چیف منسٹرس کے انتخاب کا راہول گاندھی کو اختیار

مدھیہ پردیش، چھتیس گڑھ، راجستھان کے منتخب کانگریس ارکان اسمبلی کا متفقہ فیصلہ

نئی دہلی ۔ 12 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) راجستھان، مدھیہ پردیش اور چھتیس گڑھ میں حکومتیں تشکیل دینے کیلئے سرگرمیاں تیز ہوگئی ہیں۔ ان ریاستوں میں منتخب کانگریس کے ارکان اسمبلی نے صدر کانگریس راہول گاندھی کو اختیار دیا ہیکہ وہ تینوں ریاستوں کے چیف منسٹرس کا انتخاب کریں۔ رات دیر گئے اور دن بھر اس موضوع پر مشاورت جاری رہی۔ نومنتخب ارکان اسمبلی نے چیف منسٹرس کی دوڑ میں شامل اعلیٰ قائدین کے بشمول سینئر قائدین کو بحیثیت چیف منسٹرس مقرر کرنے کا راہول گاندھی کو مجاز گردانہ ہے۔ تینوں ریاستوں میں اس اعلیٰ عہدہ کیلئے کانگریس کے حلقوں میں تجسس برقرار رہا۔ پارٹی کے قائدین نے کہا کہ چیف منسٹروں کے ناموں کا اعلان جمعرات کے دن کیا جائے گا۔ راہول گاندھی سے تین ریاستوں کے مقررہ مبصرین کی ملاقات کے بعد یہ فیصلہ کیا جائے گا کہ ان تینوں ریاستوں میں چیف منسٹر کا عہدہ کس کے حوالے کیا جائے۔

راہول گاندھی نے تینوں ریاستوں کے کانگریس ورکرس سے راست مخاطب ہوکر کہا کہ وہ خود اپنی پسند سے اپنی ریاست کے چیف منسٹر کو منتخب کریں۔ داخلی موبائیل پیامات ایپ کے ذریعہ اپنا چیف منسٹر منتخب کیا جاسکتا ہے۔ دیگر دو ریاستوں میں بھی اسمبلی انتخابات کے نتائج کے بعد حکومت کی تشکیل کا عمل تیز ہوگیا ہے۔ تلنگانہ میں چیف منسٹر کی حیثیت سے کے چندرشیکھر راؤ جمعرات کے دن حلف لے رہے ہیں۔ میزورم میں میزو نیشنل فرنٹ میں کانگریس کو بدترین شکست ملی ہے اور یہاں بھی پارٹی صدر زورمودھنگا ہفتہ کے دن بحیثیت چیف منسٹر حلف لیں گے۔ تمام تین ریاستوں میں کانگریس کامیاب بن کر ابھری ہے۔ 2019ء کے عام انتخابات سے قبل بی جے پی کی طاقت کو کمزور کرتے ہوئے کانگریس پارٹی نے اپنے کیڈرس میں نئی جان ڈال دی ہے۔ راجستھان میں چیف منسٹر کے عہدہ کیلئے اعلیٰ دعویداروں میں صدر پردیش کانگریس سچن پائلٹ، سابق چیف منسٹر اشوک گہلوٹ شامل ہیں۔ یہ دونوں قائدین اپنے اسمبلی حلقوں میں بھاری اکثریت سے منتخب ہوئے ہیں۔ رات دیر گئے کے اجلاس کے بعد سچن پائلٹ نے کہا کہ پارٹی ہائی کمان فیصلہ ہی قطعی ہوگا۔ مدھیہ پردیش میں جہاں تین مرتبہ چیف منسٹر منتخب ہونے والے شیوراج سنگھ چوہان نے آج گورنر آنندی بین پٹیل سے ملاقات کرکے اپنا استعفیٰ پیش کردیا۔ بعدازاں کانگریس کی ٹیم نے گورنر سے ملاقات کرکے تشکیل حکومت کا دعویٰ پیش کیا ہے۔ اس ٹیم میں مدھیہ پردیش کے چیف منسٹر بننے کے اصل دو دعویداروں میں کمل ناتھ اور جیوتردتیہ سندھیا بھی شامل تھے۔ بعدازاں سندھیا نے اخباری نمائندوں سے کہا کہ وہ چیف منسٹر کے تعلق سے قطعی فیصلہ کا جمعرات تک انتظار کریں گے۔ چھتیس گڑھ کے ارکان اسمبلی نے بھی پارٹی کے مرکزی مبصر ملک ارجن کھرگے کی موجودگی میںفیصلہ کیا کہ وہ ریاستی چیف منسٹر کے عہدہ کیلئے لوک سبھا رکن ٹی سابو، پارٹی ریاستی صدر بھوپیش بھاگیل، اپوزیشن لیڈر ٹی ایس سنگوڑو اور سینئر لیڈر چرن داس مہنت کے ناموں پر غور کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT