Thursday , January 17 2019

چیف منسٹر نائیڈو کا پیتھائی طوفان سے متاثرہ علاقوں کا فضائی سروے

احتیاطی تدابیر اختیار کرنے سے نقصانات کم ، متاثرین کو فوری راحت پہونچانے کی ہدایت
حیدرآباد ۔ 18 ۔ دسمبر : ( سیاست نیوز) : ریاست آندھرا پردیش میں پیتھائی طوفان سے پیدا شدہ حالات اور پیش آئے نقصانات کے سلسلہ میں متاثرہ علاقوں کا چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے فضائی ( ایرئیل ) سروے کیا اور اپنے فضائی سروے کے اختتام پر چیف منسٹر مشرقی گوداوری ضلع کے آلی پولاورم منڈل کے بیراوا پالم پہونچے اور طوفان کے متاثرین کے لیے قائم کردہ باز آبادکاری کیمپ کا دورہ کر کے متاثرین سے مکمل تفصیلات حاصل کی ۔ مسٹر چندرا بابو نائیڈو نے متاثرین سے طوفان کے باعث انہیں پیش آئیں مشکلات و مسائل کے ساتھ ساتھ حکومت کی جانب سے ان کے لیے انجام دئیے گئے راحت کاری اقدامات کے علاوہ انہیں حاصل ہونے والی امداد کے تعلق سے دریافت کیا اور متاثرین کو اس بات کا تیقن دیا کہ حکومت کی جانب سے انہیں ممکنہ حد تک امداد فراہم کرنے اور انہیں مکمل طور پر تحفظ فراہم کیا جائے گا اور کسی بھی نوعیت کی مزید کوئی مشکلات پیش نہ آنے کے لیے موثر اقدامات کرنے کا بھی متاثرین کو مکمل یقین دلایا ۔ بعد ازاں چیف منسٹر نے فصلوں کو ہوئے نقصانات سے متعلق عہدیداروں کے ساتھ بات چیت کے دوران مکمل حالات سے واقفیت حاصل کی اور کہا کہ حکومت کسانوں کی ہر لحاظ سے بھر پور مدد کرے گی ۔ باوثوق سرکاری ذرائع نے یہ بات بتائی اور کہا کہ چیف منسٹر مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے بعدازاں کاکناڈا ڈسٹرکٹ کلکٹریٹ آفس پہونچے اور وہاں سے وشاکھا پٹنم و مشرقی گوداوری اضلاع کے متعلقہ تمام عہدیداروں کے ساتھ طوفان سے ہوئے نقصانات کا تفصیلی جائزہ لیا ۔ چیف منسٹر کے ہمراہ ڈپٹی چیف منسٹر برائے امور داخلہ مسٹر این چنا راجپا کے علاوہ دیگر متعلقہ اعلیٰ عہدیدار بھی موجود تھے ۔ چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے کہا کہ پیتھائی طوفان کی آمد سے متعلق اطلاعات پر ٹکنالوجی سے بھر پور استفادہ کرتے ہوئے قبل از وقت احتیاطی اقدامات کئے گئے ۔ اس موقع پر مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ طوفان کے ذریعہ کوئی جانی نقصان پیش نہ آنے کے لیے موثر انداز میں قبل از وقت بڑے پیمانے پر احتیاطی تدابیر اختیار کرنے اقدامات کئے گئے ۔ علاوہ ازیں طوفان سے متاثرہ مواضعات میں ہر ایک خاندان کو حکومت کی جانب سے دو ہزار روپئے مالیتی اشیائے ضروریہ کی تقسیم عمل میں لائی جارہی ہے ۔ طوفان سے متاثرہ علاقوں میں عہدیداروں کی انجام دی گئیں گرانقدر خدمات کی چیف منسٹر نے زبردست ستائش کی اور کہا کہ برے وقت (یعنی ناسازگار حالات میں ) پر عوام کا مکمل ساتھ دینے والی کوئی پارٹی ہو تو وہ صرف اور صرف تلگو دیشم پارٹی اور تلگو دیشم حکومت ہی ہے ۔ اس موقع پر چیف منسٹر نے واضح طور پر کہا کہ مچھیروں کو شیڈولڈ کاسٹس طبقہ کے زمرہ میں شامل کرنے کی خواہش کی تجاویز ریاستی حکومت کی جانب سے مرکزی حکومت کو روانہ کردی گئیں ۔ چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے طوفان سے شدید متاثرہ علاقوں اور مشکلات سے دوچار عام کے لیے انتہائی مشکل حالات میں ’ رئیل ٹائیم گورننس ( آر ٹی جی ایس ) کی سروسیس ( خدمات کی ) کی زبردست ستائش کرتے ہوئے ان خدمات کو ناقابل فراموش قرار دیا اور کہا کہ پیتھائی طوفان کے تعلق سے پل پل کی اطلاعات سے عوام کو واقف کرتے ہوئے ان میں شعور پیدا کیا گیا جس کی وجہ سے طوفان کے متاثرہ مقامات پر کوئی زیادہ نقصانات پیش نہیں آئے ۔ چیف منسٹر نے مزید کہا کہ ’ ویاڈکٹ چینی عصری ٹکنالوجی سسٹم ‘ کے ذریعہ واضح طور پر حالات کا اندازہ لگاتے ہوئے تمام محکمہ جات کے ساتھ تال میل پیدا کر کے عوام میں صد فیصد اطمینان و بھروسہ اور اعتماد پیدا کیا گیا ۔ اس سلسلہ میں شاندار کو ششیں و خدمات انجام دینے والے عہدیداروں وغیرہ سے چیف منسٹر آندھرا پردیش نے اظہار تشکر کیا ۔ بتایا جاتا ہے کہ طوفان کی وجہ سے مسلسل جاری تیز بارش کے نتیجہ میں طوفان سے متاثرہ تمام علاقوں ( مقامات ) میں عام زندگی نہ صرف متاثر ہوئی بلکہ مکمل طور پر مفلوج ہو کر رہ گئی نشیبی علاقوں میں پانی جمع ہوجانے کے باعث وہاں کے عوام کو محفوظ مقامات پر منتقل کردیا گیا ۔ طوفان کی وجہ سے لاکھوں ایکڑ اراضیات پر کھڑی فصلیں مکمل طور پر پانی میں ڈوبی ہوئی ہیں ۔ جس کے پیش نظر کاشتکاروں کو زبردست نقصانات سے دوچار ہونا پڑا ۔ بالخصوص اضلاع کرشنا ، گنٹور ، دونوں مشرقی و مغربی گوداوری اضلاع ، وشاکھا پٹنم وغیرہ میں عوام اپنی قیمتی جانیں ہتھیلی میں لے کر طوفان پیتھائی سے پیدا شدہ حالات کا ہمت کے ساتھ مقابلہ کیا ۔ اس طوفان کی وجہ سے برقی سربراہی مکمل طور پر منقطع ہوگئی ۔ تیز ہواؤں اور طوفانی بارش سے بڑے بڑے درخت زمین سے اکھڑ گئے اور برقی کھمبے بھی ٹوٹ کر گر پڑے ۔ شاہراہوں پر درخت اور برقی کھمبے گر پڑنے کی وجہ سے ٹریفک مکمل طور پر متاثر رہی اور شدید بارش کے نتیجہ میں شاہراہیں بھی مکمل طور پر تباہ ہونے کی وجہ سے گاڑیوں کی آمد و رفت وغیرہ بھی متاثر رہی ۔ باوثوق سرکاری ذرائع کے مطابق بتایا جاتا ہے کہ طوفان کی سنگینی کا اندازہ لگاتے ہوئے تمام سرکاری ملازمین اور عہدیداروں کے علاوہ پارٹی قائدین و کارکنوں نے اپنے اپنے مقامات پر بڑے پیمانے پر کوئی جانی و مالی نقصانات پیش نہ آنے کے لیے قبل از وقت ہی اقدامات کئے تھے جس کے نتیجہ میں ہی کوئی زیادہ جانی و مالی نقصانات کی ابھی تک کوئی اطلاعات موصول نہیں ہوئی ہیں ۔۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT