چین میں حج امور سے وابستہ 32 افسران کو سزائیں

بیجنگ16 جنوری (سیاست ڈاٹ کام )چین نے آج یغور مسلم اکثریت والے ژنجیانگ صوبہ میں 32 عہدیداروں کے خلاف سعودی عرب کے مکۃ المکرمہ میں حج بیت اللہ کے دوران بد عنوانیوں میں ملوث ہونے پر سزائیں دی ہیں۔ اطلاعات کے مطابق حکمران کمیونسٹ پارٹی آف چائنا (CPU) کے چھ عہدیداروں بشمول ژنجیانگ کے آفیسر برائے حج امور کو پارٹی سے خارج کردیا گیا ہے جبکہ دیگ

بیجنگ16 جنوری (سیاست ڈاٹ کام )چین نے آج یغور مسلم اکثریت والے ژنجیانگ صوبہ میں 32 عہدیداروں کے خلاف سعودی عرب کے مکۃ المکرمہ میں حج بیت اللہ کے دوران بد عنوانیوں میں ملوث ہونے پر سزائیں دی ہیں۔ اطلاعات کے مطابق حکمران کمیونسٹ پارٹی آف چائنا (CPU) کے چھ عہدیداروں بشمول ژنجیانگ کے آفیسر برائے حج امور کو پارٹی سے خارج کردیا گیا ہے جبکہ دیگر کو مختلف نوعیت کی سزائیں تفویض کی گئی ہیں جن میں موجودہ عہدہ سے برطرفی اور انتباہ بھی شامل ہیں۔ سرکاری گلوبل ٹائمز نے یہ اطلاع دی ۔ مذکورہ 32 عہدیداروں نے پارٹی ڈسپلن کی شدید طور پر خلاف ورزی کی تھی ۔ انہوں نے اپنے اختیارات کا بیجا استعمال کیا ،فرائض کی انجام دہی میں کوتاہی برتی اور حج جیسے باسعادت رکن کی تکمیل کرنے والوں سے بھی رشوتیں وصولی کیں۔

دریں اثناء ژنجیانگ پالیٹکس اینڈ لاء کمیٹی نے اخبار گلوبل ٹائمز کو بتایا کہ رشوت کے عوض ایسے مسلمانوں کی حج کی درخواستوں کو بھی منظور کروایا جاتا تھا جو، حج بیت اللہ پر جانے کے اہل نہیں تھے۔ یاد رہے کہ چین میں زائد از 20 ملین مسلمان ہیںجن میں 11 ملین مسلمان یغور قبیلہ اور 10 ملین مسلمانوں کو تعلق دیگر مسلم طبقوں سے ہے ۔یاد رہے کہ مسلمان طبقہ حج امور میں بدعنوانیوں کو ہرگز برداشت نہیں کرتا ۔ انسان کو استطاعت کی شرط کے ساتھ حج کا رکن مکمل کرنے کی ہدایت کی گئی ہے لیکن استطاعت نہ ہوے کے باوجود لوگ رشوتوں کے ذریعہ بھی اپنے آپ کو حج کا اہل قرار دیتے ہوئے اللہ کی خوشنودی کی بجائے اس کے قہر کو دعوت دیتے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT