Friday , January 19 2018
Home / کھیل کی خبریں / چینائی کا آج راجستھان اور بنگلور کا دہلی سے مقابلہ

چینائی کا آج راجستھان اور بنگلور کا دہلی سے مقابلہ

رانچی ؍ بنگلور ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) چینائی سوپرکنگس کل کھیلے جانے والے یہاں اپنے مقابلہ میں راجستھان رائلس کے خلاف کامیابی حاصل کرتے ہوئے ٹیموں کے جدول میں پہلا مقام حاصل کرنے کیلئے کوشاں ہوگی۔ ٹیموں کے جدول میں فی الحال کنگس الیون پنجاب کے ساتھ مساوی نشانات کے باوجود چینائی سوپرکنگس دوسرے مقام پر موجود ہے جس کی اصل وجہ دونوں ٹی

رانچی ؍ بنگلور ۔ 12 مئی (سیاست ڈاٹ کام) چینائی سوپرکنگس کل کھیلے جانے والے یہاں اپنے مقابلہ میں راجستھان رائلس کے خلاف کامیابی حاصل کرتے ہوئے ٹیموں کے جدول میں پہلا مقام حاصل کرنے کیلئے کوشاں ہوگی۔ ٹیموں کے جدول میں فی الحال کنگس الیون پنجاب کے ساتھ مساوی نشانات کے باوجود چینائی سوپرکنگس دوسرے مقام پر موجود ہے جس کی اصل وجہ دونوں ٹیموں کے درمیان رن ریٹ میں قریبی فرق کا ہونا ہے۔ چینائی سوپرکنگس نے اپنے 9 مقابلوں میں 7 فتوحات حاصل کرتے ہوئے تیسرے خطاب کیلئے مضبوط دعویداری پیش کردی ہے۔ دوسری جانب راجستھان رائلس بھی زیادہ پیچھے نہیں ہے جیسا کہ اس نے 9 مقابلوں میں 6 فتوحات کے ذریعہ تیسرا مقام حاصل کرلیا ہے۔ گذشتہ مقابلوں میں فتوحات کے بعد کل یہاں کھیلے جانے والے مقابلہ میں دونوں ہی ٹیمیں یکساں موقف کے ساتھ میدان میں اتریں گی۔ راجستھان رائلس کے کھلاڑی گذشتہ مقابلہ میں رائل چیلنجرس بنگلور کے خلاف ناقابل تعاقب سمجھا جانے والا 191 رنز کا نشانہ حاصل کیا ہے جس کی وجہ سے ٹیم کے کھلاڑیوں کے حوصلے کافی بلند ہیں۔ راجستھان کیلئے اجنکیا راہنے، اسٹیون اسمتھ اور سنجو سامسن بہتر مظاہروں کے ذریعہ ٹیم کیلئے اثاثہ ثابت ہورہے ہیں لیکن کپتان شین واٹسن سے ہنوز بہتر اننگز باقی ہے۔ دوسری جانب چینائی سوپرکنگس بھی جہاں بیٹنگ کا مسئلہ آرہا ہے وہاں شاندار مظاہرہ کررہی ہے۔ ٹیم کے اوپنرس کی جوڑی ڈیون اسمتھ اور برنڈن مکالم ٹورنمنٹ میں سب سے زیادہ اسکور کرنے والے بیٹسمینوں میں دوسرے اور تیسرے مقام پر موجود ہیں۔

فاف ڈپولیسی، کپتان مہندر سنگھ دھونی اور سریش رائنا ٹیم کے اہم کھلاڑی ہیں۔ دونوں ٹیموں کے بیٹمسین بہترین فام میں ہیں جبکہ بنگلور کے خلاف جیمس فالکنر اور اسمتھ نے غیرمعمولی مظاہرہ کے ذریعہ ٹیم کو اہم کامیابی دلوائی ہے۔ دن کے دوسرے مقابلہ میں رائل چیلنجرس بنگلور اپنے گھریلو مقابلہ میں دہلی ڈیرڈیولس کی میزبانی کرے گی۔ گذشتہ مقابلہ میں بنگلور کو اسمتھ اور فالکنر کی غیرمعمولی اننگز کی وجہ سے شکست برداشت کرنی پڑی ہے لہٰذا وہ دہلی کے خلاف بہتر مظاہرہ کے ذریعہ کامیابی کی سمت واپسی کیلئے کوشاں ہوگی۔ دہلی کو بھی اپنے گذشتہ مقابلہ میں کولکتہ نائیٹ رائیڈرس کے خلاف ناکامی برداشت کرنی پڑی ہے جس کے بعد 9 مقابلوں میں 6 ناکامیوں سے اس کی اگلے مرحلہ میں رسائی کی امیدیں تقریباً ختم ہوچکی ہیں۔ بنگلور کے لئے جہاں ویراٹ کوہلی کا ناقص فام تشویش کا باعث ہے وہیں گذشتہ مقابلہ میں یوراج سنگھ نے 38 گیندوں میں 87 رنز کی اننگز کھیلنے کے علاوہ 4 وکٹیں حاصل کرتے ہوئے شاندار فام میں واپسی کا اشارہ دیا ہے اور اس طرح وجئے مالیہ کی جانب سے 14 کروڑ میں خریدے جانے کے معاملہ ساتھ انصاف کیا ہے۔ بنگلور کے اوپنر کریس گیل ہنوز حریف بولروں کی پٹائی کرنے میں ناکام ہیں کیونکہ بنگلور کے مظاہرہ راست طور پر گیل اور کوہلی سے مربوط رہتے ہیں لیکن دونوں ہی کھلاڑی مسلسل ناکام ہورہے ہیں۔ بنگلور کیلئے اے بی ڈی ویلیرس کے مظاہروں میں ہی استقلال خوش آئند پہلو ہے جیسا کہ گذشتہ مقابلہ میں بھی انہوں نے نصف سنچری اسکور کی ہے۔ دہلی جہاں وقار کیلئے کھیلے گی وہیں بنگلور کیلئے ٹورنمنٹ میں بقاء کیلئے کامیابی ضروری ہے۔

TOPPOPULARRECENT