال میل کے ساتھ کام کیا، حکومتی ذرائع نے آج یہ ادعا کیا جبکہ انھوں نے بہ دقت تمام یہ قیاس آرائی ختم کردینے کی کوشش کی کہ 55 سالہ چھوٹا راجن نے خود کو ایجنسیوں کے آگے پیش کردیا۔ ذرائع نے کہا کہ راجن کی طرف سے خودسپردگی کے ارادہ کا سوال ہی نہیں کیونکہ وہ 10 لاکھ روپئے کے مماثل کرنسی اور 15 جوڑے لباس کے ساتھ سفر کررہا تھا اور شاید اپنی پسند کے کسی ملک کو فراری کا منصوبہ بنارہا تھا کہ انٹرپول کی اطلاع پر بالی، انڈونیشیا میں پکڑا گیا۔ اپنے دعوؤں کی تائید میں ذرائع نے کہا کہ راجن کا خودسپردگی کا ارادہ نہ تھا کیونکہ اس نے بالی میں خودسپردگی کی دستاویز پر دستخط سے انکار کیا تھا۔ اس دستاویز پر دستخط کا مطلب ہوتا کہ اسے فوری ہندوستان منتقل کردیا جاتا۔ انڈر ورلڈ ڈان چھوٹا راجن کو آج قبل ازیں عدالت نے سی بی آئی تحویل میں دے دیا جبکہ ایک دن قبل اسے انڈونیشیا سے ہندوستان لایا گیا تھا۔ وہ  27 سال سے فرار تھا۔ مجسٹریٹ نے سکیورٹی وجوہات کی بناء پر سی بی آئی ہیڈکوارٹرس میں مقدمہ کی سماعت کے بعد ملزم کو سی بی آئی تحویل میں دے دیا۔ سی بی آئی ترجمان نے تفصیلات بتائے بغیر کہا کہ ایک مقدمہ میں راجن کو تحقیقاتی ایجنسی کی تحویل میں لیا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT