Tuesday , September 25 2018
Home / Top Stories / چیف منسٹر کی فیصلہ سازی پر سوشل میڈیا میں برہمی

چیف منسٹر کی فیصلہ سازی پر سوشل میڈیا میں برہمی

حیدرآباد 13 مارچ (سیاست نیوز) تلنگانہ میں مخالف حکومت عوامی جذبات ایسا ظاہر ہوتا ہے کہ روز بروز بڑھتے جارہے ہیں۔ ذرائع ابلاغ پر رونما ہونے والی تبدیلیوں سے یہی تاثر ملتا ہے۔ تلنگانہ تحریک میں پرجوش حصہ لینے والے عوام اب حکومت کے خلاف اظہار خیال کرنے لگے ہیں۔ سرکاری پالیسیاں اور بعض اقدامات اس طرح کی مخالفت کی بڑی وجہ سمجھے جارہے ہیں۔ سنہرے تلنگانہ کے خواب دکھاکر چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ عملاً اپنے خاندان کی سرخروئی پر توجہ مرکوز کرتے دکھائی دے رہے ہیں۔ سوشل میڈیا پر الزامات عائد کرتے ہوئے مختلف گوشے اُنھیں تنقیدوں کا نشانہ بنارہے ہیں۔ یہ تنقیدیں خاص طور پر راجیہ سبھا چناؤ کے لئے ٹی آر ایس کی نامزدگیوں کے بعد شروع ہوئی ہیں۔ تلنگانہ تحریک میں حصہ لے چکیں تنظیمیں، قائدین اور وکلاء اور سماجی کارکنان نیز سرکاری ملازمین اور طلبہ برادری سوشل نیٹ ورکنگ سائٹس کے ذریعہ اپنی خفگی کا اظہار کررہے ہیں۔ ناراض عناصر کا دعویٰ ہے کہ علیحدہ ریاست تلنگانہ کے لئے قربانیاں کسی اور نے دیں اور نئی ریاست میں فوائد کوئی اور حاصل کررہے ہیں۔ راجیہ سبھا کے لئے کی گئی تین نامزدگیوں میں چیف منسٹر کے بھانجے سنتوش کمار شامل ہیں۔ تلنگانہ تحریک کی بڑی طاقت طلبہ برادری اس لئے بھی ناراض ہے کہ وہ تعلیم یافتہ ہونے کے باوجود بے روزگار ہیں۔ سوشل میڈیا کے مختلف اکاؤنٹس کے ذریعہ ریاستی حکومت کے موجودہ رویہ چیف منسٹر کے سی آر کے فیصلوں کیخلاف اظہار خیال کیا جارہا ہے۔ دیکھنا ہے حکومت اس رجحان سے کس طرح نمٹتی ہے۔

TOPPOPULARRECENT