Thursday , August 16 2018
Home / Top Stories / چیف منسٹر کیمپ آفس پر دھرنے کا منصوبہ ناکام

چیف منسٹر کیمپ آفس پر دھرنے کا منصوبہ ناکام

بی جے پی ارکان اسمبلی اور کارکن گرفتار۔ پولیس پرپارٹی کی تنقید
حیدرآباد 17 جولائی (سیاست نیوز) ہندو متنازعہ شخصیت سوامی پریپورنا نندا کو شہر بدر کرنے کا معاملہ طول پکڑتا جارہا ہے ۔ ہندو بنیاد پرست تنظیمیں پولیس کارروائی کے خلاف احتجاج کررہی ہیں۔ آج بی جے پی ارکان اسمبلی کی جانب سے چیف منسٹر کے کیمپ آفس پرگتی بھون پر اچانک دھرنا دینے کے اعلان کے بعد پولیس اُلجھن کا شکار ہوگئی اور فوری چوکسی اختیار کرکے کیمپ آفس کے اطراف سکیورٹی سخت کردی گئی۔ پولیس نے اس سلسلہ میں بی جے پی ارکان اسمبلی کو احتیاطی طور پر گرفتار کرلیا جنھیں بعدازاں رہا کردیا گیا۔ پرگتی بھون پہونچنے کی اطلاعات کے پیش نظر پولیس نے بی جے پی رکن اسمبلی گوشہ محل ٹی راجہ سنگھ کو اُن کے مکان پر نظربند کردیا اور کیمپ آفس کی سمت آگے بڑھنے والے بی جے پی کارکنوں کو گرفتار کرلیا گیا۔ بی جے پی ریاستی صدر مسٹر کے لکشمن اور دیگر ارکان اسمبلی جی کشن ریڈی اور سی رامچندر ریڈی کو بھی گرفتار کرلیا گیا۔ بی جے پی ارکان اسمبلی کو دھرنا منظم کرنے کی اجازت نہیں دی گئی ۔ اس کے باوجود دھرنا منظم کرنے کی کوشش کی گئی۔ ڈپٹی کمشنر پولیس سنٹرل زون مسٹر وشوا پرساد جو ویسٹ زون کے بھی انچارج ہیں نے بتایا کہ شہر میں موجودہ پرامن فضاء کو خراب ہونے کے خدشے سے بی جے پی ارکان اسمبلی اور کارکنوں کے خلاف کارروائی کی گئی ہے۔ جبکہ بی جے پی کے ریاستی جنرل سکریٹری مسٹر مرلی دھر راؤ نے کہاکہ پولیس کی کارروائی غیر منصفانہ ہے اور جمہوریت کے خلاف ہے۔ واضح رہے کہ گزشتہ ہفتے بی جے پی ارکان اسمبلی نے سوامی پریپورنا نندا کو شہر بدر کرنے کے خلاف ریاستی گورنر ای ایس ایل نرسمہن سے نمائندگی کی تھی اور پولیس کی جانب سے جاری کئے گئے احکامات کو واپس لینے کا مطالبہ کیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT