Friday , August 17 2018
Home / شہر کی خبریں / چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر پر آر ٹی سی ملازمین کو مشتعل کرنے کا الزام

چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر پر آر ٹی سی ملازمین کو مشتعل کرنے کا الزام

جائز مطالبات کو فوری قبول کرنے کا مطالبہ ، کانگریس ایم ایل اے جی چناریڈی
حیدرآباد ۔ 17 ۔ مئی : ( سیاست نیوز ) : کانگریس کے رکن اسمبلی جی چناریڈی نے تلنگانہ کی تحریک میں اہم رول ادا کرنے والے آر ٹی سی ایمپلائز کے خلاف غیر ضروری ریمارکس کرتے ہوئے انہیں مشتعل کرنے کا چیف منسٹر پر الزام عائد کیا اور ان کے جائز مطالبات کو فوری قبول کرنے کا مطالبہ کیا ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے جی چناریڈی نے کہا کہ تلنگانہ تحریک کے دوران آر ٹی سی ایمپلائز کی حصہ داری ناقابل فراموش تھی ۔ بحیثیت تحریک قائد آر ٹی سی ایمپلائز کی ہڑتال کو کے سی آر نے پسند کیا تھا ۔ آج وہ اپنے جائز مطالبات کو قبول کرانے کے لیے ہڑتال کی نوٹس دے رہے ہیں تو چیف منسٹر ان کے خلاف اشتعال انگیز ریمارکس کرتے ہوئے انہیں آر ٹی سی کو بند کردینے کی دھمکی دے رہے ہیں اقتدار حاصل کرتے ہی چیف منسٹر میں گھمنڈ تکبر پیدا ہوگیا ہے ۔ نقصانات سے دوچار آر ٹی سی کو آمدنی میں پہونچانا حکومت کی ذمہ داری ہے ۔ حکومت بغیر کسی تاخیر کے آر ٹی سی ایمپلائز کے مطالبات کو قبول کریں جس طرح سرکاری ایمپلائز اور ٹیچرس کی تنخواہوں میں اضافہ کیا جارہا ہے ۔ اسی طرز پر آر ٹی سی مزدوروں کی تنخواہوں میں بھی اضافہ کریں اور دوسرے مطالبات کو بھی قبول کریں ۔ جی چناریڈی نے تاملناڈو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ وہاں بجٹ میں آر ٹی سی کے لیے 4700 کروڑ روپئے کی گنجائش فراہم کی گئی ہے ۔ حکومت کی جانب سے دی جانے والی رعایت ، سہولتوں اور مفت بس کی سہولتوں سے آر ٹی سی کو نقصان پہونچ رہا ہے ۔ ان مسائل پر حکومت سنجیدگی سے غور کریں ۔ مفت بس پاس کے اخراجات حکومت آر ٹی سی کو ادا کریں ۔ آر ٹی سی ایمپلائز کو بھی تمام سہولتیں اور فائدے فراہم کرنے کا حکومت سے مطالبہ کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT